Welcome to JEHANPAKISTAN   Click to listen highlighted text! Welcome to JEHANPAKISTAN
ColumnMonas Ahmar

‎نیٹو اور G-7 دنیا کو پولرائز کر رہے ہیں .. پروفیسر ڈاکٹر مونس احمر

پروفیسر ڈاکٹر مونس احمر
اُنتیس ‎جون کو، نیٹو نے میڈرڈ میں اپنا‎تاریخی سربراہی اجلاس منعقد کیا جس میں یورپ کے دو غیر جانبدار ممالک فن لینڈ اور سویڈن کو بحر اوقیانوس کے اتحاد میں شامل ہونے کی دعوت دی گئی۔ اس سے قبل 28 جون کو G-7 نے جرمنی میں اپنی تین روزہ سربراہی کانفرنس کا اہتمام کیا جس میں یوکرین کو انسانی اور معاشی امداد کی یقین دہانی کرائی گئی جبکہ دیگر معاملات جیسے ماحولیاتی تبدیلی، خوراک اور توانائی کی حفاظت، صحت، صنفی حقوق اور انسدادِ دہشت گردی پر بھی بات ہوئی۔‎ جون کے مہینے میں ہونے والی بیک ٹو بیک سربراہی کانفرنسز یوکرین پر حملے کے بعد روس پر نہ صرف زیادہ سے زیادہ دباؤ ڈالنے بلکہ ایشیا پیسفک خطے میں چین کے بڑھتے ہوئے اثر و رسوخ سے نمٹنے کے لیے امریکی زیر قیادت مغربی بلاک کی بڑھتی ہوئی جارحیت کی عکاسی کرتی ہیں۔ اسی طرح، روس کو نیٹو اورG-7 کی شکل میں دو طرفہ خطرے کا سامنا ہے، جب کہ ایسا لگتا ہے کہ دونوں اتحاد اپنا مینڈیٹ ٹرانس اٹلانٹک سے لے کر ایشیا پیسفک خطے تک بڑھا رہے ہیں۔ کیا اس کا مطلب یہ ہے کہ نیٹو اور G-7 ‎تصادم کی راہ پر گامزن ہیں؟ ‎کیا مغرب کی روس اور چین مخالف بیان بازی کے نتیجے میں مسلح تنازعات اورپولرائزیشن کو فروغ ملے گا؟
‎روس یوکرین جنگ کے نتیجے میں پیدا ہونے والے موجودہ بحران پر کیسے قابو پایا جائے گا؟ ‎یہ وہ سوالات ہیں جو ان متعلقہ حلقوں کی طرف سے اٹھائے جا رہے ہیں جو نیٹو کی توسیع اور یوکرینی جنگ کے بڑھنے کے بعد عالمی بدامنی کی توقع کر رہے ہیں۔ نیٹو اور جی سیون اجلاسوں میں سخت بیانات جاری کر کے روس کو مشتعل کرنا پہلے سے پولرائزڈ ورلڈ آرڈر کو مزید پیچیدہ کر دے گا۔‎ مثال کے طور پر امریکی صدر جو بائیڈن نے کہا کہ پوتن یورپ کی ‘فن لینڈائزیشن کی تلاش میں تھے۔ وہ یورپ کی ‘نیٹوائزیشن حاصل کرنے جا رہا ہے اور یہ بالکل وہی ہے جو وہ نہیں چاہتا تھا، لیکن بالکل وہی جو کہ یورپ کی سلامتی کی ضمانت دینے کی ضرورت ہے۔ سہ فریقی اجلاسوں کے انعقاد کے بعد نیٹو کے سیکرٹری جنرل جینز اسٹولٹن برگ نے یہ کہہ کر واضح کیاکہ ہم ایک نئے اسٹریٹجک تصور پر متفق ہوں گے، جو کہ مستقبل میں نیٹو کے لیے بلیو پرنٹ ہے۔ نیٹو کے نام نہاد اسٹریٹجک تصور پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے، روسی ریاست ڈوما کی بین الاقوامی امور کی کمیٹی کے چیئرمین لیونیڈ سلٹسکی نے کہا ہے کہ نیٹو کا تزویراتی تصور ایک اندھی گلی ہے۔