21 اکتوبر 2018
تازہ ترین

 قومی اسمبلی کی ایک اور صوبائی اسمبلی کی دو نشستوں پر ہونے والے ضمنی انتخابات میں حکمران جماعت تحریک انصاف کو ایک نشست پر شکست کا سامنا کرنا پڑا جبکہ دو نشستوں پر اس کے امیدوار کامیاب رہے۔قومی اسمبلی کے حلقے این اے 247، سندھ اسمبلی کے حلقے پی ایس 111 اور خیبر پختونخوا اسمبلی کے حلقے پی کے 71 پر ضمنی انتخاب کیلئے پولنگ ہوئی۔ خیبر پختونخوا کے دارالحکومت پشاور میں حکمران جماعت تحریک انصاف کو اپ سیٹ شکست ہوئی جہاں گورنر خیبر پختونخوا شاہ فرمان کی چھوڑی ہوئی نشست عوامی نیشنل پارٹی نے چھین لی، حلقہ پی کے 71 پر گورنر شاہ فرمان کے بھائی ذوالفقار خان کو عوامی نیشنل پارٹی کے صلاح الدّین خان نے ہرا دیا۔اس کے علاوہ این اے 247 کراچی میں تحریک انصاف کے امیدوار آفتاب حسین صدیقی اور پی ایس 111 میں تحریک انصاف کے شہزاد قریشی کامیاب ہوئے۔  غیر حتمی و غیر سرکاری نتائج این اے 247 کراچی قومی اسمبلی کے حلقے این اے 247 کراچی کے 240 میں سے 234 پولنگ اسٹیشنز کے نتائج کے مطابق تحریک انصاف کے آفتاب حسین صدیقی 31585 ووٹ لے کر آگے جب کہ ایم کیو ایم کے صادق افتخار 13687 ووٹ لے کر دوسرے نمبر اور پیپلزپارٹی کے قیصر خان نظامانی 12205 ووٹ لیکر تیسرے نمبر پر ہیں۔ پی ایس 111 کراچی  سندھ اسمبلی کے حلقے پی ایس 111 کراچی کے 80 میں سے 75 پولنگ اسٹیشنز کے غیرحتمی غیرسرکاری نتائج کے مطابق تحریک انصاف کے شہزاد قریشی 11113 ووٹ لے کر آگے  جب کہ پیپلزپارٹی کے فیاض پیرزادہ 4576 ووٹ کے ساتھ دوسرے اور ایم کیو ایم کے جہانزیب مغل 2144 ووٹ لے کر تیسرے نمبر پر ہیں پی کے 71 پشاور خیبر پختونخوا اسمبلی کے حلقے پی کے 71 پشاور کے مجموعی 86  پولنگ اسٹیشنز کے نتائج کے مطابق عوامی نیشنل پارٹی کے امیدوار  صلاح الدین 11224 ووٹ لے کر جیت گئے ہیں جب کہ  تحریک انصاف کے ذوالفقار خان 9755 ووٹ لے کر دوسرے نمبر پر رہے کراچی سے قومی اسمبلی کے حلقے این اے 247 پر صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے عام انتخابات میں کامیابی حاصل کی تھی جبکہ پی ایس 111 پر گورنر سندھ عمران اسماعیل فاتح قرار پائے تھے تاہم عارف علوی اور عمران اسماعیل کے منصب سنبھالنے کے بعد یہ نشستیں خالی ہوئیں ہیں۔ پاکستان تحریک انصاف کی جانب سے این اے 247 پر آفتاب صدیقی، ایم کیو ایم کی طرف سے صادق افتخار، پیپلزپارٹی کی جانب سے قیصر نظامانی اور پاک سرزمین پارٹی کے ارشد وہرہ میدان میں ہیں۔ دوسری جانب پی ایس 111 پر تحریک انصاف کے شہزاد قریشی، پی ایس پی کے یاسرالدین، ایم کیو ایم پاکستان کے جہانزیب مغل، پیپلزپارٹی کے فیاض پیرزادہ اور آزاد امیدوار جبران ناصر میدان میں ہیں پشاور میں خیبرپختونخوا اسمبلی کے حلقے پی کے 71 کی نشست گورنر خیبر پختونخوا شاہ فرمان نے عہدہ سنبھالنے کے بعد چھوڑی تھی۔اس حلقے پر ضمنی الیکشن کے سلسلے میں گورنر خیبر پختونخوا کے بھائی سمیت 5 امیدوار مدمقابل ہیں۔شاہ فرمان کے بھائی ذوالفقار خان کا اصل مقابلہ عوامی نیشنل پارٹی کے صلاح الدین سے ہے جبکہ تین آزاد امیدوار بھی انتخابی دنگل میں حصہ لے رہے ہیں۔نواحی دیہات پر مشتمل اس حلقے کی سرحدیں سابقہ خیبر ایجنسی سے ملتی ہیں۔اس حلقے میں کل ووٹرز کی تعداد ایک لاکھ 33 ہزار 451 ہے جن میں مرد ووٹرز 79ہزار 836 اور خواتین ووٹرز 53 ہزار 615 ہیں۔  اسی طرح حلقے میں کُل پولنگ اسٹیشنز کی تعداد 86 ہے جن میں 48 مردوں اور 35 خواتین کے لیے ہیں۔ اس حلقے کے 51 پولنگ اسٹیشنز کو حساس ترین قرار دیا گیا ہے۔ووٹنگ صبح 8 بجے اپنے مقررہ وقت پر شروع ہوئی اور بلاتعطل پولنگ کا عمل شام 5 بجے تک جاری رہا جس کے بعد اب ووٹوں کی گنتی کا سلسلہ جاری ہے۔  

مزید پڑھیں
ویڈیوز

عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