ColumnMonas Ahmar

بحران کا فیصلہ کرنا مشکل کام کیوں؟ .. پروفیسر ڈاکٹر مونس احمر

پروفیسر ڈاکٹر مونس احمر

پاکستان میں سب سے خطرناک بحران یہ ہے کہ طوفانی بارشوں اور سیلاب کی صورت میں قدرتی آفات سے کیسے نمٹا جائے۔ فیصلہ سازی کا طریقہ کاربحران کی صورت حال سے نمٹنے کیلئے ریاست کی طاقت اور صلاحیت کا تعین کرتا ہے۔ جب قیادت میں واضح اور مستقل مزاجی کا فقدان ہو اور وہ اہم مسائل پر اپنے نقطہ نظر میں مضحکہ خیز ہو، تو نتیجہ غلط فیصلہ سازی کی صورت میں نکلتا ہے۔ اسی طرح اگر کسی ملک کو قدرتی اور انسانی ساختہ آفت کا سامنا ہے تو قیادت سے بروقت، جرأت مندانہ فیصلے کی ضرورت ہے۔اس کے علاوہ، اگر کوئی اقتصادی، سیاسی یا سفارتی بحران ہو تو ملک کی خودمختاری، سلامتی، قومی مفاد اور علاقائی سالمیت کے تحفظ کیلئے بروقت کیے گئے فیصلے فرق کر سکتے ہیں۔
بحران سے متعلق فیصلہ سازی کی کچھ بنیادی خصوصیات ہمت، دلیری، سمجھداری، استقامت، خطرہ مول لینا، وضاحت اور مستقل مزاجی ہیں۔ ایسے معاشرے جہاں بہتر تعلیم اور ترقی کے حامی نقطہ نظر کو ترجیح دی جاتی ہے، وہاں بحران سے متعلق فیصلہ سازی میں ہموار سفر کی توقع کی جا سکتی ہے۔ ہر بحران کا ایک موقع ہوتا ہے اور یہ متعلقہ اسٹیک ہولڈر پر منحصر ہوتا ہے کہ وہ کسی صورت حال کا استعمال کرے اور اس کے مطابق چیلنج کا مقابلہ کرے۔ پاکستان کے تناظر میں دیکھا جائے تو یہ ملک بحرانی فیصلہ سازی کے چیلنج کا مقابلہ کرنے سے قاصر ہے کیونکہ معاملات کی قیادت کرنے والوں کے پاس ایسی خطرناک صورتحال سے نمٹنے کی صلاحیت، دانشمندی، سمجھداری اور صلاحیت نہیں ہے جو ملک کی بقا کیلئے خطرہ ہے۔ اس وقت سب سے خطرناک بحران جو کہ فیصلہ سازی کا امتحان ہے وہ یہ ہے کہ طوفانی بارشوں اور سیلاب کی صورت میں قدرتی آفات سے کیسے نمٹا جائے۔ 35 ملین سے زیادہ لوگ بے گھر ہوئے ہیں۔ ایک ہزار سے زیادہ مر چکے ہیں، مویشیوں کو زبردست نقصان پہنچا ہے۔ سینکڑوں اور ہزاروں گھر تباہ ہو چکے ہیں اور سڑکوں، پلوں اور ریلوے لائنوں جیسے بنیادی ڈھانچے کو شدید نقصان پہنچا ہے۔ پاکستان میں بحران سے متعلق فیصلہ سازی کی قابل رحم شکل اس حقیقت سے عیاں ہے کہ جون میں محکمہ موسمیات نے معمول سے زیادہ بارشوں اور گلیشیئرز کے ممکنہ پگھلنے کی پیشگی وارننگ جاری کی تھی۔ سیلاب کی شکل میں آنے والے بحران کی وارننگ ان لوگوں کو خبردار کرنے میں ناکام رہی جنہیں احتیاطی تدابیر اختیار کرنے اور لاکھوں لوگوں کی جانیں بچانے کی ضرورت تھی۔ غیر سنجیدہ اور غیر پیشہ ورانہ رویے نے قدرتی آفات کے سب سے بڑے سانحے کو جنم دیا اور ایک مہلک انسانی بحران کا باعث بنا۔ پڑوسی بھارتی ریاست راجستھان میں طوفانی بارشیں سیلاب کا باعث بننے میں ناکام رہیں کیونکہ پانی ذخیرہ کرنے کے مناسب انتظامات کیے گئے تھے۔ اس کے نتیجے میں پاکستان میں لاکھوں افراد کے برعکس صرف راجستھان میںچارہزار افراد بے گھر ہوئے۔ بھارت میں طوفانی بارشوں اور ہمالیہ کے پہاڑوں میں گلیشیئرز کے پگھلنے کے باوجود سیلاب کو روکنے کیلئے فیصلہ سازی کے طریقہ کار میں سینکڑوں ڈیموں کی تعمیر اور پانی ذخیرہ کرنے کی سہولیات شامل ہیں۔ سیلاب اور سیلابی پانی کے ضیاع سے نمٹنے کیلئے پاکستان میں بروقت فیصلہ سازی کیلئے چھوٹے، درمیانے اور بڑے ڈیموں اور پانی ذخیرہ کرنے کی دیگر سہولیات کی ضرورت تھی بحران سے متعلق فیصلہ سازی کے چیلنج کو پاکستان کی متواتر حکومتوں نے اپنے قیام سے لے کر آج تک سنجیدگی سے نہیں لیا جس کی وجہ سے 1971 میں بنگلہ دیش وجود میں آیا۔ 1984 میں سیاچن گلیشیئر کے ایک بڑے حصے کا نقصان، 5 اگست 2019 کا جموں و کشمیر تنظیم نو ایکٹ جاری کرکے جموں و کشمیر کے ہندوستانی جذب سے نمٹنے میں ناکامی، 1958، 1969، 1977 اور 1999 میں مارشل لاء کا نفاذ اور فوجی اقتدار پر قبضہ ۔ مزید برآں، معاشی بحران کا سنگین چیلنج اور ملک کو ڈیفالٹ کا سامنا کرنے کا خطرہ بحران سے متعلق فیصلہ سازی کے طریقہ کار کی عدم موجودگی کی عکاسی کرتا ہے۔سیاسی استحکام، معاشی استحکام، گڈ گورننس ، قانون کی حکمرانی اور احتساب کیلئے بروقت فیصلے پاکستان کیلئے بہتر ہوتے۔ جب آنے والی حکومتوں نے خواہ وہ سویلین ہوں یا وردی میں، بحرانی صورتحال سے نمٹنے کیلئے کوتاہی اور غیر پیشہ ورانہ رویے کا مظاہرہ کیا تو اس سے زمینی حقائق کو تسلیم کرنے سے عاری ذہنیت کی عکاسی ہوتی ہے۔اگر ایسا نہ ہوتا تو پاکستان مشرقی پاکستان، سیاچن، کارگل اور جموں و کشمیر کو نہ کھوتا۔ مزید برآں، ملک غیر ملکی قرضوں اور امداد پر ڈوب نہیں رہا ہوتا۔ بحران سے متعلق فیصلہ سازی کیوں ایک مشکل کام بنی ہوئی ہے اور پاکستان میں فیصلہ سازی کا صحیح طریقہ کار کیسے ہو سکتا ہے اس کیلئے دو اقدامات کی ضرورت ہوگی۔ سب سے پہلے، فیصلہ سازی اور اس کے طریقہ کار سے متعلق کورسز پاکستان کی یونیورسٹیوں میں پیش کئے جائیں اور پیشہ ور افراد کے ذریعے پڑھائے جائیں۔ اس کے ساتھ ساتھ پاکستان کے داخلی اور خارجی مسائل پر توجہ مرکوز کرتے ہوئے فیصلہ سازی کے حوالے سے نئی تحقیق اور تحقیقی مراکز اور تھنک ٹینکس کی ضرورت ہے تاکہ پالیسی ساز ملکی اور خارجہ پالیسی کے چیلنجز پر تحقیقاتی مطالعات سے استفادہ کر سکیں۔ جب پیشہ ورانہ تربیت اور تعلیم کے نتیجے میں ایک اہم میڈیا (ادارہ) پیدا ہو جائے گا، تو بحرانی فیصلہ سازی کے چیلنج سے مؤثر طریقے سے نمٹنا ممکن ہوگا۔ بحران سے متعلق فیصلہ سازی کے کچھ تقاضے جن پر سنجیدگی سے غور کرنے کی ضرورت ہے وہ یہ ہیں: ہمت، خطرہ مول لینے کی صلاحیت ، واقعات پر قابو، صبر، استقامت، ہوشیاری، وضاحت، بصیرت کا انداز، بحران کو موقع میں بدلنے کی صلاحیت، فیصلہ سازی کے عمل اور وقت کے
