Columnعبدالرشید مرزا

معاشی ترقی کا روڈ میپ … عبدالرشید مرزا

عبدالرشید مرزا

(گذشتہ سے پیوستہ)
جنگلات میں اضافہ ملکی ترقی میں اہم کردار ادا کرتا ہے۔ پاکستان میں جنگل بانی لکڑی، کاغذ اور طب جیسے دیگر اہم اشیاء کا ذریعہ ہے۔ پاکستان کے کُل رقبے کا صرف 4 فیصد جنگلات ہیں۔ پاکستان انسٹیٹیوٹ آف اکنامک ڈویلپمنٹ کی رپورٹ کے مطابق پاکستان میں درختوں کی بے دریغ کٹائی سے سالانہ 27ہزار ہیکٹرسے زائد اراضی بنجر ہو رہی ہے جو دنیا میں دوسرے نمبر پر ہے اور اگر یہی سلسلہ جاری رہا تو آئندہ 30سے 40سال تک پاکستان مکمل طور پر بنجر ہو جائیگا، اس لیے ماحولیات کو بہتر کرنے اور ملکی آمدن میں اضافہ کے لیے جنگلات کا وسیع ہونا ضروری ہے۔

سیاسی بحران پاکستان کو دیوالیہ کردے گاکیوں کہ معاشی ترقی کے لیے سیاسی استحکام ضروری ہے پاکستانی معیشت میں اصلاحات معاشی اور سیاسی حلقوں کو اعتماد میں لیکر کرنی چاہئیں اور پالیسیوں کی سمت کا تعین کرنے اور اس میں اصلاحات کرنے کے لیے سیاسی جماعتوں کو اکٹھا کر کے ایک ایجنڈا تشکیل دیا جائے جس پر سب متفق ہوں۔ یہ معیشت کی بحالی اور عوام کی فلاح کے لیے نہایت ضروری ہے۔
کرنٹ اکائونٹ خسارہ کم کرنا ہوگا، غیرضروری چیزوں کی درآمد بند کرنے سے مجموعی طورپر 10 سے 11  ارب ڈالر بچائے جا سکتے ہیں۔ دنیا سے ادھار لے کر ہم مہنگی گاڑیاں، کاسمیٹکس، کھانے پینے کی اشیاء(جن میں پانی اور گوشت تک شامل ہے) درآمد کرتے ہیں۔ موجودہ مالی سال کے پہلے چھ مہینوں میں تجارتی خسارے میںسو فیصد اضافے کی وجہ برآمدات کے مقابلے میں درآمدات کا د گنا سے سے بھی زیادہ شرح سے بڑھنا ہے۔ ان چھ مہینوں میں اگر برآمدات میں 25 فیصد اضافہ ہوا تو اس کے مقابلے میں درآمدات میں ہونے والا اضافہ 63 فیصد رہا۔پاکستان کی برآمدات کو بڑھانے کے لیے درکار سرمایہ کاری کی فراہمی میں کمی ہے۔ ہماری سرمایہ کاری کی شرح بتدریج کم ہوتی گئی جو کاروباری سطح پر خاص نہیں لیکن طویل مدتی شرح نمو پر اثر انداز ہوئی۔ مشرف دور میں سرمایہ کی شرح 20 فیصد تک پہنچ گئی تھی جبکہ 60ء کی دہائی، ایوب خان کے دور میں یہ شرح 20 سے 25 فیصد تھی اور اب یہ شرح 15 سے 16 فیصد رہ گئی ہے۔ یہ دو بڑے مسئلے پاکستان میں برآمدات میں کمی اور سرمایہ کاری میں عدم دلچسپی کا باعث بنے۔ افراط زر کا اتار چڑھاؤ میکرو اکنامک غیر یقینی صورتحال کا اشارہ ہے، یہ اشارے سرمایہ کاری، خاص طور پر نجی سرمایہ کاری پر منفی اثر ڈالتے پائے گئے ہیں۔ ٹیکس، سرمایہ کاری اور برآمدات کا گٹھ جوڑ معیشت میں ترقی کی مطلوبہ سطح کی
