عوامی سروے

سوال: آپ کے خیال میں کونسی سیاسی یا مذہبی جماعت صحیح معنوں میں نظریہ پاکستان کی محافظ اور عوامی فلاح و بہبود میں اہم کردار ادا کر سکتی ہے؟

news title here

 ترجمان دفتر خارجہ کا کہنا ہے کہ پاکستان نے دہشت گردی کے ظلم کو سب سے زیادہ برداشت کیا مگر امریکی پالیسی میں پاکستان کی قربانیوں کو نظرانداز کیا جانا مایوس کن ہے۔ امریکی صدر کی افغان پالیسی پر دفتر خارجہ کی جانب سے بیان جاری کیا گیا جس میں ترجمان نفیس زکریا کا کہنا تھا کہ پاکستان نے صدر ٹرمپ کے بیان کا نوٹس  لیا ہے، صدر ٹرمپ کی نئی پالیسی پر وفاقی کابینہ کے اجلاس میں تفصیلی غور کیا گیا اور اس حوالے سے 24اگست کو قومی سلامتی کمیٹی کا اجلاس ہوگا،  قومی سلامتی کمیٹی کے اجلاس کے بعد حکومت پاکستان کا تفصیلی ردعمل جاری کیا جائے گا۔ ترجمان دفتر خارجہ کا کہنا تھا کہ پاکستان نے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں سب سے زیادہ قربانیاں دیں اور اس بات کا اعتراف عالمی سطح پر بھی کیا جا چکا ہے، پاکستان اپنی سرزمین کسی کے خلاف استعمال نہیں کرنے دیتا جب کہ محفوظ پناہ گاہوں کے غلط دعوے کے بجائے امریکا دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کا ساتھ دے جب کہ  مسئلہ کشیمر کا حل نہ ہونا خطے میں امن کے لیے بنیادی رکاوٹ ہے۔نفیس زکریا نے کہا کہ دہشت گردی کا خطرہ ہم سب کو یکساں ہے لیکن پاکستان نے دہشت گردی کے ظلم کو سب سے زیادہ برداشت کیا، اور یہ مایوس کن ہے کہ امریکی پالیسی میں پاکستان کی قربانیوں کو نظرانداز کیا گیا لیکن پاکستان عالمی برادری کے ساتھ مل کر جنوبی ایشیا میں قیام امن اور دہشت گردی کے خاتمے کے لیے پر عزم ہے اور دہشت گردی کی طاقتوں کو شکست دینے اور امن  کے فروغ  کے لیے کردار ادا کرتا رہے گا۔ ترجمان دفتر خارجہ کا کہنا تھا کہ افغانستان میں 17 سالہ فوجی ایکشن بھی ملک کو پرامن نہیں بنا پایا، افغانستان کے مسئلے کا حل فوجی نہیں  بلکہ صرف افغانیوں کی قیادت میں سیاسی مذاکرات ہی افغانستان میں دیرپا امن لاسکتا ہے 

