Welcome to JEHANPAKISTAN   Click to listen highlighted text! Welcome to JEHANPAKISTAN
ColumnMonas Ahmar

پاکستانی اشرافیہ کی ناکامیاں ۔۔ پروفیسر ڈاکٹر مونس احمر

پروفیسر ڈاکٹر مونس احمر

کیوں پاکستان ایک قومی ریاست کے طور پر ایک محنتی اور ذہین قیادت کے ساتھ کامیاب ملک بننے میں ناکام رہا ہے؟
عالمی سیاسی اور معاشی اشاریے مسلسل پاکستان کی خراب سماجی، سیاسی اور معاشی صورتحال کی عکاسی کرتے ہیں، لیکن ملک کی اشرافیہ اسکا انکار کرتی نظر آتی ہے ۔پاکستان معاشی تباہی کے دہانے پر ہے جس کے زرمبادلہ کے ذخائر بمشکل 8 ارب ڈالر ہیں۔ 50 ارب ڈالر کا قرض، افراط زر 18 فیصد، 32 ارب ڈالر کی معمولی برآمدات اور ایندھن، گیس، بجلی، خوراک اور ادویات کی قیمتوں میں اضافے کے ساتھ ڈالر قریباً 245 تک پہنچ گیا ہے ۔ حکمران اور اشرافیہ ملک کو درپیش بحرانوں کی تردید کرتے اور نظر انداز کر رہے ہیں مگریہ تجزیہ کرنا ضروری ہے کہ پاکستان، جو قریباً 220 ملین لوگوں کا گھر ہے، ایک جوہری ریاست ہے، اور جغرافیائی سٹریٹجک طاقت کا حامل ہے، معاشی طور پر کمزور اور سیاسی طور پر غیر مستحکم ریاست میں کیسے تبدیل ہوا؟، پانچ عشرے قبل ٹوٹ پھوٹ کے صدمے کا سامنا کرنے کے باوجود، پاکستان کس طرح کامیاب ہو سکا تھا ؟ پی آئی اے، سٹیل ملز، واپڈا، ریلوے اور پبلک سیکٹر کے دیگر ادارے اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کر رہے تھے، تاہم کام کی اخلاقیات کا خاتمہ، بدعنوانی، اقربا پروری، بیڈ گورننس اور اچھی دیانت دار حکمرانی کی عدم موجودگی اور قانون نافذ کرنے کے ذمہ اوران کی ناکامی نے معاشی بدحالی کو مزید بگاڑنے میں اہم کردار ادا کیا۔ ‎سوال یہ ہے کہ کیا پاکستان کی معیشت، حکمرانی اور سیاست کو پٹری سے اتارنے کے لیے اشرافیہ کو ذمہ دار ٹھہرایا جانا چاہیے؟‎ آج پاکستان کے بعد آزادی حاصل کرنے والے بہت سے ترقی پذیر ممالک معیشت، حکمرانی، سیاست اور قانون کی حکمرانی کے لحاظ سے بہتر ہیں۔ کام کرنے والا،محنتی ، ذہین، پرعزم اور بصیرت والی آبادی اور قیادت کے ساتھ ہندوستان نے پاکستان کے ساتھ ساتھ آزادی حاصل کی اور اب دنیا کی 5ویں بڑی معیشت بن گئی ہے۔ جنوبی کوریا جو ایک
ناکام ریاست تھا، اب دنیا کی 10ویں بڑی معیشت ہے ، جاپان جو اب دنیا کی دوسری سب سے بڑی معیشت ہے۔ یہاں تک کہ ملائیشیا اور سنگاپور جیسے ممالک جو پسماندہ اور غریب تھے اب بہتر ہیں۔ آخری بات یہ ہے کہ متحدہ عرب امارات جس نے 1971 میں آزادی حاصل کی وہ کسی بھی ترقی یافتہ ملک سے مقابلہ کر سکتا ہے، بدقسمتی سے پاکستان کے لیے ایسا لگتا ہے کہ یہاں کوئی نہیں ہے جو مخلص ہو، سرنگ کے آخر میں روشنی کی کوئی کرن نہیں ہے کیونکہ اشرافیہ اصل مسائل سے لاتعلق رہتی ہے جب کہ عوام میں شعور اور کرپٹ اشرافیہ کے خلاف ریلی نکالنے کی صلاحیت کا فقدان ہے۔‎ذہین اور محنتی لوگوں کی کثرت ہونے کے باوجود جاگیردار،سیاسی، کاروباری، افسر شاہی اورسکیورٹی اشرافیہ ملک کو تباہی کے دہانے سے نکالنے میں کوئی دلچسپی نہیں رکھتے، قریباً دس ملین سمندر پار پاکستانی سالانہ 30 ارب ڈالر سے زائد رقم پاکستان بھیجتے ہیں۔ اشرافیہ کے غیر ذمہ دارانہ اور غیر دانشمندانہ رویے سے مایوسی بڑھ رہی ہے اور اشرافیہ پاکستان کے حال اور مستقبل کو بچانے