ضمانت کے لیے ضروری ہے، جیسا کہ حالیہ برسوں میں پاکستان میں جی ڈی پی کافی حد تک کم ہوا، اس طرح ترقی پر منفی اثر پڑا ہے۔ سرمایہ کاری کا فقدان ان بنیادی وجوہات میں سے ایک ہے جس کی وجہ سے پاکستان کی برآمدات میںدس سال میں نمو منفی رہی ہے۔ دیگر وجوہات میں عالمی منڈیوں میں کم رسائی، بنیادی ڈھانچے کی کمی اور تکنیکی ترقی شامل ہیں۔ حکومت کی غیر معقول پالیسیوںاور صنعت کو پیش کی جانے والی پیچیدہ مراعات کی وجہ سے برآمدات بھی معذور ہیں۔ ایشیائی ممالک نے اعلیٰ بچت اور سرمایہ کاری کی شرحوں کے ساتھ برآمدات میں ترقی کی حکمت عملیوں پر عمل کرتے ہوئے، ترقی کے شعبوں میں مہارت اور تیزی سے صنعت کاری کے نتیجے میں ترقی حاصل کی ہے۔ سوال یہ ہے کہ پاکستان پائیدار اقتصادی ترقی کے لیے برآمدات کیسے بڑھا سکتا ہے؟ پاکستان کو کم سے کم انفراسٹرکچراور سرمایہ کاری کی ضرورت والی برآمدی خدمات اور مصنوعات سے فائدہ اٹھانے کی ضرورت ہے۔ سافٹ ویئر اور آئی ٹی کی عالمی سطح پر مانگ بڑھ رہی ہے۔مینوفیکچرنگ یونٹ قائم کرنے کے بجائے سافٹ ویئر ہاؤس قائم کرنا آسان ہے۔ تجزیہ کاروں کے مطابق عالمی سافٹ ویئر انجینئرنگ مارکیٹ 2016 -2022 کے درمیان 11.72 فیصد اضافہ ہوا ہے۔ سافٹ ویئر مارکیٹ کی بھرپور ترقی کو مختلف صنعتوں کی طرف سے ان کے پروگرام مینوفیکچرنگ کے عمل اور ڈیزائن کے معیار کو بڑھانے کے لیے
آٹومیشن کی بڑھتی ہوئی مانگ کو پورا کرنا ہوگا۔ مالی سال 2020-21 کی پہلی سہ ماہی کے دوران پاکستان کی آئی ٹی برآمدات 44 فیصد بڑھ کر 379 ملین امریکی ڈالر تک پہنچ گئیں، اس میں اضافہ اور سافٹ ویئر کی برآمدات کو بڑھانے کے راستے تلاش کرنے کے بہت زیادہ امکانات ہیں۔ مالی سال 2020 میں ہندوستان کی انفارمیشن ٹیکنالوجی 7.7 فیصد بڑھ کرUSD191  بلین اور برآمدات 147 بلین امریکی ڈالر تک پہنچ جائیں گی۔ پاکستان میں ٹیلنٹ کی کمی نہیں، حکومت کی جانب سے کم سے کم کوششوں اور تعاون سے پاکستان کا آئی ٹی سیکٹر سالانہ ایک بلین سے زائد امریکی ڈالر کا حصہ ڈال سکتا ہے۔ ٹریڈ ڈویلپمنٹ اتھارٹی آف پاکستان کو اس تیزی سے بدلتی ہوئی حقیقت کو نوٹ کرنا چاہیے اور مصنوعی ذہانت اور بڑے ڈیٹا سے فائدہ اُٹھانا چاہیے۔برآمدات تحفظ پسند رجحانات کا شکار ہیں جوعالمی منڈیوں کے بجائے مقامی مارکیٹ کے لیے پیداوار کی ترغیب دیتی ہیں۔ صنعتوں کو اپنی پیداوار کو کم قیمت سے زیادہ قیمت والی مصنوعات کی طرف منتقل کرنے کے لیے مراعات فراہم کرنے کے لیے مثالی تبدیلی کی ضرورت ہے۔ مثال کے طور پر ایم ایم ایف اور کپاس کا عالمی تناسب 70:30 ہے جب کہ حکومت کی جانب سے ترجیح یا ترغیب نہ دینے کی وجہ سے پاکستان کا مرکب تناسب 30:70 ہے۔ اس مسئلے کو حل کرنے کے لیے اصلاحات برآمد صلاحیت میں تیزی سے اضافہ کریں گی۔ برآمدات کو بہتر بنانے کے لیے ایک اہم اقدام درآمدی پابندیوں کو کم کرنا ہے۔ مثال کے طور پر، پولیسٹر سٹیپل فائبر پر اینٹی ڈمپنگ ڈیوٹی خام مال کی قیمت میں اضافے سے صنعت کو نقصان پہنچائے گی، جس سے برآمدات غیر مسابقتی ہوں گی۔
