Columnعبدالرشید مرزا

سیلاب کے نقصانات اور اقدامات ۔۔ عبدالرشید مرزا

عبدالرشید مرزا

(گذشتہ سے پیوستہ)
لوگوں کی بڑی تعداد میں نقل مکانی ہوگی، بہت سے لوگ بے گھر اور بے روزگار ہوسکتے ہیں، لہٰذا، حکومت کو تھوڑا سا زیادہ خرچ کرنا پڑے گا، ملک انفراسٹرکچر کو صاف اور تبدیل کرنے کیلئے خوراک اور سامان کی فراہمی کیلئے بیرونی ممالک سے مدد لے سکتا ہے۔سیلابی پانی اس وقت خطرناک ہو سکتا ہے جب ان میں زیادہ گہرائی اور رفتار ہو، سیلابی پانی میں سے چلنا یا گاڑی چلانا بہت خطرناک ہوتا ہے جب وہ چھ انچ کا پانی ہو جو غیر مستحکم قدموں کا سبب بن سکتا ہے، اور دو فٹ پانی گاڑی کو بہا سکتا ہے۔ سیلاب میں زیادہ لوگ اپنی گاڑیوں میں ڈوبتے ہیں، سیلاب اور طوفان بھی بجلی کی تاریں گرا سکتے ہیں اور بجلی کے کرنٹ پانی میں سے گزر سکتے ہیں۔ سیلابی پانی میں کچا سیوریج، تیل، یا کیمیائی فضلہ لے جا سکتا ہے، اگر کنوئیں بھر جائیں تو کنواں آلودہ ہو جائے گا۔ ندیاں، خاص طور پر بڑی بڑی تباہی کا باعث بنتی ہیں، جب وہ سیلاب کرتے ہیں، تو معاش کو تباہ کر دیتے ہیں، معاشی نقصان پہنچاتے ہیں اور لوگوں کو مار دیتے ہیں۔سیلاب کے فوری برے اثرات کے باوجود اس کے بہت سے فوائد ہیں، کسانوں اور زرعی شعبے سے وابستہ لوگوں کیلئے، یہ مٹی کو غذائی اجزاء فراہم کرکے طویل مدت میں ان کی مدد کرتا ہے، جس کی کمی تھی، یہ زمین کو زیادہ زرخیز بناتی ہے اور زرعی پیداوار میں اضافہ کرتی ہے۔دریاؤں اور جھیلوں میں غذائی اجزاء بھی شامل کیے جاتے ہیں، وہ مچھلیوں کی صحت کو بہتر بناتے ہیں۔ سیلاب سے ماحولیاتی نظام بہتر ہو سکتا ہے، سیلابی میدان نسبتاً ہموار زمینیں ہیں جو پانی کے جسم سے ملحق ہوتی ہیں جیسے کہ ندی یا ندی جو چینل کی گنجائش سے زیادہ ہونے پر سیلاب میں ڈوب جاتی ہے (پانی سے ڈوب جاتی ہے) اور دریا کے آس پاس کے سیلابی میدان کو زرعی زمین کے طور پر استعمال کیا جاتا ہے۔ سیلابی میدان متحرک قدرتی نظام ہیں، وقتاً فوقتاً آنے والے سیلاب کے قدرتی عمل، کٹاؤ اور جمع ہونے کے ساتھ، یہ وقت کے ساتھ ساتھ ان علاقوں میں مٹی، پودوں اور طبعی خصوصیات میں تبدیلی لاتے ہیں۔ سیلابی میدان ماحولیاتی نظام اور کمیونٹی کو وسیع پیمانے پر فوائد فراہم کرتے ہیں، سیلاب کا ذخیرہ اور کٹاؤ پر قابو پانے سے سیلاب کے پانی کو پھیلانے اور عارضی ذخیرہ کرنے کیلئے ندیوں اور ندیوں کے ساتھ ایک وسیع علاقہ فراہم ہوتا ہے، جس سے سیلاب کی چوٹیوں اور کٹاؤ کے امکانات کم ہوتے ہیں۔
