تازہ ترینخبریںٹیکنالوجی

جو دُنیا نہ کرسکی وہ غزہ کے عوام کے لیے ایک مصری خاتون نے کر دکھایا

ایک مصری مصنفہ نے غزہ کی پٹی کے اندر ہزاروں فلسطینیوں کو پٹی کے باہر سے انٹرنیٹ سروس فراہم کرنے میں کامیابی حاصل کی، جب اسرائیلی حکام نے مقبوضہ علاقوں کے اندر ہونے والی خلاف ورزیوں کی نشریات، اشاعت یا ترسیل کو روکنے کے لیے جان بوجھ کر سروس منقطع کر دی تھی۔

مصنفہ میرنا الھلباوی نے اس شعبے میں انٹرنیٹ فراہم کرنے کے لیے قائم کیے گئے اقدام کی تفصیلات کا انکشاف کیا۔ اس نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا کہ "دوسروں کے ساتھ بات چیت کرنا ایک موروثی انسانی حق ہے۔ جیسا کہ خوراک اور ادویات بنیادی حق ہے۔ جیسے ہی ہمیں اسرائیلی حکام کے غزہ کی پٹی میں قتل عام پر عمل درآمد کو آسان بنانے کے لیے انٹرنیٹ سروس منقطع کرنے کے فیصلے کا علم ہوا اور خلاف ورزیوں پر ہم نے ایک متبادل حل کا سہارا لینے کا فیصلہ کیا جو فلسطینیوں کو خدمات فراہم کرتا ہے تاکہ ہم ان کے ساتھ بات چیت کر سکیں اور جان سکیں کہ غزہ کے اندر کیا ہو رہا ہے‘‘۔

انہوں نے مزید کہا کہ اس اقدام کا بنیادی مقصد غزہ کی پٹی کے لاکھوں باشندوں کو ایک دوسرے، ہسپتالوں، میڈیا اور بیرونی دنیا سے رابطہ قائم کرنےکے قابل بنانا تھا۔

انہوں نے کہا کہ مواصلاتی رابطوں کو منقطع کرنے کی پالیسی کا مقصد قتل عام کو چھپانا اور انہیں دنیا کو دکھانے سے روکنا تھا۔ اسی لیے خیال یہ تھا کہ فلسطینی شہریوں کو الیکٹرانک چپس فراہم کر کے انٹرنیٹ سروس فراہم کی جائے۔

تاکہ غزہ کی پٹی کے اندر خاندانوں، افراد رپورٹرز اور میڈیا کے نمائندے اپنے کام کی جگہوں سے بات چیت کر سکیں، اور طبی ٹیمیں بھی اپنے مریضوں کے ساتھ بات چیت کر سکیں اور غزہ میں ہسپتالوں اور طبی شعبے کے اندر حالات کی حقیقت سے آگاہ کر سکیں۔

مصری مصنفہ نے تمام ممالک سے سلائیڈز فراہم کرنے کا سہارا لیا اور پلیٹ فارمز اور ذرائع ابلاغ کے ذریعے اپنے اقدام اور خیال کا اعلان کیا۔ اسے دنیا کے تمام شہریوں کی دلچسپی، حوصلہ افزائی اور یہاں تک کہ فراخدلی سے عطیہ دیا گیا اور اس کوملنے والے تعاون کا سلسلہ 94 ممالک تک پہنچ گیا۔ اس اقدام میں رضاکاروں کی ایک ٹیم نے شمولیت اختیار کی جو سلائیڈز کو فعال کر رہے تھے اور انہیں غزہ کے لوگوں تک ان کے فون کے ذریعے پہنچا رہے تھے۔ وہ پہلے ہی موقعے پر دو لاکھ فلسطینیوں کو ٹیلی کمیونیکیشن اور انٹرنیٹ خدمات فراہم کرنے میں کامیاب ہو چکی ہے۔

الھلباوی کا کہنا ہے کہ چپس کی خریداری کے لیے عطیات 1.3 ملین ڈالر تک پہنچ گئے اور عطیہ دہندگان نے کئی یورپی، امریکی اور ایشیائی ممالک سے فوری رسپانس کوڈز بھیجے۔ انہیں فعال کر کے فلسطینیوں میں تقسیم کر دیا گیا

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button