ایس ایم ایز کو بااختیار بنانا پاکستان کی ترقی کے لئے ضروری ہے۔ پاکستانی معیشت تقریباً 3.3 ملین چھوٹے اور درمیانے درجے کے کاروباری اداروں پر مشتمل ہے۔ ان میں سروس فراہم کرنے والے، مینوفیکچرنگ یونٹس اور سٹارٹ اپ شامل ہو سکتے ہیں۔ ایس ایم ایز پاکستان کی جی ڈی پی کا 30فیصد اور تقریباً 25فیصد برآمدات پر مشتمل ہیں۔ ہمیں ایسی پالیسیوں کی ضرورت ہے جو ایس ایم ایز کو بااختیار بنائیں اور انہیں ان کی حقیقی صلاحیت تک پہنچنے کی اجازت دیں۔
فنانس تک رسائی، آسانی سے دستیاب رعایتی کریڈٹ، قرضوں پر صفر شرح سود، مشینری کی خریداری؍درآمد کے لیے مہارت کی تربیت؍ترقی کے پروگرام ایس ایم ایز کی صلاحیت کو اجاگر کرنے کے لیے ایک معقول نقطہ آغاز ہو سکتا ہے۔ پبلک پروکیورمنٹ ممکنہ طور پر حکومت کی سپلائی چینز میں ایس ایم ایز کو یقینی بنا کر شاندار معاشی اور سماجی فوائد حاصل کر سکتی ہے۔ فوائد ہنر مندی ملازمتوں کی تخلیق، گھریلو ٹیکس آمدنی میں اضافہ، زیادہ مضبوط گھریلو اقتصادی ترقی تک۔ اچھی طرح سے ڈیزائن کی گئی پبلک پروکیورمنٹ پالیسیوں میں تکنیکی ترقی، تجارتی مارجن میں اضافہ اور مجموعی پیداواریت کو بھی متحرک کرنے کی ضرورت ہے۔ہم معیاری ڈیوٹی ڈرا بیک سکیموں کو اس طرح بہتر بنا سکتے ہیںکہ انہیں بالواسطہ برآمد کنندگان کے لیے بھی قابل رسائی بنانا ۔ کریڈٹ کی ضروریات کو کم کرنے کے لیے برآمد کرنے والی فرموں کے لیے ڈیوٹی کی قبل از ادائیگی کو ختم کرنا۔ حکومت برآمدات سے متعلق ضابطے کو آسان بنائے۔ حکومتوں کو غیر ملکی منڈیوں اور برآمدات کی ضروریات کے بارے میں معلومات جمع کرنے اور پھیلانے میں بہتری لانی چاہیے۔ ملکی اشیا کی پیداواری صلاحیت اور تکنیکی مواد کو بہتر بنائیں، اور جدت کو فروغ دینے کے لیے مراعات فراہم کریں، پاکستانی مصنوعات کو عالمی سطح پر مسابقتی بنائیں۔ ایسا ہونے کے لیے ہمیں انٹرپرینیورشپ کو پروان چڑھانے پر جامع توجہ دینے کی ضرورت ہے۔ بے روزگاری کی سطح بلند ہے، جس میں بے روزگار آبادی کا ایک بڑا حصہ تعلیم یافتہ ہے۔ روزگار کی اس حالت کے ساتھ، پاکستان اقتصادی ترقی کے لیے درکار معاشی منافع حاصل نہیں کر سکتا۔ بہتر معیار کی مصنوعات اور خدمات کے لیے جدت کی حوصلہ افزائی کے لیے پاکستان میں کاروبار کرنے میں آسانی کو ترجیح دی جانی چاہیے۔ انٹرپرینیورشپ خوشحالی کا ایک اچھا دور پیدا کرتی ہے کیونکہ لوگ نہ صرف خود روزگار حاصل کرتے ہیں بلکہ روزگار کے مواقع کو بھی فروغ دیتے ہیں۔