کے لیے اپنی مراعات، مراعات اور مراعات کو قربان کرنے میں دلچسپی نہیں رکھتے۔‎ پاکستان کے اشرافیہ اپنے ملک کی بہتری کے لیے پرعزم کیوں نہیں ہیں اور لوگ چیزوں کو کیسے الٹ پلٹ کر سکتے ہیں اس کا تجزیہ کرنے کے لیے تین دلائل سامنے آ سکتے ہیں۔ پہلا، اہم قومی مسائل یعنی معاشیات، سیاست اور حکمرانی کے بارے میں اشرافیہ اور عوام کا تاثر۔ ایندھن، گیس اور بجلی سمیت اشیائے ضروریہ کی قیمتوں میں بے تحاشہ اضافہ 98 فیصد عوام کو متاثر کر رہا ہے، صرف مراعات یافتہ طبقہ جو کہ آبادی کا ایک چھوٹا سا حصہ ہے، خطرناک آنے والی صورتحال سے کم از کم فکر مند ہے، ‎بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے معاہدے کے مطابق یوٹیلیٹی اشیا کی قیمتوں میں ہو شربا اضافہ ہوا ہے اور اس سے اقتصادی ڈیفالٹ پر تشویش بڑھ رہی ہے اور پٹرولیم مصنوعات، بجلی، گیس اور کھانے پینے کی اشیاء کی شدید قلت ہے۔ غریبوں کو ریلیف دینے کے لیے سطحی اقدامات انتہای ناکافی ہیں ۔ پاکستان اور سری لنکا کے اشرافیہ کے درمیان قدر مشترک یہ ہے کہ دونوں نے اپنے ممالک کو معاشی خرابی کی طرف لے جانے میں اپنا کردار ادا کیا ہے، تاہم سری لنکا آبادی اور رقبہ کے لحاظ سے پاکستان سے بہت چھوٹا ہے اور اس کے ڈیفالٹ نے صرف خطے کو متاثر کیا، اگر پاکستان ڈیفالٹ کرتا ہے تو اس میں پھوٹ پڑ سکتی ہے۔ زیادہ اثر‎ پاکستانی اشرافیہ نے بیرون ملک اپنی محفوظ پناہ گاہیں بنا رکھی ہیں اور وہ ملک کی معاشی تباہی کے بارے میں کم سے کم پریشان ہیں۔یہاں یہ بات قابل غور ہے کہ عوام کی جانب سے ان اشرافیہ کے خلاف ٹھوس موقف اختیار کرنے میں ناکامی جنہوں نے ملک کو معاشی تباہی اور اس کے نتیجے میں ڈیفالٹ کی طرف دھکیل دیا ہے۔ جب عوام اشرافیہ کی طرح لاتعلق ہو جائیں تو اس کا نتیجہ تباہ کن ہو گا اور اس کے دور رس نتائج برآمد ہوں گے۔‎آخر کار، آنے والی معاشی تباہی، سیاسی عدم استحکام اور خراب حکمرانی کو روکنے کے لیے کوئی فوری حل نہیں ہے جب تک کہ ملک کے اشرافیہ تبدیل نہیں ہوتے، انہیں اپنی مراعات یافتہ حیثیت کے تحفظ پر توجہ دینے کی بجائے ملک کو معاشی بحران کے دہانے سے نکالنے پر توجہ دینی چاہیے۔ تباہی؛ سیاسی استحکام کو یقینی بنانے کے لیے اتحاد قائم کرنا؛ بدعنوانی اور اقربا پروری کے خاتمے کے لیے سنجیدہ اقدامات اور گڈ گورننس، قانون کی حکمرانی، میرٹ کی پاسداری اور معیار زندگی کو بہتر بنانا ھی ملکی اور خارجہ پالیسی کے میدان میں پاکستان کو ایک ناکام ریاست بننے سے روک سکتی ہے ۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button
Click to listen highlighted text!