انتظام میں شامل افراد کے درمیان مناسب ہم آہنگی ۔جب بحران سے متعلق فیصلہ سازی اسٹریٹجک کلچر کا حصہ بن جاتی ہے اور متعلقہ اسٹیک ہولڈرز اپنے نقطہ نظر میں پیشہ ور ہوتے ہیں، تو وہ سیلاب سے متعلق ابتدائی انتباہ سے مؤثر طریقے سے اور بروقت نمٹ سکتے ہیں۔ سیاسی تفرقہ جو تشدد اور معاشرتی تفریق ، نفرت کا باعث بنتا ہے۔ سنگین معاشی بحران ریاست اور معاشرتی ڈھانچے کو خطرے میں ڈال رہا ہے یا سنگین سکیورٹی خطرات کا سبب بن رہا ہے۔ 1971 کا مشرقی پاکستان کا بحران اس بات کی بہترین مثال ہے کہ کس طرح بحرانی فیصلہ سازی میں فالٹ لائنز ملک کے ٹوٹنے کا باعث بنیں۔ جو لوگ بحران کو سنبھالنے کے ذمہ دار تھے انہوں نے واقعات کو غلط طریقے سے سنبھالا اور یہ جانتے ہوئے کہ ڈھاکہ میں 3 مارچ کو ہونے والے قومی اسمبلی کے اجلاس کو ملتوی کرنے کے سنگین نتائج برآمد ہوں گے، حالات کو کنٹرول کرنے میں ناکام رہے۔ اس وقت کے گورنر اور مشرقی پاکستان کے مارشل لاء ایڈمنسٹریٹر نے اسلام آباد کو سختی سے مشورہ دیا تھا کہ وہ فوجی کارروائی کا سہارا لینے کے بجائے اس بحران کا سیاسی حل تلاش کرے۔ دوسرا، فیصلہ سازی میں ایڈہاک ازم پاکستان کی سنگین سیاسی، اقتصادی اور سلامتی کے سلسلے میں ایک بڑا چیلنج ہے۔ ریاستی پالیسیوں پر اثرانداز ہونے کی صلاحیت رکھنے والی بلند و بالا شخصیات میں حوصلے اور تدبر کی عدم موجودگی، خاص طور پر وہ لوگ جو قبل از وقت انتخابات کے انعقاد پر حکومت اور پی ٹی آئی کے درمیان پیدا ہونے والے ڈیڈ لاک سے نمٹ رہے ہیں۔ یہ سب بڑے تجارتی فرق ، زرمبادلہ کے ذخائر میں کمی اور ممکنہ ڈیفالٹ بحران کی صورت حال سے نمٹنے کیلئے ضروری میکانزم کی عدم موجودگی کو ظاہر کرتا ہے۔بحران سے متعلق فیصلہ سازی، بیرونی چیلنجوں سے نمٹنے کے بارے میں بھی یہی بات ہے۔ جب 5 اگست، 2019 کو بھارت نے جموں و کشمیر کی تنظیم نو کا ایکٹ نافذ کیا اور آرٹیکل 370 کو منسوخ کرکے جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کو ختم کیا، تو اس طرح کے فیصلے سے پاک بھارت تعلقات میں شدید بحرانی صورتحال پیدا ہو گئی اور ان کے تعلقات میں دراڑ پیدا ہو گئی جس کی وجہ سفارتی نمائندگی میں کمی آئی۔ پاکستان کے ہائی کمیشن نئی دہلی میں، بھارت کے ساتھ فضائی، سڑک، ریل رابطے اور تجارت بھی معطل ۔پاک بھارت تعلقات میں بحران سے متعلق فیصلہ سازی کے طریقہ کار کی عدم موجودگی کا مطلب یہ ہے کہ دشمنی کی مسلسل سطح جنوبی ایشیا کے 2.5 بلین لوگوں کے مستقبل کو خطرے میں ڈال رہی ہے۔ نہ صرف ان کے دوطرفہ تعلقات میں تعطل ہے بلکہ سارک کا عمل بھی تعطل کا شکار ہے۔ جامع مذاکرات جو تنازعات کے انتظام اور حل کیلئے آگے بڑھنے کا ایک راستہ تھا، پچھلے کئی سالوں سے پھنسا ہوا ہے۔ مشکل اندرونی اور بیرونی چیلنجوں سے نمٹنے کیلئے پاکستان کیلئے بحران سے متعلق فیصلہ سازی کیلئے صحت مندانہ طرز عمل وقت کی اہم ضرورت ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button