تازہ ترینخبریںخواتین

تینوں لڑکیوں نے اپنی مرضی سے شادی کی نیت سے گھر چھوڑا

کراچی سے 3 لڑکیوں کی گمشدگی کےواقعات رپورٹ ہونے کا معاملے پر پولیس کی جانب سے موقف جاری کردیا گیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ تینوں لڑکیوں نے اپنی مرضی سے شادی کی نیت سے گھر چھوڑا۔

ترجمان کراچی پولیس کی جانب سے جاری موقف میں کہا گیا ہے کہ کراچی سے دعا زہرہ، نمرہ کاظمی اور دینارلاپتہ ہوئی تھیں جن میں سے دعا زہرہ اور نمرہ کاظمی کے والدین نے مقدمات کا اندراج کرایا جب کہ سولجر بازار سے دینار کے والدین نے مقدمہ اندراج کی درخواست واپس لے لی۔

پولیس ترجمان کے مطابق مقدمات درج ہوتے ہی پولیس نے تلاش کا آغاز کیا اور ہمہ وقت متاثرہ والدین کے ساتھ رابطے میں رہی، اس حوالے سے کراچی پولیس کا اسپیشلائزڈ یونٹ کیس پر کام کر رہا تھا اور یونٹ اپنے تمام وسائل بروئے کار لاکر بازیابی کی کوشش کرتا رہا۔

ترجمان کے جاری کردہ پولیس موقف میں کہا گیا ہے کہ لاپتہ دعا زہرہ اور نمرہ کاظمی کی جانب سے ویڈیو بیان جاری کیے گئے جن میں دونوں لڑکیاں اپنی مرضی سے گھر چھوڑنے کی تصدیق کررہی ہیں۔

ترجمان کے مطابق تینوں لڑکیوں نے اپنی مرضی سے شادی کی نیت سے گھر چھوڑا، کراچی پولیس کی تفتیشی ٹیم مسلسل پنجاب پولیس سےرابطےمیں ہے اور ہماری ٹیمیں پنجاب پہنچ چکی ہیں، لڑکیوں کو کراچی منتقل کرکے مجازعدالت میں پیش کیا جائے اور عدالتی احکامات کےمطابق کراچی پولیس کارروائی عمل میں لائے گی۔

واضح رہے کہ کراچی سے لاپتہ لڑکی دعا زہرا کو لاہور کی عدالت نے شوہر کے ساتھ جانے کی اجازت دے دی ہے۔

دعا زہرہ نے عدالت میں بیان دیا کہ میری عمر 18 سال ہے اور بالغ ہوں، میں اپنی مرضی سے کراچی سے لاہور آئی ہوں اور مجھے کسی نے اغوا نہیں کیا۔

 

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button