news title here
news title here
news title here
  سابق صدر آصف علی زرداری کا کہنا ہے کہ مجھے پاکستان کا درد ہے، ٹرمپ کی تقریر سننے کیلیے رات بھر جاگتا رہا، دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کی قربانیاں امریکیوں سے کہیں زیادہ ہیں ، امریکی صدر ہمیں دھمکائے  مت ہم پاکستانی اور مسلمان ہیں۔ ٹرمپ کو معلوم ہونا چاہیے کہ یہ پاکستان ہے افغانستان نہیں، اگر انہیں لڑائی کرنی ہے تو وہ اپنا شوق افغانستان میں پورا کریں ۔ امریکی صدر نے پاکستان سے حساب برابر کرنے کی بات کی ہے تو ہم  ان کے ساتھ پائی پائی کا حساب کریں گے۔ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے پاکستان مخالف پالیسی بیان پر پاکستان پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری کا کہنا تھا کہ امریکہ نے پاکستان کو دھمکانے کا سلسلہ شروع کر رکھا ہے۔ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کی قربانیاں امریکیوں سے کہیں زیادہ ہیں، امریکہ ہماری قربانیوں کو پس پشت ڈالتے ہوئے دھمکیوں پر اتر آیا ہے۔ واشنگٹن پاکستان کو افغانستان سمجھنے کی بھول کر رہا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ نواز مودی کا دوست ہے اس لیے امریکا کیلیے کوئی لابنگ نہیں کی۔ نوازشریف جو چاہتے تھے وہی امریکی صدر اپنے پالیسی بیان میں کہا ہے۔ ٹرمپ کو معلوم ہونا چاہیے یہ پاکستان ہے افغانستان نہیں۔ ڈونلڈ ٹرمپ کو لڑائی لڑنی ہے تو افغانستان میں جاکر لڑیں۔ میں نے جمہوریت کی خاطر نوازشریف کی حکومت بچائی تھی کیونکہ جتنی بھی خراب جمہوریت ہو وہ آمریت سے بہتر ہے۔ این اے120میں بھرپور طاقت کا مظاہرہ کریں گے کیوں کہ این اے 120کا الیکشن پیپلز پارٹی اور عوام کا اپنا الیکشن ہے۔
news title here
news title here
news title here

  شام میں امریکی فضائی حملے کے نتیجے میں 42  شہری ہلاک اور متعدد زخمی ہوگئے۔غیر ملکی خبر رساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق شامی مبصر تنظیم برائے انسانی حقوق کا کہنا ہے کہ  الرقہ شہر میں داعش کے زیر اثر علاقے میں امریکی اتحادیوں کے فضائی حملے میں 42  شہری ہلاک ہوئے ہیں جن میں 19 بچے اور 12 خواتین بھی شامل ہیں ۔ تنظیم کا کہنا ہے کہ 14 اگست سے اب تک امریکی اتحادیوں کے حملوں میں 167  شہری ہلاک ہوچکے ہیں۔ شام کے سرکاری میڈیا نے بھی امریکی اتحادیوں کے حملے میں متعدد افراد کے ہلاک ہونے کی اطلاع دی تاہم تعداد بتانے سے گریز کیا۔ دوسری جانب امریکی سینٹرل کمانڈ کا کہنا ہے کہ وہ حملے میں شہریوں کی ہلاکت کی تحقیقات کر رہا ہے۔ سینٹ کام کے ترجمان نے اپنے بیان میں کہا کہ عسکری اتحاد  شہریوں کی ہلاکت کی رپورٹس کو انتہائی سنجیدگی سے دیکھتا ہے اور ہمیشہ اس بات کی کوشش کی جاتی ہے کہ دہشت گردوں کے خلاف حملوں میں شہریوں کا نقصان کم سے کم ہو۔ خیال رہے کہ الرقہ شہر پر داعش کا قبضہ ہے جب کہ داعش کے خلاف امریکی عسکری اتحاد کے نمائندہ خصوصی بریٹ میک گرگ کا کہنا ہے کہ  الرقہ میں اب بھی 2 ہزار جنگجو موجود ہیں اور 60 فیصد علاقے کا کنٹرول حاصل کرلیا گیا ہے۔

news title here
news title here
news title here
news title here
news title here
news title here
news title here

