Column

سائنس کے دروازے دانشمندی سے کھولیں

مورخ احمد مرزا

دماغ انسانی جسم کا ایک منفرد اور دلکش عضو ہے۔ جسے سب سے پیچیدہ اور کم سے کم سمجھا جانے والا حصہ مانا جاتا ہے۔ سائنس دان ہمیشہ سے ہمارے دماغ اور دماغی نظام کی پیچیدگیوں کو سامنے لانے کے خواہشمند رہے ہیں۔ جدید سائنس آج کل نیورو سائنس پر بہت تیزی سے کام کر رہی ہے۔ AIکی ترقی طبی سائنس کے تمام شعبوں میں فائدہ مند ثابت ہوئی ہے۔ مصنوعی سائنس یعنی AIنے اس نت نئی دریافتوں میں بہت مدد کی ہے۔
نیورو سائنس نے گزشتہ چند دہائیوں میں نہایت فیصلہ کن ترقی کی ہے۔ جس میں سے چند قابل ذکر کارنامے یہ ہیں۔ دماغ کی نقشہ سازی کی تکنیکوں جیسے ایم آر آئی اور ڈفیوژن ٹینسر امیجنگ نے دماغ کے ڈھانچے اور رابطوں کے مزید تفصیلی نقشے فراہم کئے ہیں۔ جس سے دماغ کے مختلف حصے آپس میں کیسے رابطے میں رہتے ہیں۔ ان معلومات کا پتہ چلتا ہے۔
ایلون مسک کا دماغ میں نیورالنک داخل کرنا ایک اور اہم آزمائش اور تجربہ ہے۔ اس کے نتائج کا مطالعہ ہونا ابھی باقی ہے اور اس کے ساتھ ہی کئی کمپنیوں نے دماغی امپلانٹس شروع کر دئیے ہیں۔ یہ مہارت اس سطح پر پہنچ گئی ہے کہ ہم اب جین کے نقائص کی نشاندہی کر سکتے ہیں جو اعصابی مسائل کا باعث بنتے ہیں۔ دماغ کے بارے میں ہماری جدید تفہیم پچھلی صدی کے دوران تیار ہوئی تھی۔ دماغ کے 47محدود حصوں سے جو 1909میں جانے گے سے لے کر ہمارے موجودہ انسانی دماغ کے نقشے تک جس میں صرف پرانتستا کے ہی 98حصے شامل ہیں۔
2023 کے وسط میں یونیورسٹی آف ٹیکساس نے پوری دنیا کو بتایا کہ ہٹ لیب میں ایک مطالعہ کیا گیا ہے اور پہلی بار بیرونی دنیا کے ساتھ بات چیت کرنے سے قاصر لوگوں کے خیالات اور تاثرات کا مسلسل قدرتی زبان میں ترجمہ کیا گیا۔ مصنوعی ذہانت (AI)اور دماغی امیجنگ ٹیکنالوجی کا مجموعہ۔ خیالات کا ترجمہ کرنے کے لیے یہ قریب ترین سائنس ہے یا میں اسے دوسروں کے ذہنوں کو پڑھنے کے طور پر ایک بہتر جملہ کا نام دے سکتا ہوں، حالانکہ پچھلی دہائیوں میں نیورو امیجنگ نے غیر ذمہ دار اور کم سے کم شعور والے مریضوں کو اپنے دماغ سے کمپیوٹر کرسر کو کنٹرول کرنے کے قابل بنایا ہے۔
تحقیق کی شریک قیادت کرنے والے الیگزینڈر ہتھ نے نیویارک ٹائمز کو بتایا: یہ صرف زبان کا محرک نہیں ہے۔ ہم معنی حاصل کر رہے ہیں، جو کچھ ہو رہا ہے اس کے خیال کے بارے میں کچھ اور حقیقت جو ممکن ہے وہ بہت دلچسپ ہے۔
انہوں نے اے آئی اور دماغی اسکیننگ ٹیکنالوجی کو ملایا اور ایک غیر حملہ آور دماغی ڈیکوڈر بنایا ہے جو ان لوگوں کے درمیان مسلسل فطری زبان کو دوبارہ تشکیل دینے کے قابل تھا، جو دوسری صورت میں بیرونی دنیا کے ساتھ بات چیت کرنے سے قاصر تھے۔ اس سے بہت ساری تحقیقات میں مدد مل سکتی ہے۔ اس طرح کی ٹیکنالوجی کی ترقی اور دماغ کے کنٹرول والی موٹر پروسٹیٹکس کی متوازی ترقی، جس نے مریضوں کو کچھ نئی نقل و حرکت حاصل کرنے کے قابل بنایا ہے۔ میری رائے میں بہت زیادہ امکانات ہیں اور یہ ان لوگوں کے لیے امید افزا ہے جو اعصابی بیماریوں میں مبتلا ہیں۔ جن میں لاک ان سنڈروم اور کواڈریپلجیا شامل ہیں۔
مستقبل میں جدید نیورو سائنس کی یہ اصطلاحات وسیع تر عوامی ایپلی کیشنز کا باعث بن سکتا ہے، جیسے کہ فٹ بٹ اسٹائلز اور دماغ سے قابو ہونے والے اسمارٹ فونز، ایلون مسک کے نیورالنک کی طرح، اس نے بتایا تھا کہ نیورالنک کی پہلی پروڈکٹ ٹیلی پیتھی ایک دن لوگوں کو اجازت دے گی۔ کہ وہ صرف سوچ کر اپنے فون یا کمپیوٹر کو کنٹرول کرنے کے قابل ہو جائیں گے۔
دماغ کو پڑھنے والی دماغی اسکیننگ ٹیکنالوجی حیرت انگیز ہے ۔ لیکن اخلاقی خدشات بھی لاحق ہیں۔ دماغی اسکیننگ ٹیکنالوجی سے رازداری اور شناخت کو خطرات کا سامنا ہوگا۔ فکر کی آزادی اور ہیرا پھیری کے بارے میں بھی سوالات جنم لیں گے۔
اگرچہ اس ٹیکنالوجی سے صحت کی دیکھ بھال اور مواصلات میں طاقتور فوائد موجود ہیں ۔ لیکن پھر بھی ہمیں احتیاط سے چلنا ہو گا۔ کھلی بات چیت، مضبوط اخلاقیات، اور قانونی تحفظات کلیدی ہیں۔ یہ سائنس فائی نہیں ہے، یہ مستقبل کی دستک ہے۔ آئیے ترقی اور اپنی انسانیت دونوں کو ترجیح دیتے ہوئے سائنس کا دروازہ دانشمندی سے کھولیں۔
مجھے امید ہے کہ ہمیں جینر، پاسچر، اور فلیمنگ جیسے قابل سائنس دان اس اہم شعبے میں کام کر نے کے لئے میسر ہوں گے۔ جو اس شعبے اور انسانی فلاح و بہبود کے لئے کام کر سکیں ۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button