خدمات کے برآمدات سے متعلقہ مسائل پر توجہ مرکوز کرتے ہوئے وزارت تجارت کے سیل میں ایک سیل قائم کریں پالیسی سازی کے لیے تجارت کے ماہرین کی خدمات حاصل کرنے کی ضرورت ہے۔ ایک پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ ایسی پالیسی تیار کرنے می باہمی طور پر فائدہ مند ہو سکتی ہے مصنوعات کا تنوع، خدمات کے شعبے کو ترجیح دینا۔
ایکسپورٹ سبسڈیز وصول کنندہ فرموں کی کارکردگی سے منسلک ہونی چاہئیں اور حد عبور کرنے پر خود بخود واپس لے لی جائیں۔ اس کے لیے لین دین کو مکمل طور پر میکانائز کرنے کے لیے فریم ورک تیار کرنے اور ان کی تعیناتی کے لیے ٹیکنالوجی کی ترقی کی ضرورت ہے۔ نظام موثر، سادہ، جامع اور واضح ہوں گیں۔ خام مال کی درآمد پر کسٹم ڈیوٹی؍سیل ٹیکس واپس لیں۔ توسیعی ڈیوٹی ڈرا بیک سکیم ڈیوٹی ڈرا بیک سکیم کو 5 سال کے لیے مقامی طور پر تیار کردہ مواد کا استعمال کرتے ہوئے برآمدات کے لیے بڑھانا اور گارمنٹس اور میک اپس کے لیے خامیوں میں بتدریج اضافے کے لیے سابقہ ڈیوٹی ڈرا بیک اسکیم کو بحال کرنا۔ فاسٹ ٹریک ٹیکسٹائل پارکس کو قائم کرنا ہوگا۔ انٹیگریٹڈ ٹیکسٹائل اور ملبوسات کے پارکس کا فاسٹ ٹریک قیام مقامی اور غیر ملکی سرمایہ کاروں کے لیے پلگ اینڈ پلے کی سہولیات کو فعال کرنا۔ مارکیٹ پر مبنی ایکسچینج ریٹ پالیسی مارکیٹ پر مبنی شرح مبادلہ کی پالیسی کو برقرار رکھنے کے لیے۔ ٹیکسٹائل کی برآمدات کو دوگنا کرنے کے قابل بنانے والے بند صلاحیتوں کی بحالی بڑی اور معروف ٹیکسٹائل کمپنیوں کے ذریعہ، کیش فلو کے مسائل کی وجہ سے بند، غیر آپریشنل؍بیمار یونٹس کے حصول کیلئے$300 ملین کی رعایتی فنانسنگ سکیم۔ معمولی ترمیم اور اپ گریڈیشن کے ساتھ پھل نئے اور موسمی انتظام کے تحت، دوبارہ پیداوار کے لیے پٹری پر لایا جاسکتا ہے اور معیشت میں سالانہ 1.00 بلین ڈالر کی برآمدات میں حصہ ڈالتا ہے۔ پاکستان کی اقتصادی ترقی کا انحصار اسکی برآمدات پر ہے جس سے درآمدات کی مالی اعانت، خدمات کے قرضے، اپنی کرنسی کو مستحکم کرنے اور کے توازن کے خسارے کے مسلسل مسئلے پر قابو پانے کے لیے غیر ملکی آمدنی حاصل کی جاتی ہے۔ کسی ملک کی برآمدات مارکیٹ کے رجحانات اور معیار کے مطابق ہونی چاہئیں، اور بین الاقوامی طور پر قابل قبول معیارات پر تصدیق شدہ ہونی چاہئیں۔
وطن عزیز میں جی ڈی پی سے قرضوں کی شرح 84فیصد ہے جو انتہائی خطرناک ہے جسے کنٹرول نہ کیا گیا تو ملک دیوالیہ ہو سکتا ہے، معاشی ترقی کا روڈ میپ جو ہم نے تجویز کیا ہے اس سے ملک ترقی کے راستے پر گامزن بھی ہوسکتا ہے اور قرضوں کی ادائیگی بھی ہوسکتی ہے جو دیانتدار اور باصلاحیت قیادت کیساتھ ممکن ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button