قومی کرکٹرز کے فٹنس ٹیسٹ نیشنل کرکٹ اکیڈمی لاہور میں شروع ہوگئے جن کی نگرانی قومی کرکٹ ٹیم کے ہیڈ کوچ مکی آرتھر کر رہے ہیں ۔  فٹنس ٹیسٹ تین دن تک جاری رہیں گے ۔ فٹنس ٹیسٹ کے پہلے روز کھلاڑیوں کو رننگ کروائی گئی ۔فٹنس ٹیسٹ میں سینٹرل کنٹریکٹ کی مختلف کیٹیگریز کے کھلاڑی شامل ہیں ۔کیربیئن لیگ اور کائونٹی کرکٹ کھیلنے والے سینٹرل کنٹریکٹ کے حامل کرکٹر ز بھی فٹنس ٹیسٹ کیلئے وطن واپس پہنچے ہیں ۔فٹنس ٹیسٹ کے بعد وہ کھلاڑی بیرون ملک روانہ ہوجائیں گے ۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ قومی کرکٹرز  کے22اگست سے شروع ہونے والے فٹنس ٹیسٹ کے بعد غیر ملکی کوچ مکی آرتھر اپنے وطن روانہ ہو جائیں گے اورچند دن تعطیلات گزارنے کے بعد واپس پاکستان پہنچیں گے۔ سینٹرل کنٹریکٹ حاصل کرنے والے کھلاڑیوں میں اے کیٹیگری میں6 کھلاڑی کپتان سرفراز احمد ،اظہر علی ،شعیب ملک ، ،یاسر شاہ ،محمد حفیظ ،محمد عامر ،بی کیٹیگری میںچار کھلاڑی بابر اعظم ،عماد وسیم ،اسد شفیق ،حسن علی ،سی کیٹیگری میں گیارہ کھلاڑی وہاب ریاض ،راحت علی ،حارث سہیل ،سمیع اسلم ،شان مسعود ،سہیل خان ،فخر زمان ،جنید خان ،احمد شہزاد ،محمد عباس ،شاداب خان ،ڈی کیٹیگری میں 14کھلاڑی  محمد نواز ،آصف ذاکر ،عثمان صلاح الدین ،عامر یامین ،عثمان شنواری ،فہیم اشرف ،رمان رئیس ،امام الحق ،بلال آصف ،میر حمزہ ،عمر امین ،محمد حسن ،محمد اصغر ،محمد رضوان شامل ہیں۔  

news title here

 پی ایس ایل سپاٹ فکسنگ میں ملوث کرکٹر خالد لطیف کا جواب پی سی بی کو موصول ہوگیا ہے، بتایا گیا ہے خالد لطیف نے پی سی بی ٹربیونل میں ہونے والی کارروائی کو غیر قانونی قرار دے دیا ہے، انہوں نے کہا ہے کہ میرے خلاف کارروائی یکطرفہ چلائی جا رہی ہے جبکہ خالد لطیف کے وکیل کا کہنا ہے کہ خالد لطیف اس کیس میں ملوث نہیں ہیں ان کو جان بوجھ کر پھنسایا جا رہا ہے دوسری جانب ناصر جمشید بھی پی سی بی کو سکائپ پر اپنا بیان دیں گے

news title here

قومی کرکٹ ٹیم کے کپتان سرفراز احمد  نے کہا ہے کہ ان کے ذہن میں قیادت کی سوچ تک نہیں تھی لیکن مصباح الحق کے مشن کو جاری رکھنا بہت بڑی کامیابی ہوگی، سابق کپتان کے ماتحت کھیل کر بہت کچھ سیکھنے کا موقع ملا،  اولین مقصد یہی ہے کہ ان کے کام کو آگے بڑھایا جائے۔ قومی کپتان سرفراز احمد کا ایک انٹرویو میں کہنا تھا کہ انہوں نے قومی ٹیم کی قیادت سے متعلق کبھی سوچا تک نہیں تھا مگر وہ تینوں فارمیٹس کے کپتان بن کر سمجھتے ہیں کہ ایک خواب پورا ہوا ہے ۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ وہ توقعات کے مطابق بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے کسی کو بھی مایوس نہیں کریں گے کیونکہ کپتان کی حیثیت سے ابھی ان کے کیریئر کا آغاز ہے اور انہیں بخوبی علم ہے کہ انہیں ابھی کئی سخت اور مشکل چیلنجز کا سامنا کرنا ہوگا ۔ ان کا کہنا تھا کہ مصباح الحق نے جس انداز سے پاکستان کی قیادت کی اس کیلئے انہیں کسی بھی طرح خراج تحسین پیش کرنا ناکافی ہوگا کیونکہ دو ہزار دس میں انہوں نے جن حالات میں قیادت سنبھالی اور پھر اس ٹیم کو جس کامیابی کی راہ پر گامزن کیا اسے مثالی اور عالمی نمبر ایک بننے کو معجزہ کہا جا سکتا ہے ۔ سرفراز احمد کا کہنا تھا کہ انہوں نے اپنی جو بھی کرکٹ مصباح الحق کے ماتحت کھیلی ان سے بہت کچھ سیکھنے کا موقع ملا کہ وہ سیشنز کے اعتبار سے حالات کو کس طرح قابو کیا کرتے تھے۔ان کا کہنا تھا کہ وہ بھی اپنے دور قیادت کو مصباح الحق کے انداز سے آگے بڑھانا چاہتے ہیں اور ان کا مقصد یہی ہے کہ سابق کپتان اس ٹیم کو جہاں چھوڑ کر گئے ہیں اسی کام کو آگے لے جائیں کیونکہ اگر وہ مصباح الحق کے مشن کو آگے لے جانے میں کامیاب رہے تو یہ ان کیلئے بہت بڑی کامیابی ہو گی اور ان سے جو کچھ بھی سیکھا اس کا حق ادا ہو جائے گا۔

