انتخابات

سپریم کورٹ کے فیصلہ پر عملدرآمد : مخصوص نشستوں پر 77 ارکان کی رکنیت معطل

الیکشن کمیشن نے مخصوص نشستوں پر 77 ارکان کی رکنیت معطل کردی اور نوٹیفکیشن جاری کردیا۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ کے فیصلے پر عملدرآمد کرتے ہوئے الیکشن کمیشن نے مخصوص نشستیں معطل کر دیں اور اس حوالے سے نوٹیفکیشن جاری کردیا۔

نوٹیفکیشن میں بتایا کہ اضافی نشستوں پر77 ارکان کی رکنیت معطل کی گئی، قومی اسمبلی سے اضافی مخصوص نشستوں پر 22 منتخب ارکان ، 19خواتین اور 3 اقلیتی ارکان معطل ہوئے.

الیکشن کمیشن کا کہنا ہے کہ کے پی اسمبلی سے اضافی مخصوص نشستوں پر 25 ارکان ، 21 خواتین اور 4 اقلیتی ارکان معطل کئے گئے،

نوٹیفکیشن کے مطابق پنجاب اسمبلی سےاضافی مخصوص نشستوں پر 27ارکان ، 24 خواتین اور3 اقلیتی رکن معطل ہوئے جبکہ سندھ اسمبلی سے پیپلز پارٹی اورایم کیو ایم کی ایک ایک خاتون ممبر کی رکینت معطل کی گئی جبکہ پیپلز پارٹی کے ایک اقلیتی رکن بھی معطل ہوا.

پنجاب اسمبلی سے مسلم لیگ ن کی مخصوص نشست پر منتخب 21 ارکان معطل ہوئے ، پی پی،آْئی پی پی اور ن لیگ کی ایک ایک خواتین رکن کی رکنیت معطل کی گئی جبکہ مسلم لیگ ن کے2 اور پیپلز پارٹی کے ایک اقلیتی ممبر کی رکنیت معطل ہوئی۔

یاد رہے الیکشن کمیشن کو مخصوص نشستوں پر ارکان کو ڈی نوٹیفائی نہ کرنے کی تجویز دی گئی تھی، ذرائع نے بتایا تھا کہ الیکشن کمیشن کے لا ونگ نے مخصوص نشستوں سے متعلق اپنی رائےدی۔

ذرائع کا کہنا تھا کہ سپریم کورٹ نے الیکشن کمیشن اور پشاور ہائیکورٹ کافیصلے کالعدم قرار نہیں دیا، سپریم کورٹ نے الیکشن کمیشن اور پشاور ہائیکورٹ کا فیصلہ معطل کیا ہے، سپریم کورٹ کے حکم کے عین مطابق عمل درآمد کیا جائے۔

لاونگ نے رائے دی کہ فیصلے کےمطابق رکنیت معطل کی جا سکتی ہے ڈی نوٹیفائی نہیں، الیکشن کمیشن نےسپریم کورٹ کےفیصلے پر لا ونگ سے رائے طلب کی تھی۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button