Column

امریکہ میں بڑے پیمانے پر AT&Tنیٹ ورک کی بندش

خواجہ عابدحسین
امریکہ میں AT&Tنیٹ ورک کی بندش دسیوں ہزار صارفین کو متاثر کیا، جس کی وجہ سے فون کالز، ٹیکسٹس، انٹرنیٹ تک رسائی، اور 911سروسز میں تقریباً 12گھنٹے تک خلل پڑا۔ اس بندش نے امریکی سیل نیٹ ورکس کی سلامتی اور وشوسنییتا کے بارے میں خدشات کو جنم دیا، جس سے وفاقی ایجنسیوں جیسے کہ فیڈرل کمیونیکیشن کمیشن (FCC)، فیڈرل بیورو آف انویسٹی گیشن (FBI)، اور محکمہ ہوم لینڈ سیکیورٹی نے تحقیقات کا آغاز کیا۔ AT&T نے سروس بحال کرنے کے بعد کہا کہ یہ بندش نیٹ ورک کی توسیع کے غلط عمل کی وجہ سے ہوئی نہ کہ سائبر حملے کی وجہ سے۔ کمپنی کو بندش کے دوران شفافیت کی کمی اور سست اپ ڈیٹس کی وجہ سے تنقید کا بھی سامنا کرنا پڑا، جس کے نتیجے میں ریگولیٹری حکام کی جانب سے ممکنہ جرمانے اور مزید جانچ پڑتال کی گئی۔
بندش نے بنیادی طور پر AT&Tکے صارفین کو متاثر کیا، جس میں Verizonاور T۔Mobile کے صارفین بڑی حد تک متاثر نہیں ہوئے۔ متاثرہ صارفین کی رپورٹوں نے ممکنہ سائبر اٹیک کے بارے میں خدشات کو جنم دیا، حالانکہ AT&Tنے نیٹ ورک کی توسیع کے غلط عمل کو بندش کی وجہ قرار دیا۔ اس بندش نے وفاقی ایجنسیوں بشمول FCCاور FBIکی طرف سے تحقیقات کا آغاز کیا تاکہ خلل کی اصل وجہ اور مضمرات کا تعین کیا جا سکے۔
AT&Tکی طرف سے جواب، بشمول سروس کی بحالی اور صارفین سے معذرت، کی جانچ پڑتال کی گئی، جس میں واقعے کے دوران کمپنی کے مواصلات اور شفافیت پر تنقید کی گئی۔ بندش نے ممکنہ ریگولیٹری کارروائیوں، جرمانے، اور نیٹ ورک کے آپریشنز کی بہتر نگرانی کی ضرورت کے بارے میں بھی بات چیت کو جنم دیا۔
بندش نے نہ صرف AT&Tصارفین کے لیے باقاعدہ مواصلاتی خدمات کو متاثر کیا بلکہ امریکی سیل نیٹ ورکس کی سلامتی اور وشوسنییتا کے بارے میں بھی اہم خدشات کو جنم دیا۔ تحقیقات جاری رہنے کے ساتھ، وفاقی ایجنسیوں جیسے FCC، FBI، اور محکمہ ہوم لینڈ سیکیورٹی کی شمولیت اس طرح کے نیٹ ورک کی رکاوٹوں کی شدت اور ممکنہ مضمرات کو نمایاں کرتی ہے۔
AT&Tکا جواب، بشمول مسئلہ کا اعتراف اور سروس کی بحالی، شفافیت اور کسٹمر کمیونیکیشن کے حوالے سے تنقید کے ساتھ تھا۔ مزید برآں، توقع ہے کہ اس واقعے سے ریگولیٹری اداروں سے مزید جانچ پڑتال کی جائے گی، جس کے نتیجے میں ممکنہ طور پر جرمانے ہوں گے اور مستقبل میں اسی طرح کی رکاوٹوں کو روکنے کے لیے اقدامات پر عمل درآمد ہوگا۔AT&T نیٹ ورک کی بندش کے بارے میں وفاقی ایجنسیوں اور صنعت کے حکام کے ابتدائی نتائج اور ردعمل ظاہر کرتے ہیں کہ مختلف وفاقی ایجنسیاں، بشمول فیڈرل کمیونیکیشن کمیشن (FCC)، فیڈرل بیورو آف انویسٹی گیشن (FBI)، اور محکمہ ہوم لینڈ سیکیورٹی، سرگرمی سے تحقیقات کر رہے ہیں۔ پبلک سیفٹی اینڈ ہوم لینڈ سیکیورٹی بیورو بندش کے اثرات کو سمجھنے کے لیے AT&Tاور FirstNetسمیت پبلک سیفٹی حکام کے ساتھ رابطے میں ہے۔ FBI AT&Tکے ساتھ بھی رابطے میں ہے اور اگر کوئی بدنیتی پر مبنی سرگرمی کا پتہ چلا تو جواب دینے کے لیے تیار ہے۔ مزید برآں، صنعت کے حکام نے کہا ہے کہ فی الحال سائبر اٹیک کا کوئی ثبوت نہیں ہے، اور ایسا لگتا ہے کہ بندش کا تعلق پیئرنگ سے ہے یا نیٹ ورکس کے درمیان کالز کے حوالے سے ہے۔ AT&Tنے یہ کہتے ہوئے جواب دیا ہے کہ یہ بندش نیٹ ورک کی توسیع کے غلط عمل کی وجہ سے ہوئی نہ کہ سائبر اٹیک کی وجہ سے۔ یو ایس سائبر سیکیورٹی اور انفراسٹرکچر سیکیورٹی ایجنسی بھی بندش کی وجہ اور اس کے اثرات کو سمجھنے کے لیے AT&Tکے ساتھ مل کر کام کر رہی ہے۔ یہ ابتدائی نتائج اور ردعمل وفاقی ایجنسیوں اور صنعت کے حکام کی جانب سے بندش کی تحقیقات کرنے اور امریکی سیل نیٹ ورکس کی حفاظت اور وشوسنییتا کو یقینی بنانے کے لیے مربوط کوششوں کی نشاندہی کرتے ہیں۔
AT&Tنیٹ ورک کی بندش امریکی سیل نیٹ ورکس کی سلامتی اور وشوسنییتا کے بارے میں خدشات کو جنم دیتی ہے۔ اگرچہ ابتدائی نتائج سے سائبر حملے کا کوئی ثبوت نہیں ملتا ہے، لیکن اس بندش نے وفاقی ایجنسیوں جیسے کہ فیڈرل کمیونیکیشن کمیشن (FCC)، فیڈرل بیورو آف انویسٹی گیشن (FBI)اور محکمہ ہوم لینڈ سیکیورٹی کو فوری طور پر واقعے کی تحقیقات کرنے پر آمادہ کیا ہے۔ اس بندش نے ممکنہ ریگولیٹری کارروائیوں کے بارے میں بھی بات چیت کو جنم دیا ہے، بشمول جرمانے اور نیٹ ورک آپریشنز کی بہتر نگرانی کی ضرورت۔ ٹیلی کام انڈسٹری کے تجزیہ کاروں نے مشورہ دیا ہے کہ AT&Tکو ممکنہ طور پر 911بندشوں پر جرمانے کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے، حالانکہ یہ یقینی نہیں ہے۔ وفاقی ایجنسیوں کی شمولیت اور ریگولیٹری کارروائیوں کی صلاحیت اس بات کی نشاندہی کرتی ہے کہ بندش کے تناظر میں امریکی سیل نیٹ ورکس کی سلامتی اور وشوسنییتا کو یقینی بنانے کے لیے ٹھوس کوشش کی گئی ہے۔AT&Tنیٹ ورک کی بندش کو نیٹ ورک کی توسیع کے غلط عمل سے منسوب کیا گیا، جیسا کہ AT&Tنے اپنی اپ ڈیٹ میں بتایا ہے۔ کمپنی نے واضح کیا کہ یہ بندش سائبر اٹیک کی وجہ سے نہیں بلکہ نیٹ ورک کی توسیع کے دوران ایک غلط عمل کا نتیجہ ہے۔ AT&Tنے مشرقی وقت کے دوپہر تک تقریباً تین چوتھائی نیٹ ورک کو بحال کرنے کے لیے فوری کارروائی کی اور پہلی بار بندش شروع ہونے کے تقریباً 12گھنٹے بعد متاثرہ صارفین کے لیے سروس کو مکمل طور پر بحال کر دیا۔ کمپنی نے اپنے صارفین سے بھی مخلصانہ معذرت کا اظہار کیا اور اس بات پر زور دیا کہ صارفین کو مربوط رکھنا ان کی اولین ترجیح ہے۔ مزید برآں، AT&Tنے Wi-Fiکالنگ کے استعمال کی حوصلہ افزائی کی جب تک کہ سروس مکمل طور پر بحال نہ ہو جائے۔AT&Tکے جواب میں تیزی سے بحالی کی کوششیں اور متاثرہ صارفین سے معذرت شامل تھی۔ کمپنی کی جانب سے مسئلے کا اعتراف اور مستقبل میں بلاتعطل سروس کو یقینی بنانے کا عزم اس واقعے پر ان کے ردعمل کے اہم اجزاء تھے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button