Column

پاکستان نے گندم کی درآمد پر پابندی عائد کر دی

خواجہ عابد حسین
پاکستان نے حال ہی میں بھارت اور اسرائیل سے گندم کی درآمد پر پابندی عائد کر دی ہے۔ مزید برآں، ملک نے بین الاقوامی پابندیوں کے تحت کیوبا، ایران، شمالی کوریا، شام اور روس کے زیر کنٹرول یوکرین کے علاقوں سمیت ممالک سے گندم کی درآمد پر پابندی لگا دی ہے۔ پاکستان نے عالمی تجارتی کمپنیوں کے لیے بھارت اور اسرائیل سے گندم سپلائی نہ کرنے کی شرط رکھ دی ہے۔ اس اقدام سے گندم کی عالمی تجارت پر اثر پڑے گا، خاص طور پر مذکورہ ممالک کے لیے۔ کیوبا، ایران، شمالی کوریا اور شام جیسے بین الاقوامی پابندیوں کا سامنا کرنے والے ممالک سے گندم کی سپلائی پر پابندی لگا دی گئی ہے۔ اس فیصلے کا دائرہ کریمیا سمیت روس کے زیر کنٹرول یوکرینی علاقوں تک بھی ہے۔ ٹریڈنگ کارپوریشن آف پاکستان (TCP)نے 110000میٹرک ٹن گندم کی خریداری اور درآمد کے لیے بین الاقوامی ٹینڈر جاری کیا۔ یورپی تاجروں نے مالی مشکلات اور آٹے کی بڑھتی ہوئی قیمتوں کے درمیان پاکستان کی درآمدی ضروریات کی اہمیت کو اجاگر کرتے ہوئے اس پیش رفت کی اطلاع دی۔ ٹینڈر میں قیمت کی پیشکش جمع کرانے کی آخری تاریخ 27 دسمبر ہے۔ شرط یہ ہے کہ گندم تازہ ترین فصل سے ہو۔2024کے لیے کھیپ کی درخواست کی گئی ہے، کھیپ5۔10جنوری اور 17۔22جنوری کے درمیان پاکستان پہنچے گی۔ گندم کو 12فروری 2024تک پاکستان پہنچنا ضروری ہے۔ ٹینڈر گندم کے لیے 14.5%کی نمی کا تعین کرتا ہے، سخت کوالٹی کے معیارات جو کہ مٹی سمیت دیگر اشیاء کی موجودگی کو 1%سے زیادہ نہ ہونے کو محدود کرتے ہیں۔ ان معیارات کا مقصد درآمد شدہ گندم کے استعمال کے لیے معیار اور مناسبیت کو یقینی بنانا ہے۔ تاجروں کا خیال ہے کہ مالی مشکلات کا سامنا کرنے والے پاکستان کو آٹے کی قیمتوں میں اضافے سے نمٹنے کے لیے درآمد کی کافی ضرورت ہے۔ یہ ان اقتصادی چیلنجوں کی نشاندہی کرتا ہے جن سے ملک نیویگیٹ کر رہا ہے۔ گندم 12فروری تک دو بحری جہازوں پر گوادر یا کراچی بندرگاہ پر پہنچنا ہے۔ یہ درست ہے کہ پاکستان دونوں ممالک سے گندم درآمد کر رہا تھا معلومات بتاتی ہیں کہ پاکستان گندم کی درآمد میں سرگرم عمل ہے۔ حالیہ پابندی اور 110000 میٹرک ٹن گندم کی خریداری کے لیے بین الاقوامی ٹینڈر اس بات کو نمایاں کرتے ہیں کہ پاکستان اپنی ملکی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے گندم کی درآمد پر انحصار کرتا ہے۔ مخصوص ممالک سے گندم کی درآمد پر پابندی اور عالمی تجارتی کمپنیوں کے لیے مقرر کردہ شرائط پاکستان کی گندم کی درآمدی حکمت عملی میں تبدیلی یا ایڈجسٹمنٹ کی تجویز کرتی ہیں، جو ممکنہ طور پر سفارتی، اقتصادی یا جغرافیائی سیاسی تحفظات سے متاثر ہوتی ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button