news title here

  رئیل میڈرڈ کے کپتان سرجیو راموس کو ریکارڈ 23ویں بار ٴٴ ریڈ کارڈٴٴ دکھاکر میدان بدر کر دیا گیا ، یہ ناخوشگوار واقعہ گزشتہ دنوں ڈیپورٹیو لاکرونا کلب کیخلاف رئیل کی 3õ0 سے فتح میں پیش آیا ۔ اس مقابلے میں  راموس کو 2  یلو کارڈ دکھائے گئے جس کے بعد انھیں میدان  بدر ہونا پڑا، انھوں نے کہا کہ اسپینش ریفریز کو اس معاملے میں انگلش پریمیئر لیگ سے سبق لینا چاہیے جو کھلاڑیوں پر زیادہ سختی نہیں کرتی، راموس نے کہا کہ مجھے ریفری کی جانب سے دوسرا یلوکارڈ دکھائے جانے پر تحفظات تھے لیکن بہرحال  ہمیں فیصلے کا احترام کرنا ہوتا ہے 

news title here
news title here
news title here
news title here
news title here
 سائنسدانوں کا کہناہے کہ ایک بہت بڑے شہابیے نے 66ملین سال قبل ڈائنو سار کا کرہ ارض سے صفایا کیا اور اسی کے باعث دنیا بھر میں 2سال تک تاریکی چھائی رہی تھی،ذرائع کے مطابق ناسا اور یونیورسٹی آف کولوراڈو کے تعاون سے کی جانے والی اس تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ ہوسکتا ہے کہ شہابیے کے زمین سے ٹکرانے کے بعد زلزلے آئے ہوں ، سونامی پیدا ہوا ہو جبکہ یہ بھی ممکن ہے کہ آتش فشاں پھٹے ہوں۔ نئی تحقیق کے نتیجے میں یہ بھی معلوم کرنے میں مدد ملی کہ آخر تین چوتھائی جانوروں کی اقسام کس طرح صفحہ ہستی سے مٹ گئیں جبکہ بعض جانور مرنے سے بچ گئے، دیو ہیکل جانور زیادہ مرے جبکہ ایسے جانور جو سمندروں میں تھے وہ کسی حد تک بچ گئے، اس سال مارچ میں ان سائنسدانوں نے ایک ماڈل کی مدد سے یہ ساری معلومات آشکار کی ہیں،ایک اور نئی تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ شہابیے کے ٹکرانے کے بعد پوری زمین کا نقشہ ہی تبدیل ہوگیا تھا، اس ٹکرائو کے بعد 15ہزار ملین ٹن دھول پوری فضا میں چھا گئی تھی جس کے نتیجے میں کرہ ارض پر سورج کی روشنی بھی آنا بند ہوگئی تھی، ایسا لگتاتھا کہ کبھی اس دنیا میں سورج کی روشنی پہنچی ہی نہیں۔  

