تازہ ترینخبریںپاکستان سے

چیئرمین نیب کی زیر صدارت نیب لاہور کی کارکردگی سے متعلق جائزہ اجلاس

قومی احتساب بیورو (نیب)لاہور نے2017 سے 30اپریل 2022کے دوران نیب آرڈیننس کے سیکشن 10 کے تحت 64مجرموں کو سزا دلوائی اور ان سے اربوں روپے وصول کر کے قومی خزانہ میں جمع کرائے گئے۔ چیئرمین نیب جسٹس جاوید اقبال نے نیب ہیڈکوارٹرز میں نیب لاہور کی کارکردگی سے متعلق ایک جائزہ اجلاس کی صدارت کی جس میں 2017 سے اپریل2022 کے دوران نیب لاہور کے مقدمات میں سزا کی شرح کا جائزہ لیا گیا۔

اجلاس کے دوران ڈائریکٹر جنرل نیب لاہور نے بتایا کہ چیئرمین نیب جسٹس جاوید اقبال کی دانشمندانہ قیادت میں نیب لاہور نے جنوری 2022 سے 30اپریل 2022 تک سیکشن 10 کے تحت 4 ملزمان کو قید اور 152.56 ملین روپے جرمانہ کی سزا سنائی۔احتساب عدالت نے عثمان سعید نائب صدر این بی پی کو28جنوری 2022 کو 4 سال قید ایک ملین روپے جرمانہ،بینک فراڈکیس میں ملزمان حبیب الرحمٰن،عارف پرویز اور محبوب الحسن کو 7سال قید 11.2ملین روپے جرمانہ ، عبد الرحمٰن کو 5سال قید 88.457ملین روپے جرمانہ اور مہر محمد شفیق،محمداعظم المعروف دانیال ہرل کو 8 سال قید اور 51.06 ملین روپے جرمانہ کی سزا سنائی۔2021میں 6ملزمان کو قید اور 284.22ملین روپے جرمانہ کی سزا سنائی گئی۔

احتساب عدالت نے محمد مزمل کو 6سال قید100ملین روپے جرمانہ،ملزم منظور علی خان 5سال قید79ملین روپے جرمانہ ،محمد امجد کو5سال قید جرمانہ 79 ملین روپے جرمانہ،سجاد احمد 5سال قید جرمانہ 79 ملین روپے افتخار احمد چیمہ 10سال جرمانہ 65ملین روپے،شیخ زین العابدین کو 7سال جرمانہ 40.22ملین روپے جرمانہ کی سزا سنائی۔ 2020 میں نیب آرڈیننس کے سیکشن 10 کے تحت 13مجرموں کو سزا دلوائی۔محمد طاہر خان کے خلاف مقدمہ میں احتساب عدالت نے ان کو 21 اپریل 2020 میں سزا سنائی اور 45 ہزار پائونڈ جرمانہ کیا۔ فیصل کامران اور دیگر کے خلاف مقدمہ میں ملزمان فیصل کامران اور خرم قریشی کو عدالت نے 4 ستمبر 2020 کو 33.1 ملین روپے جرمانہ کی سزا سنائی۔

نذیر احمد خان و دیگر کے خلاف مقدمہ میں ملزمان نذیر احمد کو 28.10.2020 کو احتساب عدالت نے 5.119 ملین روپے، 7.288 ملین روپے، 24.706 ملین روپے، 23.412 ملین روپے اور 28.06 ملین روپے کی سزا سنائی گئی۔ ظہیر ناصر و دیگر کے خلاف مقدمہ میں ملزم ظہیر ناصر کو 25.11.2020 کو احتساب عدالت نے 1.5 ملین روپے، ملزم مقصود احمد کو 15 ملین روپے اور ملزم ذیشان احمد 15 ملین روپے کی سزا سنائی۔ اسد کامران و دیگر کے خلاف مقدمہ میں ملزم عدنان قیوم کو 21.12.2020 کو احتساب عدالت نے 7.2 ملین روپے جبکہ ملزم سلیمان فاروق کو 7.2 ملین روپے کی سزا سنائی۔

ڈی جی نیب لاہور نے اجلاس کو یہ بھی بتایا کہ نیب لاہور کی کاوشوں سے مختلف احتساب عدالتوں نے 2019 میں نیب آرڈیننس کی دفعہ 10 کے تحت 2 ملزمان کو سزا سنائی۔ ان کی تفصیل درج ذیل ہے۔

