تازہ ترینخبریںپاکستان سے

پاکستان میں ہر سال ساڑھے 5 لاکھ سے زائد بچوں کو زیادتی کا نشانہ بنائے جانے کا انکشاف

ماہرین امراض اطفال نے انکشاف کیا ہے کہ پاکستان میں ہر سال 5 لاکھ 50 ہزار بچے جنسی زیادتی کا نشانہ بنتے ہیں لیکن صرف چند سو کیسز ہی منظر عام پر آ پاتے ہیں۔

زیادتی کا نشانہ بننے والوں میں لڑکیاں اور لڑکے دونوں شامل ہیں، میڈیا پر آنے والے بچوں کے ساتھ جنسی زیادتی کے واقعات چھوٹا سا حصہ ہیں، حقائق اس سے کہیں زیادہ خوفناک ہیں، اس موضوع پر بات کرنا معیوب سمجھا جاتا ہے، قوانین موجود ہیں لیکن عملدرآمد نہیں۔

زیادہ تر بچے اپنے گھر پر ہی جنسی زیادتی کا شکارہوتے ہیں، گھروں سے بھاگنے والے بچوں کا باہر کی دنیا میں استحصال کیا جاتا ہے۔

پاکستان میں ہر 6 میں سے ایک بچے کی کم عمری میں شادی کردی جاتی ہے، 46 لاکھ بچیوں کی شادی 15 سال سے کم عمر اورایک کروڑ 90 لاکھ بچوں اور بچیوں کی شادی 18 سال سے کم عمر میں ہوجاتی ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button