news title here
news title here
news title here
news title here
news title here
چاول کا شمار ان کھانوں میں  ہوتا ہے جن پر جراثیم بآسانی اور جلد اثر انداز ہو جاتے ہیں۔ ماہرین کا کہناہے کہ چاول کی خاصیت ہوتی ہے کہ اگر اس کو بچا کر رکھ دیا  جائے اور بعد میں درست  درجہ حرارت کے اندر نہ رکھا جائے تو یہ جلد خراب ہو جاتے ہیں  اور پھر جب ایسے چاول بعد میں آپ استعمال کرتے ہیں تو آپ کی صحت ان چاولوں کی بدولت شدید متاثر ہو جاتی ہے۔  لہٰذا چاولوں کیلئے یہ بات لازمی ہے کہ ان کو درست درجہ حرارت میں رکھا جائے۔ تحقیق کے بعد محققین کا کہنا تھا کہ کھانا بننے کے بعد اس میں سے تمام تر جراثیم ختم نہیں ہو جاتے  بلکہ کچھ جرا ثیم مسلسل  موجود رہتے ہیں  جو بعد میں  فوڈ پوائزنگ اور دیگر اقسام کی بیماریوں کا سبب بنتے ہیں ۔   نارتھ کیلیفورنیا اسٹیٹ یونیورسٹی  کے فوڈ اسپیشلسٹ ڈاکٹر بنجمین کا کہنا تھا کہ  سوکھے چاولوں میں  مرض کیلئے جراثیم موجود رہتے ہیں۔ لہذا تحقیق کے بعد یہ بات واضح ہوئی ہے کہ سوکھے چاول اور دیگر کھانے کی اشیائ کا تازہ ہونا انتہائی ضروری ہے ۔ اور اگر یہ کھانا تازہ نہیں تو کم  از کم اس کو بہتر درجہ حرارت میں رکھنا بھی انتہائی اہمیت کا حامل ہے
news title here
امپیریل کالج لندن کے ماہرین کی جدید تحقیق سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ صابن اورفیس واش یا لیکوڈ سوپ کا باقاعدہ استعمال چہرے پر منفی اثرات مرتب ہوتے ہیں جس کی وجہ صابن اور فیس واش یا لیکوڈ سوپ کو ہاتھوں پر لگا کر منہ پر لگانا ہے اور اس عمل سے ہاتھوں پر لگے تمام جراثیم صابن میں شامل ہو کر منہ پر منتقل ہوجاتے ہیں۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ ٹین ایجر لڑکیوں کی جلد انتہائی حساس ہوتی ہے۔ انکے چہرے پر کیل مہاسے بھی ہوتے ہیں جو ان کے چہرے کو اور بھی حساس بنا دیتے ہیں، لہٰذا ماہرین کا مشورہ ہے کہ مائیں اپنے اور اپنی بچیوں کے چہرے کی حفاظت کا خاص خیال رکھیں بلکہ بچوں کی جلد بھی چوںکہ بہت حساس ہوتی ہے لہٰذا ان کے بھی منہ دھلانے، نہلانے کیلئے ایسے صابن، لیکوڈ سوپ یا فیس واش استعمال کریں جو کہ بلیچ سے پاک ہوں۔ ماہرین نے مشورہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ چہرے کی صفائی کےلئے بہتر ہے کہ بیسن، لیموں کا رس، ہلدی، دودھ، بالائی، عرق گلاب اور گلیسرین ملا کر لیپ بنا لیں اور اسے چہرے، ہاتھ، پیروں اور جسم پر سکرب کی طرح ملیں، بیس منٹ بعد سادے پانی سے یا نیم گرم پانی سے صاف کر دیں۔