Columnعبدالرشید مرزا

پاکستانی معیشت پر سیلاب کے اثرات .. عبدالرشید مرزا

عبدالرشید مرزا

موجودہ صورتحال سے نمٹنے میں پاکستانی حکومت کی ناکامی کے نتیجے میں پاکستان میں شدید سیلاب معمول بن چکے ہیں۔ نتیجتاً، ملک خود کو بین الاقوامی امداد اور معاشی ترقی میں کمی کے شیطانی چکر میں پاتا ہے۔ موسمیاتی تبدیلی21ویں صدی کا سب سے بڑا چیلنج بن چکی ہے۔ موسم کے پیٹرن میں تبدیلیوں اور موسمی درجہ حرارت میں تبدیلیوں سے مراد ہے۔ موسمیاتی تبدیلی مختلف ممالک کو بری طرح متاثر کر رہی ہے۔ اس کا زراعت پر گہرا اثر پڑتا ہے اور خوراک کی حفاظت کے خطرے کو زیادہ سے زیادہ کرتا ہے۔ پاکستان موسمی درجہ حرارت اور موسم کی تبدیلیوں سے سب سے زیادہ متاثر ہونے والے 10 ممالک میں سے ایک ہے۔ اس کا اثر وسیع ہے جیسے کہ زراعت کی پیداوار میں کمی، مسلسل خشک سالی، ساحلی کٹاؤ اور اوسط سے زیادہ بارش۔ آج ملک میں سیلاب کی صورتحال موسمیاتی تبدیلیوں کی ایک بڑی وجہ ہے جس نے ہزاروں ایکڑ اراضی کو تباہ اور لاکھوں افراد کو جانوں کے ضیاع کے ساتھ بے گھر کر دیا ہے اور ابتدائی تخمینوں کے مطابق، سیلاب کی وجہ سے کل کاشت کی گئی 22 ملین ہیکٹر اراضی میں سے 7 ملین ہیکٹر زیر آب آچکے ہیں جو قریباً 33 فیصد بنتے ہیں۔ صوبوں کی جانب سے وزارت فوڈ سکیورٹی اینڈ ریسرچ کو شیئر کیے گئے اعداد و شمار کے مطابق ابتدائی تشخیص میں زراعت اور لائیو سٹاک کے شعبے میں 298 ارب روپے کے نقصانات کا انکشاف ہوا ہے۔ زراعت کا شعبہ جی ڈی پی میں 23 فیصد اور مجموعی پیداوار میں 19 فیصد حصہ ڈالتا ہے۔ زرعی شعبے کے پیداواری ضرب کا تخمینہ 1.43کے لگ بھگ ہے۔ یہ سیکٹر کی 1فیصد کے ان پٹ کو آؤٹ پٹ میں 1.43فیصد سے ضرب دینے کی صلاحیت کی
نمائندگی کرتا ہے۔ زرعی شعبے کیلئے نجی کھپت کے اخراجات کا حصہ 12فیصد ہے جو کہ نجی کھپت کے اخراجات میں کسی بھی شعبے کا چوتھا سب سے زیادہ حصہ ہے۔قریباً37.4فیصد افرادی قوت زراعت کے شعبے میں کام کرتی ہے۔ 2010 کے سیلاب نے زراعت کے شعبے کو منفی طور پر متاثر کیا، کیونکہ بڑی فصلوں کی پیداوار میں 15 فیصد کمی واقع ہوئی۔ زراعت کی شرح نمو0.23 فیصد تک گر گئی، جس سے مجموعی جی ڈی پی کی شرح نمو 2.58 فیصد ہو گئی۔ حالیہ سیلاب کی وجہ سے ہونے والی تباہی بہت زیادہ ہے، کیونکہ اس نے زیر کاشت زمین کے وسیع رقبے کو زیر کیا ہے۔ کپاس کی فصل کو ہونے والا نقصان ناقابل تلافی رہا ہے، کیونکہ یہ جی ڈی پی کا 1فیصد حصہ ڈالتی ہے۔ سبزیاں، کھجور، گنے اور چاول کی فصلوں کو بھی بری طرح نقصان پہنچا جس سے 50 فیصد پیداواری نقصان ہو سکتا ہے۔ قریباًسات سے آٹھ لاکھ مویشی ضائع ہو چکے ہیں، کیونکہ یہ قومی جی ڈی پی میں 11 فیصد کا حصہ ڈالتا ہے۔ جغرافیائی طور پر چاروں صوبوں میں 110 اضلاع بری طرح متاثر ہوئے ہیں۔یہ اندازہ لگانا محفوظ ہے کہ زرعی شعبے کی پیداوار کا نقصان قریباً 25-30 فیصد ہو سکتا ہے جس میں مویشیوں کے نقصانات اور فصلوں کے نقصانات