سیلاب زمینی پانی کے ریچارج کی پیشکش کرتا ہے، یہ مختلف قسم کی مچھلیوں اور جنگلی حیات کے ساتھ رہائش فراہم کرتا ہے جس میں نایاب اور خطرے سے دوچار انواع شامل ہیں، یہ حیاتیاتی پیداواری صلاحیت فراہم کرتی ہے، وہ زرخیز مٹی فراہم کرتی ہے جس میں پودوں کی نشوونما اور تنوع کی اعلیٰ شرح، زیادہ زرعی فصلیں اور صحت مند جنگلات ہوتے ہیں۔اب میں تزکرہ کروں گا سیلاب کے خطرہ کو کم کرنے کیلئے کونسے اقدامات کرنے ہوں گے کیونکہ پاکستان میں سیلاب اگلے سالوں میں بھی متوقع ہیں۔ سیلاب کے خطرے کے انتظام کی حکمت عملیوں کی پانچ اقسام ہیں۔ سیلاب کے خطرے سے بچاؤ کی روک تھام کے اقدامات کا مقصد لوگوں؍جائیداد وغیرہ کی نمائش کو کم کر کے سیلاب کے نتائج کو کم کرنا ہے، ایسے طریقوں کے ذریعے جو سیلاب کے خطرے سے دوچار علاقوں میں ترقی کو روکتے ہیں یا اس کی حوصلہ شکنی کرتے ہیں (مثلاً، مقامی منصوبہ بندی، ریئل الاٹمنٹ پالیسی، قبضے کی پالیسی وغیرہ)۔ حکمت عملی کی بنیادی توجہ صرف سیلاب زدہ علاقوں سے باہر تعمیر کرکے لوگوں کو پانی سے دور رکھنے پر ہے۔ سیلاب سے بچاؤ سیلاب سے بچاؤ کے اقدامات کا مقصد بنیادی ڈھانچے کے کاموں کے ذریعے سیلابی علاقوں کے امکان کو کم کرنا ہے، جیسے کہ ڈیموں اور ویرز، جنہیں زیادہ ترفلڈ ڈیفنس یاساختی اقدامات کہا جاتا ہے پانی کی ترسیل کیلئے موجودہ چینلز (قدرتی یا انسان ساختہ) پانی کیلئے جگہ بڑھانے کیلئے (بعد میں یا عمودی طور پر) یا اس علاقے سے باہر پانی کو برقرار رکھنے کیلئے نئی جگہوں کی تخلیق جس کا دفاع کیا جائے۔ مختصراً، توجہ پانی کو لوگوں سے دور رکھنے پر ہے۔ سیلاب کے خطرے میں تخفیف سیلاب کے خطرے کی تخفیف کمزور علاقے کے اندر اقدامات کے ذریعے سیلاب کے نتائج کو کم کرنے پر مرکوز ہے۔ سیلاب زدہ علاقے کے سمارٹ ڈیزائن کے ذریعے نتائج کو کم کیا جا سکتا ہے۔
اقدامات میں مقامی ترتیب، محفوظ علاقے کے اندر پانی کی برقراری، یا (قواعد) فلڈ پروف عمارت شامل ہیں۔ اس طرح سیلاب کے خطرے کی تخفیف میں سیلاب سے بچنے کیلئے تمام اقدامات کے ساتھ ساتھ سیلاب زدہ علاقے میں یا اس کے نیچے پانی کو برقرار رکھنے یا ذخیرہ کرنے کے اقدامات شامل ہیں۔ سیلاب کے نتائج کو سیلاب کے واقعے کی تیاری کر کے بھی کم کیا جا سکتا ہے۔ اقدامات میں سیلاب کی وارننگ سسٹم تیار کرنا، ڈیزاسٹر مینجمنٹ اور انخلاء کے منصوبے تیار کرنا اور سیلاب آنے پر اس کا انتظام کرنا شامل ہیں۔ افسوس کی بات یہ ہے پاکستان میں محکمہ موسمیات نے مئی میں اس سیلاب کی وارننگ دی تھی جس کی کوئی تیاری نہیں کی گئی، سیلاب آنے کے بعد خیموں کے ٹینڈر دیئے گئے ۔ سیلاب کی بحالی یہ حکمت عملی سیلاب کے واقعے کے بعد اچھی اور تیز بحالی میں سہولت فراہم کرتی ہے۔ پاکستان میں اموات کی بڑی وجہ دریاؤں کے سوکھ جانے سے لوگوں نے دریا کے اندر اور ارد گرد گھر تعمیر کئے ہمارے انتظامی اداروں نے کوئی کارروائی نہیں کی جس وجہ سے اموات اور نقصانات میں اضافہ ہوا۔ سیلاب کے نقصانات کو کم کرنے کیلئے ڈیموں کی تعمیر کے ساتھ ندی، نالے، نہروں کی صفائی اور نئی نہروں کی تعمیر ہے جس سے سیلاب کا رخ تبدیل کرکے ان علاقوں کی طرف منتقل کرنا ہے جہاں نقصانات ہونے کے مواقع کم ہوتے ہیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button