دنیا

پاکستان پر انسانی حقوق پامالی کے سنگین امریکی الزامات، ’حکام کو سزا نہیں ملتی‘

امریکہ نے پاکستان سے متعلق انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر مبنی رپورٹ جاری کر دی ہے، جس میں انسانی حقوق کی خلاور ورزی کرنے والوں کے خلاف سخت ایکشن نہ لینے پر تنقید کا نشانہ بھی بنایا ہے۔

ہیومن رائٹس پریکٹسس کی کنٹری رپورٹس 2023 امریکی محکمہ خارجہ نے منگل کو جاری کی۔ رپورٹ میں پاکستان کے حوالے سے باب بھی شامل ہے۔

امریکی اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ انسانی حقوق کے احترام کو فروغ دینا اور بنیادی آزادیوں کا دفاع کرنا اس بات کا مزکر ہے، کہ ہم بحیثیت ملک کون ہیں۔ انسانیت کی فلاح و بہبود اور آزادی کے لیے کام کرنے والوں کو امریکہ ہمیشہ سپورٹ کرتا رہے گا۔

رپورٹ میں پاکستان سے متعلق رپورٹ میں ماورائے عدالت قتل، جبری گمشدگی، حکومت کی جانب سے غیر موثر اقدامات، جیلوں میں جان لیوا صورتحال، سیاسی قیدیوں کے حوالے سے تنقید کی گئی ہے
امریکی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ انسانی حقوق کے اہم مسائل میں غیر قانونی یا من مانی قتل، بشمول ماورائے عدالت قتل؛ جبری گمشدگی؛ تشدد اور حکومت یا اس کے ایجنٹوں کی طرف سے ظالمانہ، غیر انسانی، یا ذلت آمیز سلوک یا سزا کے مقدمات؛ جیل کے سخت اور جان لیوا حالات؛ من مانی حراست؛ سیاسی قیدی شامل ہیں۔

رپورٹ میں یہ الزام بھی عائد کیا گیاکہ دوسرے ملک کے افراد کے خلاف بین الاقوامی جبر؛ پرائیویسی میں من مانی یا غیر قانونی مداخلت؛ رشتہ دار کی طرف سے مبینہ جرائم پراس کے خاندان کے افراد کو سزا دینا ؛ تنازعہ میں سنگین زیادتیاں، بشمول مبینہ طور پر غیر قانونی شہریوں کی موت اور جبری گمشدگی؛ آزادی اظہار اور میڈیا کی آزادی پر سنگین پابندیاں، بشمول صحافیوں کے خلاف تشدد، صحافیوں کی بلا جواز گرفتاریاں اور گمشدگیاں، سنسر شپ عام ہیں۔

رپورٹ میں مجرمانہ ہتک عزت کے قوانین اور توہین رسالت کے خلاف قوانین کا ذکر کیا گیا ہے۔
اسی رپورٹ میں پاکستان میں انٹرنیٹ پر بندش سمیت دیگر مسائل کے حوالے سے بھی ذکر کیا گیا ہے، انٹرنیٹ کی آزادی پر سنگین پابندیاں؛ غیر سرکاری تنظیموں اور سول سوسائٹی کی تنظیموں کے کام پر حد سے زیادہ پابندی والے قوانین سمیت پرامن اجتماع کی آزادی اور انجمن کی آزادی میں خاطر خواہ مداخلت؛ مذہبی آزادی کی پابندیاں؛ نقل و حرکت کی آزادی پر پابندیاں؛ افراد کی زبردستی یا زبردستی کسی ایسے ملک میں واپسی جہاں انہیں ممکنہ طور پر تشدد یا ایذا رسانی کا سامنا کرنا پڑے گا۔

امریکی محکمہ خارجہ نے دعویٰ کیا کہ سنگین حکومتی بدعنوانی؛ ملکی اور بین الاقوامی انسانی حقوق کی تنظیموں پر حکومت کی سنگین پابندیاں؛ صنفی بنیاد پر وسیع تشدد، بشمول گھریلو ساتھی پر تشدد، جنسی تشدد، کم عمری اور جبری شادی، خواتین کا ختنہ اور اس طرح کے تشدد کی دیگر اقسام؛ ایسے جرائم جن میں تشدد یا تشدد کی دھمکیاں مذہبی، نسلی اور نسلی اقلیتوں بشمول پشتون اور ہزارہ برادریوں کے ارکان کو نشانہ بنانا؛ یہود دشمنی سے متاثر تشدد کی دھمکیاں بھی پاکستان میں عام ہیں۔
امریکی رپورٹ میں ہم جنس پرستوں کے حوالے سے بھی ذکر کیا گیا ہے، بالغوں کے درمیان متفقہ ہم جنس جنسی سلوک کو مجرم قرار دینے والے قوانین کا نفاذ؛ تشدد یا ہم جنس پرستوں، ہم جنس پرستوں، ابیلنگی، ٹرانس جینڈر، نر، یا انٹر جنس افراد کو نشانہ بنانے والے تشدد یا تشدد کی دھمکیوں پر مشتمل جرائم؛ اور کارکنوں کی انجمن کی آزادی پر اہم یا منظم پابندیاں بھی امریکہ نے انسانی حقوق کی خلاف ورزی قرار دی ہیں۔

جبکہ سرکار سے متعلق امریکہ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ حکومت نے شاذ و نادر ہی ایسے اہلکاروں کی شناخت اور سزا دینے کے لیے قابل اعتماد اقدامات کیے جو انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے مرتکب ہو سکتے ہیں۔
امریکہ نے الزام عائد کیا کہ عسکریت پسند تنظیموں اور دیگر غیر ریاستی عناصر کی طرف سے تشدد، بدسلوکی، اور سماجی اور مذہبی عدم برداشت نے لاقانونیت کے کلچر میں حصہ ڈالا۔ دہشت گردی کے تشدد اور غیر ریاستی عناصر کی طرف سے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں نے انسانی حقوق کے مسائل میں اہم کردار ادا کیا، سال کے دوران دہشت گردی کے تشدد میں اضافہ ہوا۔ شہریوں، فوجیوں اور پولیس کے خلاف دہشت گرد اور سرحد پار سے عسکریت پسندوں کے حملوں میں سینکڑوں ہلاکتیں ہوئیں۔ فوج، پولیس اور دیگر قانون نافذ کرنے والے اداروں نے عسکریت پسندوں اور دہشت گرد گروہوں کے خلاف اہم مہمات جاری رکھی۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button