‎میڈرڈ سربراہی اجلاس کے فیصلے براعظم اور دیگر جگہوں پر سلامتی کو خطرے میں ڈالتے ہیں۔ مزید برآں، 30 جون کو نیٹو سربراہی اجلاس کے دوران، روس کے وزیر خارجہ سرگئی لاوروف نے کہاکہ وہ(نیٹو) تمام ریاستوں سے ان کی مرضی کی غیر مشروط اطاعت کی توقع رکھتے ہیں، جو ان کے انا پرست مفادات کی عکاسی کرتا ہے۔ بنیادی طور پر، امریکی مفادات۔ مغربی اتحاد اور روس کے درمیان نفسیاتی جنگ کی شدت کے ساتھ، ایسا
لگتا ہے کہ دنیا مہلک اثرات کے ساتھ سرد جنگ کے ایک اور خطرناک مرحلے میں ڈوب جائے گی۔ دی اکانومسٹ کے جولائی کے شمارے میں ‘میڈرڈ میں نیٹو کی میٹنگ کے عنوان سے ایک مضمون میں کہا گیا ہے کہ روس کے یوکرین پر حملے نے یورپی سلامتی کو تہہ و بالا کر دیا ہے۔ جواب میں، نیٹو بڑا اور بہتر ہوتا جا رہا ہے، جس کو مسٹر اسٹولٹن برگ نے سرد جنگ کے بعد سے ہماری اجتماعی ڈیٹرنس اور دفاع کی سب سے بڑی تبدیلی کے طور پر اپنایا۔اسٹریٹجک تصور کے اجراء پر، دی اکانومسٹ نے دلیل دی کہ یہ نیٹو کے لیے ایک مختصر ورژن کا بیان تھا اور ایک دہائی سے زائد عرصے میں اس اتحاد کی پہلی دستاویز ہے۔ اس نے حیرت انگیز طور پر خبردار کیا کہ روس اتحادیوں کے لیے سب سے اہم اور براہ راست خطرہ ہے اور حملے کے امکان کو خارج نہیں کیا جا سکتا۔
روس اور چین ایک اسٹریٹجک شراکت داری کو فروغ دے رہے ہیں اور طاقت کے استعمال والے قوانین پر مبنی بین الاقوامی نظام کے خلاف آمرانہ دباؤ میں سب سے آگے ہیں۔پہلی جنگ عظیم کے خاتمے کے ایک صدی بعد ایسا لگتا ہے کہ متضاد مفادات کے ساتھ اتحاد کا ایک اور مرحلہ شروع ہونے والا ہے جس میں ایک طرف امریکی قیادت میں نیٹو، G-7 اور Quad پر مشتمل اتحاد جبکہ دوسری طرف چین۔روسواسٹریٹجک پارٹنر شپ آنے والے دنوں میں چیزوں کی شکل کا تعین کرے گی لیکن نیٹو کی نو کنٹینمنٹ پالیسی عالمی نظام کو کس طرح متاثر کرے گی اور کیا چین روس کے ساتھ مل کر نیٹو، G-7 اور Quad کی قیادت میں بڑھتے ہوئے گھیراؤ سے نمٹنے کے لیے اسٹریٹجک اتحاد بنائے گا، یہ تمام اہم سوالات ہیں جن پر غور کرنا چاہیے۔
750 بلین ڈالر کے دفاعی بجٹ کے ساتھ، امریکہ اپنی کمزور معیشت اور 20 ٹریلین ڈالر کے قرضے کے باوجود اپنے روس اور چین مخالف اسٹریٹجک اتحاد کے خطرناک نتائج کو ذہن میں نہیں رکھتا۔ جون کے سمٹ میں اعلان کردہ نیٹو کے اسٹریٹیجک تصور اب یورپ کی دو باقی ماندہ غیر جانبدار ریاستوں آسٹریا اور سوئٹزرلینڈ سے رابطہ کرنے کی کوشش کرے گا تاکہ بحر اوقیانوس کے اتحاد میں شامل ہو سکے تاکہ پورے یورپ کو روس کے خلاف کھڑا کیا جا سکے۔ کیا اس حکمت عملی کے مثبت نتائج برآمد ہوں گے؟ پابندیوں کا نفاذ پوتن کی قوم پرستانہ ذہنیت کو ٹھیس پہنچانے میں ناکام رہا ہے۔ پابندیاں روس کی معیشت کو شدید نقصان پہنچانے سے قاصر ہیں اور جوابی کارروائی میں ماسکو نے یورپ کو نارڈ اسٹریم 1 گیس کی سپلائی معطل کر دی ہے۔ کیا ٹرانس اٹلانٹک اتحاد اس بحران سے نمٹنے اور اس سے نمٹنے کے لیے تیار ہے؟ G-7 نے یوکرین کو 2.3 بلین ڈالر کی انسانی امداد اور29.5 بلین ڈالر کی مالی امداد کے ساتھ ساتھ آنے والے پانچ سالوں میں عالمی انفراسٹرکچر پروگرام کے لیے 600 بلین ڈالر کا اعلان کیا تاکہ یہ پیغام دیا جا سکے کہ دنیا کے امیر ترین ممالک ماسکو اور بیجنگ پر دباؤ ڈال سکتے ہیں۔ اس پس منظر میں عالمی توازن کو برقرار رکھنے کے لیے تین چیزوں پر غور کرنے کی ضرورت ہے۔ سب سے پہلے،اقوام متحدہ، بھارت ، برازیل، جنوبی افریقہ، ملائیشیا اور انڈونیشیا جیسے بااثر عالمی اداکاروں کو ٹرانس اٹلانٹک الائنس اور روس اور چین کے درمیان کشیدگی کو کم کرنے کے لیے ثالث کے طور پر کام کرنے کی ضرورت ہے۔ اس سے پہلے کہ بہت دیر ہو جائے اور دنیا ایک نئی سرد جنگ کے خطرناک مرحلے میں ڈوب جائے،
اب وقت آگیا ہے کہ نیٹو اور G-7 یورپی یونین کے ساتھ ساتھ بحر اوقیانوس کے اتحاد میں نئے اراکین کو شامل کرکے روس اور چین کو روکنے کے لیے اپنی حکمت عملی پر نظر ثانی کریں اور بیجنگ کے ون بیلٹ ون روڈ منصوبے کا مقابلہ کرنے کے لیے 600 بلین ڈالر کا عالمی انفراسٹرکچر پروگرام شروع کریں ۔ دوسرا، روس کو یوکرین سے دستبردار ہونا چاہیے کیونکہ اس پر ایک خودمختار ملک کے کچھ حصوں پر حملے اور قبضہ کرنے کا الزام ہے۔ ماسکو کے توسیع پسندانہ ڈیزائنوں نے بحراوقیانوس کے اتحاد کو یوکرین کو فوجی سپلائی میں اضافہ کرنے اور سویڈن اور فن لینڈ کو نیٹو میں شامل کرنے کا موقع فراہم کیا۔ یوکرین سے روسی انخلاء کے نتیجے میں یورپ کی صورت حال کو متنفر کر دے گا۔ تیسرا، دنیا کو خوراک، ایندھن، پانی اور ماحولیاتی بحران کا سامنا ہے۔ یہ روس، چین، جاپان، آسٹریلیا، بھارت، برازیل اور ارجنٹائن سمیت دنیا کے طاقتور ممالک کو ایک موقع فراہم کرتا ہے کہ وہ سفارت کاری کو ایک موقع فراہم کریں اور دنیا کو ایک نئی سرد جنگ سے نکالیں۔ ایسی ہی صورتحال کو روکنے میں دیر ہو چکی ہے لیکن بہت دیر نہیں ہوئی جیسے سفارت کاری کی ناکامی کی وجہ سے پہلی جنگ عظیم شروع ہوئی تھی۔
(پروفیسر ڈاکٹر مونس احمرکی انگریزی تحریر کا اُردو ترجمہ بین الاقوامی یونیورسٹی جاپان کے ڈاکٹر ملک اللہ یار خان نے کیا ہے۔)

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button
Click to listen highlighted text!