حافظ محمد جاوید چیمہ و دیگر کے خلاف مقدمہ میں ملزم حافظ جاوید چیمہ اور ملزم سلیم چیمہ کو 18.05.2019 کو احتساب عدالت نے 6.48 ملین روپے، 6.48 ملین روپے کے جرمانہ کی سزا سنائی۔ نیب آرڈیننس کی دفعہ 10 کے تحت سزا یافتہ 28 افراد کی تفصیلات درج ذیل ہیں۔

خواجہ محمد تنولی و دیگر کے خلاف مقدمہ میں ملزمان خواجہ محمد تنولی اور محمد خلیل فیروز کو احتساب عدالت نے 03.03.2018 کو 19.028 ملین روپے اور 19.028 ملین روپے جرمانہ کی سزا سنائی۔ ملزم نعیم امداد کو احتساب عدالت نے 26.04.2018 کو 3.59 ملین روپے جرمانہ کی سزا سنائی۔ طارق محمود و دیگر کے خلاف مقدمہ میں ملزمان طارق محمود، ابوذر جعفری کو 31.05.2018 کو احتساب عدالت نے 1.41 ملین روپے اور 1.41 ملین روپے جرمانہ کی سزا سنائی۔ ابوذر جعفری کے خلاف مقدمہ میں 31.05.2018 کو احتساب عدالت نے 58.27 ملین روپے کی سزا سنائی۔

شاہد حسن اعوان و دیگر کے خلاف مقدمہ میں ملزمان شاہد حسن اعوان، زبیر علی خان، ماجد رشید، ذکا خان شنواری اور رفعت شاہد حسن کو 23.06.2018 کو احتساب عدالت نے تمام ملزمان کو الگ الگ 805 ملین روپے جرمانہ کی سزا سنائی۔ محمد اعظم چشتی و دیگر کے خلاف مقدمہ میں ملزمان محمد اعظم چشتی، محمد ذیشان علی، عامر شفیق اور عامر عباس کو 23.06.2018 کو احتساب عدالت نے تمام ملزمان کو الگ الگ 43.04 ملین روپے کے جرمانہ کی سزا سنائی۔ محمد اعظم چشتی و دیگر کے خلاف مقدمہ میں ملزمان محمد اعظم چشتی، محمد ذیشان علی، عامر شفیق اور عامر عباس چوہدری کو 23.06.2018 کو احتساب عدالت نے ہر ملزم کو الگ الگ 1.196 ملین روپے جرمانہ کی سزا سنائی۔ ظل باجاالدین کو 23.06.2018 کو احتساب عدالت نے 32.311 ملین روپے جرمانہ کی سزا سنائی۔ ملزم محمد عامر ندیم کو 23.06.2018 کو احتساب عدالت نے 11.685 ملین روپے جرمانہ کی سزا سنائی۔ نجم الثاقب کو 23.06.2018 کو احتساب عدالت نے 118.27 ملین روپے جرمانہ کی سزا سنائی۔ ملزم عبد الرحمن کو 31.10.2018 کو احتساب عدالت نے 28.52 ملین روپے جرمانہ کی سزا سنائی۔ یعقوب لونہ و دیگر کے خلاف مقدمہ میں ملزمان میاں غلام علی، یعقوب لونہ، ذکاء اللہ بھٹی، احمد شاہ، اسد علی اور ریاض بھٹی کو 20.11.2018 کو احتساب عدالت نے ہر ملزم کو الگ الگ 58.145 ملین روپے جرمانہ کی سزا سنائی۔2017 میں 11 ملزمان کو سزاسنائی گئی۔

احتساب عدالت نے حارث افضل کو 546ملین روپے جرمانہ،محمد اسد لالی،میکن نذیر احمد کو 10.26ملین روپے جرمانہ،طارق سعید کو 16.3 ملین روپے،شاہد فاروق 141ملین،رضا حبیب 241.99 ملین روپے جرمانہ،رانا قیصر نذیر 241.9 ملین روپے،محمد جمیل 57.3 ملین روپے جرمانہ،مقدمہ بر خلاف محمد امین 57.3 ملین روپے جرمانہ،عبدالحمید57.3 ملین روپے جرمانہ،فیاض احمد یعقوب جرمانہ 57.3ملین روپے جرمانہ اور محمد یعقوب کو 44.3ملین روپے جرمانہ کی سزا سنائی۔

اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے چیئرمین نیب جسٹس جاوید اقبال نے ڈی جی نیب لاہورشہزاد سلیم کی قیادت میں نیب لاہور کی کارکردگی کو سراہا اور امید ظاہر کی کہ نیب لاہور اسی عزم و ہمت سے اپنی کارکردگی جاری رکھے گا ۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button