تازہ ترینجرم کہانیخبریں

لاہور میں اغوا کے بعد بازیاب ہونے والی میٹرک کی طالبہ کا سنسنی خیز انکشاف

بازیاب ہونے والی میٹرک کی طالبہ نے انکشاف کیا ہے کہ اغوا کے بعد عابد نے پاکپتن لے جا کر زبردستی نکاح کی کوشش کی، میں نے نکاح سے انکار کیا تو مجھے تشدد کا نشانہ بنایا گیا

تفصیلات کے مطابق لاہور شادباغ سے اغوا کے بعد بازیاب ہونے والی میٹرک کی طالبہ کیس میں اہم پیش رفت ہوئی ، عشاء ذوالفقار نے پولیس کو اپنا بیان ریکارڈ کروادیا۔

طالبہ نے بازیابی کے بعد پولیس کو اپنے بیان میں بتایا کہ اغوا کے بعد عابد نے پاکپتن لے جا کر زبردستی نکاح کی کوشش کی، میں نے نکاح سے انکار کیا تو مجھے تشدد کا نشانہ بنایا گیا۔

طالبہ کا کہنا تھا کہ میرے ساتھ عابد یا اس کے کسی ساتھی نے زیادتی نہیں کی، ملزم ہفتے کو اغوا کے بعد ہی مجھے قصورلے گئے تھے، جہاں ملزمان قصور پولیس کے آنے سے پہلے مجھے پاکپتن لے گئے۔

عشاء ذوالفقار نے کہا کہ ملزمان نے مجھے رات عارف والا ایک بس اڈے پر چھوڑ دیا جہاں پولیس پہنچ گئی۔

پولیس واقعے میں شامل ملزمان سے تفتیش کررہی ہے جبکہ مرکزی ملزم عابد کی باضابطہ گرفتاری ظاہر نہیں کی گئی، ملزم عابد ریکارڈ یافتہ ہے۔

پولیس کا کہنا تھا کہ بیس سالہ ملزم عابد ڈکیتی سمیت دیگرسنگین وارداتوں میں ملوث رہا ہے ، متعدد بار جیل جاچکاہے، اس کیخلاف تھانہ شادباغ میں مزید تین مقدمات درج ہیں جبکہ یہ ڈکیتی سمیت دیگر سنگین وارداتوں میں بھی ملوث رہا ہے۔

یاد رہے لاہور شاد باغ سے اغوا ہونے والی دسویں جماعت کے طالبہ کو ساہیوال سے بازیاب کرایا گیا تھا ، منگنی توڑنے پر سابقہ منگیتر نے طالبہ کواغوا کیا تھا۔

چیف جسٹس لاہورہائی کورٹ نے اغواکانوٹس لیتے ہوئے بچی کو بازیاب کرانے کا حکم دیا تھا

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button