تازہ ترینحالات حاضرہخبریںروس یوکرین تنازع

روس یوکرین جنگ میں شدت, یوکرین کے 1612 فوجی اڈے تباہ

یوکرین کے دارالحکومت کیف میں شدید لڑائی کی خبریں موصول ہورہی ہیں اس درمیان روسی فوج نے جہاں خرسون شہر پر قبضہ کرلیا ہے وہیں اس کے چار سو سے زائد فوجی اس جنگ میں مارے گئے ہیں جس کا خود روس نے اعتراف کیا ہے۔ روسی وزارت دفاع کے ترجمان جنرل ایگور کوناشنکوف نے  روس یوکرین جنگ میں مرنے والوں کی تعداد کے بارے میں ایک رپورٹ میں کہا ہے کہ یوکرین کی مسلح افواج اور مسلح  قوم پرستوں کے دوہزار آٹھ سو ستر سے زائد فوجی اور مسلح افراد مارے گئے ہیں ۔ جبکہ ان کے تین ہزار سات سو افراد زخمی ہوئے ہیں اور پانچ سو بہتر یوکرینی فوجیوں کو قیدی بنا لیا گیا ہے۔

 روسی وزارت دفاع کے ترجمان نے مزید کہا کہ  خصوصی فوجی آپریشن میں شرکت کرنے والی  ہماری فوج کو بھی  نقصان ہوا ہے اور اب تک  چارسو اٹھانوے روسی فوجی  مارے گئے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ  ہلاک ہونے والوں کے ورثاء کو لازمی امداد فراہم کی جا رہی ہے ۔

درایں اثنا الجزیرہ ٹی وی نے رپورٹ دی ہے کہ یوکرین کے صدر ولادیمیر زلنسکی نے روس یوکرین جنگ کے بارے میں کہا ہے کہ روس کی جنگ نے یوکرین کو متحد کردیا  اور  ایک ہفتے میں روس کے نوہزار فوجیوں کو ہلاک کردیا گیا ہےایک اور خبر یہ ہے کہ یورپ کے سیکورٹی و تعاون کے ادارے نے اعلان کیا ہے کہ اس کے خصوصی مبصرین کے وفد کا ایک رکن شہر خارکیف پر روس کے فضائی حملے میں ہلاک ہوگیا ہے۔

ادھر روس کے وزیرخارجہ سرگئی لاوروف نے ایک بار پھر یوکرین کو غیرمسلح  کرنے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا ہے کہ یوکرین کے عوام کو اپنی تقدیر کا فیصلہ خود کرنا چاہئے۔ روس کے وزیرخارجہ نے اس بات کو مسترد کردیا کہ روس ، یوکرین کو گھٹنے ٹیکنے پر مجبو کرنا چاہتا ہے انھوں نے کہا کہ ماسکو راہ حل کے حصول کے لئے مفاہمت کے لئے تیار ہے۔

سرگئی لاوروف نے کہا کہ بہت سے حقائق موجود ہیں جن سے ثابت ہوتا ہے کہ یوکرین ، روس کے اطراف میں ایک دشمنانہ بیلٹ قائم کرنے کے مغرب کے منصوبے کا حصہ ہے اور یوکرین کو دوبرسوں تک کے لئے ہتھیاروں سے بھر دیا گیا ہے اور حالیہ مہینوں میں یوکرین کے لئے آنے والی فوجی ہتھیاروں کی کھیپوں میں غیرمعمولی اضافہ ہوا ہے۔

روسی وزیرخارجہ نے مغربی میڈیا اور سیاستدانوں کو دونباس کے عوام کے مسائل و مشکلات پرخاموش رہنے پر سخت تنقید کا نشانہ بنایا جنھیں آٹھ برسوں تک بمباری کا نشانہ بنایا گیا اور قتل عام کیا گیا۔ انہوں نے  کہا کہ روس کا ایک اور مقصد یہ ہے کہ یوکرین سے اغیار کا صفایا کرے۔

اس درمیان روس اور یوکرین کے درمیان آج جمعرات کوبیلاروس کے سرحدی علاقے بلاوژسکی پوشہ نامی علاقے میں مذاکرات  ہو رہے ہیں ۔ روس کے نائب صدر ولادیمیر مدینسکی نے کہا ہے کہ اس دور کے مذاکرات میں جنگ بندی کا موضوع اٹھایا جائے گ ۔ اروس اور یوکرین کے درمیان پہلے دور کے مذاکرات پیر کو بیلاروس کے گومل صوبے کے دریائے پریپیات کے قریب منعقد ہوئے تھے جس کا کوئی نتیجہ بر آمد نہیں ہوا تھا۔

روس کی وزارت دفاع کی جانب سے جاری اعداد وشمار میں یوکرین کے 62 طیارے تباہ کرنے کا دعویٰ کیا گیا ہے۔

روسی وزارت دفاع کے ترجمان ایگور کونشینکوف کے مطابق، یوکرین کے 484 ٹینک اور47 ڈرون سمیت دیگردفاعی ہتھیارتباہ کردئیے گئے جبکہ مجموعی طورپریوکرین کے 1612اثاثے تباہ کردئیے گئے ہیں۔

دوسری جانب، امریکی محکمہ خارجہ کی جانب سے جاری بیان میں روس سے یوکرین میں خوں ریزی روکنے اورفوری جنگ بندی کا مطالبہ کیا گیا ہے۔

اقوام متحدہ کا کہنا ہے کہ یوکرین سے اب تک 10 لاکھ افراد نقل مکانی کرچکے ہیں۔

عالمی عدالت انصاف میں  یوکرین پرحملے میں شہریوں کی ہلاکت پر روس کیخلاف ممکنہ  جنگی جرائم کے سلسلے میں درخواست پرکارروائی کا آغاز ہوگیا ہے جس کی یوکرین نے عالمی عدالت میں درخواست دی ہے۔

 واضح رہے کہ یوکرین کے مختلف شہروں میں روس کےحملے جاری ہیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button