تازہ ترینخبریںسیاسیات

جو 3 بار فیل ہو چکا وہ چوتھی بار کیا تیر مار لے گا، بلاول بھٹو

چیئرمین پاکستان پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری کا کہنا ہے کہ جو پہلی 3 بار فیل ہو چکا وہ چوتھی بار کیا تیر مار لے گا؟ میاں صاحب جن سے دو تہائی اکثریت مانگ رہے وہ کہہ رہے کیسے دیں؟

ورکرز کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے بلاول بھٹو زرداری نے قائد مسلم لیگ (ن) نواز شریف کو خوب تنقید کا نشانہ بنایا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں تقسیم نفرت کی سیاست عروج پر ہے اور ایک جماعت کا ارادہ ہے کہ الیکشن جیت کر انتقام لے سکے، وہ سیاسی اختلاف کے بجائے ذاتی دشمنی پر اتر آئے ہیں۔

بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ ہم نے کبھی انتقام نہیں لیا عوام کی خدمت پر توجہ دیتے ہیں، ذاتی دشمن اور انا کی سیاست ہم نہیں کرتے اس کو ہمیشہ کیلیے دفن کرنا چاہتے ہیں، ہم نے ملک میں دونوں کو برداشت کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ رائیونڈ والا 3 بار وزر اعظم بن چکا ہے اور اب چوتھی بار ”سلیکٹ” ہونا چاہتا ہے، نواز شریف انہی سے ٹکرائے جنہوں نے دو تہائی اکثریت دلوائی تھی، تیسری بار بھی آر او الیکشن کے ذریعے وزیر اعظم بنے، وہ تیسری بار بھی انہی سے لڑے جنہوں نے اقتدار دلوایا۔

سابق وزیر خارجہ نے کہا کہ ”مجھے کیوں نکالا” کہتے کہتے لندن کے ایون فیلڈ میں پہنچ گئے، نواز شریف کی واپسی پر لاہور میں بہت بڑا استقبال کروایا گیا، انہوں نے اب بھی وہی کرنا ہے جو تین بار کیا تھا، ان کا اب بھی مطالبہ ہے مجھے دو تہائی اکثریت دو، چوتھی بار نواز شریف وزیر اعظم بنیں گے تو ہمیں معلوم ہے کیا ہوگا، جو روایتی سیاست ہم تین بار بھگت چکے چوتھی بار بھگتنی پڑے گی۔

بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ میاں صاحب نے چوتھی بار بھی انہی سے لڑنا ہے جو حکومت دلواتے ہیں، نہ زمان پارک کا وزیر اعظم اور نہ رائیونڈ کا وزیر اعظم میرا مخالف ہے بلکہ میرا مقابلہ مہنگائی اور غربت سے ہے، جو بینظیربھٹو کا نامکمل خواب تھا اسے مل کر پورا کریں گے۔

انہوں نے کہا کہ اتحادی حکومت میں خزانے کی ذمہ داری (ن) لیگ کی تھی جو ناکام رہے، نگراں صوبائی حکومتوں میں کچھ لوگ ہیں جو سیاسی جماعتوں سے تعلق رکھتے ہیں، نگراں وفاقی حکومت میں بھی ایسے لوگ ہیں جو کسی سیاسی جماعت سے تعلق رکھتے ہیں، میاں صاحب کے لوگ آج بھی وزارتیں سنبھال رہے ہیں، ان کے لوگوں کا وزارتیں سنبھالنا شفاف الیکشن کیلیے غلط پیغام ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ یہ لوگ پی آئی اے کو بیچ نہیں رہے بلکہ خریدنے کی کوشش کر رہے ہیں، کسی صورت میاں صاحبان کو پی آئی اے خریدنے نہیں دیں گے۔

انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی نے ہمیشہ الیکشن پر یقین رکھا اور سلیکشن کا مقابلہ کیا، بانی پی ٹی آئی سلیکٹ ہو کر آئے تھے، وہ امپائر کی انگلی پر سیاست کرتے رہے اب نقصان بھگتنا پڑ رہا ہے، میاں صاحب کو بھی یہی پیغام ہے آپ ہمارے بزرگ ہیں 3 بار سلیٹ ہوئے اب ایک بار تو الیکٹ ہو کر آ جائیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button