Welcome to JEHANPAKISTAN   Click to listen highlighted text! Welcome to JEHANPAKISTAN
ColumnMonas Ahmar

کراچی کیلئے ہنگامی پلان کی ضرورت .. پروفیسر ڈاکٹر مونس احمر

پروفیسر ڈاکٹر مونس احمر

 

‎ جولائی اور اگست 2020 کے درمیان، کراچی میں شدید بارش ہوئی جس کے نتیجے میں شہر میں سیلاب آ گیا۔ اگست 2020 میں ہونے والی شدید بارشوں نے سابق وفاقی حکومت کو کام کرنے پر مجبور کرتے ہوئے 53 سالہ ریکارڈ توڑ دیا۔ بارش کے بعد سابق وزیر اعظم عمران خان نے کراچی کا دورہ کیا اور شہر کے طوفانی نکاسی آب کے نظام کو بحال کرنے، نالے صاف کرنے، غیر قانونی بستیوں کو ہٹانے اورنالوں پر قائم تجاوزات کو بہتر بنانے کے لیے 1.1 ٹریلین روپے کے کراچی ٹرانسفارمیشن پلان (KTP) کا اعلان کیا۔ سڑکوں کی تعمیر نو کے ذریعے شہر کا بنیادی ڈھانچہ۔ اس منصوبے کا مقصد شدید بارشوں کے بعد مستقبل میں ہونے والی تباہی کو روکنا تھا۔ KTP کے تحت قریباً 100 منصوبوں کی منصوبہ بندی کی گئی تھی، جن میں کراچی بلک واٹر سپلائی سکیم (K-4)، سرکلر ریلوے، اور کچرے کو ٹھکانے لگانے کا نظام شامل تھا۔ کراچی والوں کے لیے بدقسمتی سے یہ منصوبہ کبھی بھی عملی جامہ نہیں پہن سکا۔ مون سون کے موسم کے آغاز کے ساتھ ہی شہر میں 600 ملی میٹر سے زیادہ بارش ہو چکی ہے اور کئی سڑکیں زیر آب آ چکی ہیں۔پاکستان کے محکمہ موسمیات (پی ایم ڈی) کی کراچی اور ملک بھر میں آئندہ مون سون بارشوں کی پیش گوئیاں تشویشناک ہیں۔ اس سے یہ سوال اٹھتا ہے کہ کیا کراچی میں طوفانی بارشوں سے نمٹنے کے لیے کوئی موثر کرائسز مینجمنٹ میکنزم موجود ہے؟ طویل خشک سالی کے بعد کراچی اور پاکستان کے دیگر حصوں میں اب مون سون کی کافی مقدار میں بارشیں ہو رہی ہیں۔ تاہم، حکومت کا اس موقع سے فائدہ اٹھانے اور نہروں، جھیلوں، تالابوں، ندیوں اور ڈیموں کو بھر کر بارش کے پانی کو مستقبل میں پانی کی کمی سے نمٹنے کے لیے استعمال کرنے کا منصوبہ ابھی تک واضح نہیں ہے۔ پچھلے 60 سالوں کے اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ کراچی کو 1967 میں ریکارڈ زیادہ بارشوں کا سامنا کرنا پڑا جو 2020 میں ٹوٹ گیا۔ 1967 میں کراچی کی آبادی مشکل سے 15 لاکھ تھی لیکن 2022 میں 30 ملین سے زیادہ لوگ میگا سٹی میں رہتے ہیں۔اگر 2020 کا ریکارڈ 2022 میں ٹوٹ گیا تو کوئی سوچ بھی نہیں سکتا کہ یہ کتنا تباہ کن ہوگا۔ موسمیاتی تبدیلی کے اثرات دنیا بھر میں پہلے ہی ظاہر ہو چکے ہیں۔ یہ کراچی انتظامیہ کی ذمہ داری تھی کہ وہ قبل از وقت وارننگ کو سنجیدگی سے لے اور ہنگامی پلان تشکیل دے۔ اب کراچی والے تیزی سے خوفزدہ ہو گئے ہیں کیونکہ مون سون کا سیزن ابھی ختم ہونا ہے اور اس سے شہر کے ناقص انفراسٹرکچر کو نقصان پہنچ سکتا ہے۔آنے والے ہفتوں میں کراچی کے لوگ نکاسی آب کے نظام کی تباہی، نالہ بہہ جانے اور انسانی ہلاکتوں کا مشاہدہ کر سکتے ہیں۔ مارچ 2015 میں

سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے سائنس و ٹیکنالوجی نے سابق وزیر اعظم نواز شریف کو ایک خط جاری کیا جس میں سندھ اور بلوچستان کے ساحلی علاقوں میں سمندری مداخلت کی سنگینی کا خدشہ ظاہر کیا گیا، جس کے نتیجے میں بدین اور ٹھٹھہ ڈوب سکتے ہیں۔ 30 سال، اس کے بعد کراچی کا نمبر ہو گا ۔ خط میں زور دیا گیا کہ اگر اس معاملے پر فوری توجہ نہ دی گئی تو 2060 تک کراچی ڈوب سکتا ہے۔ خط میں وفاقی حکومت کو متعدد سفارشات دی گئیں۔ اس نے نیشنل اور صوبائی ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی پر بھی زور دیا کہ وہ صورتحال سے نمٹنے کے لیے احتیاطی تدابیر اختیار کریں۔اس کے باوجود حکام غفلت برت رہے ہیں اور اس بات کا امکان بڑھ گیا ہے کہ کراچی کو جلد ہی دوہرے خطرے کا سامنا کرنا پڑے گا۔

