Welcome to JEHANPAKISTAN   Click to listen highlighted text! Welcome to JEHANPAKISTAN
تازہ ترینخبریںسپیشل رپورٹ

1933 میں فریضہ حج ادا کرنے والی پہلی برطانوی خاتون

1933 میں زینب پہلی برطانوی خاتون تھیں جنہوں نے فریضہ حج ادا کیا، قبولِ اسلام سے پہلے ان کا نام ایویلن کوبولڈ تھا۔

حج کی ادائیگی کے بعد انہوں نے کہا تھا کہ اب اگر میں کبھی دوبارہ عرب نا بھی جاؤں تب بھی میں ان خوبصورت دنوں کی یادوں کے ساتھ رہ سکتی ہوں۔

وہ دن جو میں نے مکہ میں ایمان کی روشنی کے ساتھ گزارے، مدینہ اور اس کے باغات، اس کا سکون اور اس کی دلکشی۔

زینب 17 جولائی 1867 کو ایڈنبرا میں پیدا ہوئی تھیں، ان کے والد چارلس ایڈولفس مُرے نواب تھے اور والدہ گرٹروڈ کوک ایک نواب کی صاحبزادی تھیں۔

زینب اپنی کتاب ’Pilgrimage To Mecca‘ میں لکھتی ہیں کہ بچپن میں وہ سردیوں کا موسم الجزائر کے باہر واقع پہاڑیوں پر موجود ایک کوٹھی میں گزارتی تھیں تاکہ اپنی شاہی زندگی سے ہٹ کر زندگی گزارنے کا موقع ملے۔

انہوں نے کہا کہ وہ اپنی الجزائر کی دوستوں کے ساتھ مساجد جاتی تھیں اور غیر ارادی طور پر دل سے ایک مسلم تھیں۔

ان کا کہنا تھا کہ مجھے نہیں معلوم کہ اسلام کی سچائی مجھ پر کب آشکار ہوئی، مجھے لگتا ہے کہ میں شاید ہمیشہ سے ہی مسلم تھی۔

1929 میں زینب کو سعودی بادشاہ نے مکہ آنے اور حج کرنے کی اجازت دی۔

سفرِ حج سے متعلق ان کی کتاب 1934 میں شائع ہوئی، یہ کسی بھی برطانوی خاتون کی طرف سے تحریر کردہ حج کی پہلی روداد تھی، انہوں نے منیٰ سے عرفات تک کا سفر گاڑی سے کیا تھا۔

زینب نے اپنی کتاب میں اس بات کی بھی نشاندہی کی کہ کس طرح مغرب سائنس اور طب میں جدت کے لیے اسلام کا مقروض ہے۔

انہوں نے لکھا ہے کہ ’’یہ بات یاد رکھی جائے گی کہ مسلم معالجین نے سب سے پہلے ایسے اسپتال تعمیر کیے جن میں مریضوں کو ان کی بیماری کے حساب سے علیحدہ علیحدہ وارڈز میں رکھا جاتا تھا‘‘۔

زینب کا قرآن پاک کے ساتھ اس قدر لگاؤ تھا کہ ان کی وصیت کے مطابق ان کی قبر پر قرآنی آیت تحریر ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button
Click to listen highlighted text!