بھی شامل ہیں۔ 25فیصد کا سکڑاؤ دور رس اثر ڈال سکتا ہے کیونکہ مجموعی پیداوار اور قدر میں اضافے میں زراعت کا بامعنی حصہ ہے۔ لیونٹیف کے ان پٹ آؤٹ پٹ ماڈل کو استعمال کرتے ہوئے اخذ کیے گئے تخمینوں کے مطابق، زراعت کے شعبے میں 25 فیصد کی کمی سے مجموعی پیداوار میں 21 بلین ڈالر کا نقصان اور 14.7 بلین ڈالر کا مجموعی ویلیو ایڈیشن نقصان ہوا جو کہ موجودہ جی ڈی پی کا 3.85 فیصد ہے۔ایک ان پٹ،آؤٹ پٹ ماڈل آؤٹ پٹ پیدا کرنے کیلئے سیکٹر کے ذریعے استعمال ہونے والے مختلف ان پٹ کے ذریعے سیکٹری روابط پیش کرتا ہے۔ شعبہ جاتی مجموعی پیداوار کے نقصانات سے پتہ چلتا ہے کہ زراعت کے شعبے پر زیادہ تر بوجھ پڑے گا اور وہ مجموعی پیداوار کا 76فیصد اور مجموعی ویلیو ایڈڈ کا 80 فیصدکھو دے گا۔ دوسرے شعبے جن کا سب سے زیادہ نقصان ہو سکتا ہے وہ ہیں خوراک، مشروبات، تمباکو،خوردہ؍تھوک، تجارت اور کیمیکل، ربڑ، پلاسٹک، خوراک، مشروبات اور تمباکو مجموعی پیداوار کا 4فیصد اور مجموعی مالیت کا 1فیصد کھو سکتے ہیں۔ خوردہ اور تجارت کو مجموعی پیداوار کے 9.5فیصد اور مجموعی مالیت کا 11فیصد کا نقصان ہو سکتا ہے۔اور کیمیکل، ربڑ اور پلاسٹک مجموعی پیداوار کا 4فیصد اور اضافی ویلیو کا 2فیصد کھو سکتے ہیں۔ اس نوعیت کے معاشی اثرات کا خلاصہ جی ڈی پی کی نمو میں 3.84 فیصد کمی کے طور پر کیا جا سکتا ہے۔ اگلے سال کی جی ڈی پی کی شرح نمو 1-2 فیصد کے اندر رہے گی جس کے ساتھ افراط زر میں اضافہ اور بے روزگاری میں اضافہ
ہوگا۔ حکومت کو چاہیے کہ وہ آئی ایم ایف کے ساتھ دوبارہ مذاکرات کرے تاکہ صوبائی سرپلس کی متفقہ شرط پر ریلیف فراہم کیا جا سکے اور غیر ترقیاتی اخراجات کو کم کیا جائے، انفراسٹرکچر کی تعمیر نو پر زیادہ خرچ کیا جائے۔ گندم کی امدادی قیمت کا جلد از جلد اعلان کیا جانا چاہیے جس میں فارم ان پٹ پر سبسڈی اور بلا سود قرضے دیے جائیں۔ وفاقی اور صوبائی حکومتیں سوشل سیفٹی نیٹس کے بجٹ میں فوری طور پر اضافہ کریں۔اب میں تذکرہ کروں گا سیلاب کے خطرہ کو کم کرنے کیلئے کونسے اقدامات کرنے ہوں گے کیونکہ پاکستان میں سیلاب اگلے سالوں میں بھی متوقع ہیں، سیلاب کے خطرے کے انتظام اور روک تھام کی حکمت عملیوں کی پانچ اقسام ہیں۔ سیلاب کے خطرے سے بچاؤ کی روک تھام کے اقدامات کا مقصد لوگوں؍جائیداد وغیرہ کی نمائش کو کم کر کے سیلاب کے نتائج کو کم کرنا ہے، ایسے طریقوں کے ذریعے جو سیلاب کے خطرے میں گھرے ہوئے علاقوں میں ترقی کو روکتے ہیں یا اس کی حوصلہ شکنی کرتے ہیں مثلاً، مقامی منصوبہ بندی، رئیل الاٹمنٹ اور قبضے کی پالیسی وغیرہ۔ حکمت عملی کی بنیادی توجہ صرف سیلاب زدہ علاقوں سے باہر تعمیر کرکے لوگوں کو پانی سے دور رکھنے پر ہے۔ سیلاب سے بچاؤ کے اقدامات کا مقصد بنیادی ڈھانچے کے کاموں کے ذریعے سیلابی علاقوں کے امکان کو کم کرنا ہے، جیسے کہ ڈیموں، پشتوں، اور ویرز، جنہیں زیادہ تر فلڈ ڈیفنس یا ساختی اقدامات کہا جاتا ہے پانی کی ترسیل کیلئے موجودہ چینلز (قدرتی یا انسان ساختہ) پانی کیلئے جگہ بڑھانے کیلئے (بعد میں یا عمودی طور پر) یا اس علاقے سے باہر پانی کو برقرار رکھنے کیلئے نئی جگہوں کی تخلیق جس کا دفاع کیا جائے۔ مختصراً، توجہ پانی کو لوگوں سے دور رکھنےپر ہے۔ سیلاب کے خطرے میں تخفیف سیلاب کے خطرے کی تخفیف کمزور علاقے کے اندر اقدامات کے ذریعے سیلاب کے نتائج کو کم کرنے پر مرکوز ہے۔ سیلاب زدہ علاقے کے سمارٹ ڈیزائن کے ذریعے نتائج کو کم کیا جاسکتاہے۔اقدامات میں مقامی ترتیب، محفوظ علاقے کے اندر پانی کی برقراری، یا (قواعد) فلڈ پروف عمارت شامل ہیں۔ اس طرح سیلاب کے خطرے کی تخفیف میں سیلاب سے بچنے کیلئے تمام اقدامات کے ساتھ ساتھ سیلاب زدہ علاقے میں یا اس کے نیچے پانی کو برقرار رکھنے یا ذخیرہ کرنے کے اقدامات شامل ہیں۔ سیلاب کے نتائج کو سیلاب کے واقعے کی تیاری کر کے بھی کم کیا جا سکتا ہے۔ اقدامات میں سیلاب کی وارننگ سسٹم تیار کرنا، ڈیزاسٹر مینجمنٹ اور انخلاء کے منصوبے تیار کرنا اور سیلاب آنے پر اس کا انتظام کرنا شامل ہیں۔ افسوس کی بات یہ ہے پاکستان میں محکمہ موسمیات نے مئی میں اس سیلاب کی وارننگ دی تھی جس کی کوئی تیاری نہیں کی گئی، سیلاب آنے کے بعد خیموں کے ٹینڈر دیئے گئے۔ سیلاب کی بحالی یہ حکمت عملی سیلاب کے واقعے کے بعد اچھی اور تیز بحالی میں سہولت فراہم کرتی ہے۔ پاکستان میں اموات کی بڑی وجہ دریاؤں کے سوکھ جانے سے لوگوں نے دریا کے اندر اور ارد گرد گھر تعمیر کئے ہمارے انتظامی اداروں نے کوئی کارروائی نہیں کی جس وجہ سے اموات اور نقصانات میں اضافہ ہوا۔ سیلاب کے نقصانات کو کم کرنے کیلئے ڈیموں کی تعمیر کے ساتھ ندی، نالے، نہروں کی صفائی اور نئی نہروں کی تعمیر ہے۔ جس سے سیلاب کا رخ تبدیل کرکے ان علاقوں کی طرف منتقل کرنا ہے جہاں نقصانات ہونے کے مواقع کم ہوتے ہیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button