شدید بارشیں بڑے پیمانے پر تباہی کا باعث بنیں گی اور اگر گلوبل وارمنگ اور موسمیاتی تبدیلیوں کی وجہ سے سطح سمندر میں مزید اضافہ ہوا تو شہر ڈوب سکتا ہے۔ کئی ایشیائی شہروں میں موسلادھار بارشیں ہوتی ہیں یعنی کولمبو، ممبئی، سنگاپور اور کوالالمپور۔ تاہم ان میں سے کوئی بھی شہر پانی سے ڈوبا نہیں کیونکہ ان سب میں نکاسی کا موثر نظام موجود ہے۔ کراچی میں بارش کی صورتحال کافی عرصے سے موجود ہے اور اس سے اس وقت تک نمٹا نہیں جا سکتا جب تک کہ شہر میں موثر انتظامیہ نہ ہو۔ ناقدین کے مطابق کراچی وفاق کا 55 فیصد اور صوبائی ریونیو میں 80 فیصد سے زیادہ حصہ ڈالتا ہے، لیکن خود کو شہر کا نگہبان سمجھنے والوں کی جانب سے بے حسی اور ملکیت کا دعویٰ افسوسناک ہے۔ صوبائی اور وفاقی حکومتوں کو شہر کی ملکیت لینا ہو گی۔کراچی کے بارشوں کے بحران سے نمٹنا ناممکن نہیں لیکن یہ ایک مشکل کام ہوگا کیونکہ یہاں ملکیت، کرپشن کے خاتمے، منصوبہ بندی، وسائل کے استعمال اور سائنسی انجینئرنگ ٹولز کے استعمال کی ضرورت ہے۔ اس کے علاوہ، غیر قانونی بستیوں کا خاتمہ، نالوں کی دیکھ بھال اور طوفانی نکاسی کے نظام کے کام کرنے کو یقینی بنانا اتنا مشکل نہیں جتنا کہ چند نا اہل اور بدعنوان اہلکاروں نے کیا ہے۔

کراچی میں مون سون کی بارشوں سے پیدا ہونے والے بحران کے حل کے لیے تین اقدامات کرنے کی ضرورت ہے۔سب سے پہلے،ایک فعال، موثر، جوابدہ اور بصیرت والا مقامی حکومتی نظام قائم کیا جانا چاہیے جس کا وسائل پر کنٹرول ہو اور ایک مناسب انتخابی مینڈیٹ ہو۔ گزشتہ 75 سالوں سے کراچی میں فعال اور پرعزم قیادت کا فقدان ہے، نیز میئر کو بااختیار ہونا چاہیے اور کراچی واٹر سیوریج بورڈ (KWSB) اور دیگر بلدیاتی اداروں کا کنٹرول ۱سونپناچاہیے۔ دوسرامیئر اور لوکل گورنمنٹ کے تحت ہونے والے منصوبوں کی نگرانی کی جائے تاکہ عوام کا پیسہ ضائع نہ ہو۔ کراچی کے سابق میئر نے شکایت کی کہ ان کا شہر پر بہت کم اختیار ہے۔ اس لیے میئر اور ان کی انتظامیہ کو اختیار ہونا چاہیے اور انہیں پیشہ ورانہ ہونا چاہیے اور اپنے فرائض میں تمام سیاسی تعصبات سے گریز کرنا چاہیے۔ عوام کو اپنے منتخب نمائندوں پر اعتماد کرنا چاہیے۔ تیسرا، مقامی حکومت کو مناسب وسائل فراہم کیے جائیں تاکہ وہ آسانی سے چل سکے اور سالڈ ویسٹ مینجمنٹ جیسے کوڑے کو ٹھکانے لگانے، کوڑے سے بجلی کی پیداوار، شمسی توانائی کے منصوبے، کاٹیج انڈسٹری اور زیر زمین میٹرو سسٹم جیسے میگا پراجیکٹس کو سنبھال کر مکمل کر سکے۔ شہری نقل و حمل کو بحال کیا جانا چاہیے، اور بارش کے پانی کو چھوٹے ڈیم بنا کر محفوظ کیا جانا چاہیے جیسا کہ بحریہ ٹاؤن نے اپنے احاطے میں کیا ہے۔ بدقسمتی سے، ایک بار مون سون کا موسم ختم ہو جائے گا اور بارشوں کی تباہ کاریاں کم ہو جائیں گی، تباہی اور بربادی کی پوری قسط کو بھلا دیا جائے گا اور شہر کو مستقبل کی آفات سے بچانے کے لیے کوئی اقدامات نہیں کیے جائیں گے۔ ہر سال مون سون کے موسم میں ایک شور مچ جاتا ہے اور حکام اپنی معمول کی الزام تراشی کا سہارا لیتے ہیں۔ تمام سیاسی اداکار ایک دوسرے کو مجرمانہ غفلت کا الزام لگاتے ہیں لیکن کوئی بھی ذمہ داری قبول نہیں کرتا۔ حکام کو اس بات کا ادراک ہونا چاہیے کہ کراچی میں بارشوں سے ہونے والی زبردست تباہی سے نمٹنے کا صرف ایک راستہ ھے اور وہ دیانتداری کے ساتھ مذکورہ بالا اقدامات پر عمل کرنے اور کارکردگی دکھانے کے اور کوئی حل نہیں ہے۔

(پروفیسر ڈاکٹر مونس احمرکی انگریزی تحریر کا اُردو ترجمہ بین الاقوامی یونیورسٹی جاپان کے ڈاکٹر ملک اللہ یار خان نے کیا ہے۔)

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button
Click to listen highlighted text!