تازہ ترینخبریںپاکستان سے

بھارت، بنگلادیش سے آرڈرز کی منتقلی، ملکی ٹیکسٹائل برآمدات میں ریکارڈ اضافہ متوقع

امریکی جریدے بلومبرگ نے کہا ہے کہ بھارت، بنگلادیش سے آرڈرز کی منتقلی کے بعد پاکستان کی ٹیکسٹائل برآمدات میں ریکارڈ اضافہ متوقع ہے۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق پاکستان کا ٹیکسٹائل سیکٹر ملک کی کمزور معیشت کو سہارا دے رہا ہے کیونکہ کورونا کی عالمی وبا کے دوران جنوبی ایشیائی حریفوں پر برتری حاصل کرنے کے بعد برآمدات میں ریکارڈ اضافہ ہو رہا ہے۔

بلومبرگ کے مطابق ٹیکسٹائل کی صنعت، جو امریکا اور یورپ میں خریداروں کے لیے ڈینم جینز سے لے کر تولیے تک سب کچھ فراہم کرتی ہے، ملک کے چند روشن اقتصادی پہلوؤں میں سے ایک ہے۔

رپورٹ کے مطابق پاکستان کی برآمدات کا تقریباً 60 فیصد ٹیکسٹائلز ہیں، اور 2020 میں جب عالمی وبا پھیلی آئی تو ملک نے اپنی فیکٹریوں کو بھارت اور بنگلا دیش سے پہلے کھولنے کی اجازت دی، جس سے اس نے ٹارگٹ کارپوریشن اور ہینس برانڈز انکارپوریشن سمیت عالمی برانڈز سے آرڈرز لیے گئے۔

ٹیکس میں چھوٹ، سستے قرضے اور جنوبی ایشیا میں حریفوں کے مقابلے میں بجلی کی فراہمی سمیت دیگر اقدامات کے ذریعے حکومت ٹیکسٹائل برآمدات کو دوگنا کرنے کی کوشش کر رہی ہے اور اس حوالے سے 2018 سے امریکی ڈالر کے مقابلے مقامی کرنسی میں 60 فیصد کمی نے بھی مدد کی ہے۔

ایک ماہر نے جریدے کو بتایا کہ گزشتہ چند سالوں میں پاکستان کی برآمدات مسابقتی ہو گئی ہیں۔ انرجی ٹیرف کا ایک مقررہ نظام ہے جو علاقائی قیمتوں کو ذہن میں رکھتا ہے۔ حکومت برآمد کنندگان کے ذمے واجب الادا رقم واپس کرنے میں بہت تیزی سے کام کر رہی ہے اور کرنسی کی قدر میں بڑی کمی واقع ہوئی ہے۔

جریدے کا کہنا ہے کہ پاکستان اپنی برآمدات میں اضافے کے لیے کوشاں ہے کیونکہ وہ باقاعدہ تیزی سے بڑھنے والے معاشی بحرانوں سے نکلنے کے لیے 1980 کی دہائی کے آخر سے لے کر اب تک 13 بار آئی ایم ایف سے مدد طلب کر چکی ہے۔ پاکستان ریکارڈ تجارتی خسارے کے بیچ مالیاتی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے 6 بلین امریکی ڈالر کے بیل آؤٹ پروگرام کو بحال کرنے کی بھی کوشش کر رہا ہے۔

بلومبرگ کے مطابق وزیر اعظم عمران خان کے مشیر برائے تجارت عبدالرزاق داؤد نے کہا کہ ٹیکسٹائل کی برآمدات جون میں ختم ہونے والے 12 مالی مہینوں میں ایک سال پہلے کے مقابلے میں 40 فیصد اضافے کے ساتھ 21 ارب امریکی ڈالر تک پہنچنے کے لیے تیار ہیں۔ یہ تعداد اگلے مالی سال میں 26 ارب ڈالر تک بڑھ جائے گی جو گزشتہ سال کی ملک کی کل برآمدات کو پیچھے چھوڑ دے گی۔

عبالرزاق داؤد نے کہا کہ عالمی وبا کے دوران بہت سارے آرڈر درحقیقت بنگلا دیش اور ہندوستان سے پاکستان منتقل کیے گئے تھے، دوسری اچھی چیز جو ہو رہی ہے وہ یہ ہے کہ اب ہم بنگلا دیش کے ساتھ مسابقتی بن رہے ہیں، تین چار سال پہلے بنگلا دیش واقعی ہمیں مات دے رہا تھا۔ حکومت افریقا، جنوبی امریکا اور وسطی ایشیا جیسی نئی منڈیوں میں برآمدات کے لیے مراعات فراہم کرنے کے لیے اگلے ماہ ایک پروپوزل کا اعلان کرنے کا بھی ارادہ رکھتی ہے۔

پاکستان کے مشیر تجارت کا کہنا ہے کہ ملک کی ریکارڈ بلند درآمدات کے بارے میں زیادہ کچھ نہیں کیا جا سکتا ہے کیونکہ ان کا زیادہ حصہ بنیادی طور پر پیٹرولیم مصنوعات اور ویکسینز کی خریداری ہیں۔ اگر تیل 100 امریکی ڈالر فی بیرل تک پہنچتا ہے تو پاکستان "دباؤ میں” ہو گا۔

مشیر تجارت کو امید ہے کہ بہتر گھریلو فصل کی کٹائی کے بعد اس سال خوراک سے متعلق درآمدات میں کمی آئے گی۔ پاکستان مختلف معاہدوں پر دستخط کرکے اور ٹرکوں کی آزادانہ نقل و حرکت کی اجازت دے کر وسطی ایشیائی ممالک کے ساتھ تجارت کو تیز کرنے کی کوشش بھی کر رہا ہے۔ رواں مالی سال کے چھ ماہ میں تجارت بڑھ کر 120 ملین امریکی ڈالر تک پہنچ گئی ہے جو پچھلے سال کے 14 ملین امریکی ڈالر تھی۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button