تازہ ترینخبریںدنیا سے

اسرائیلی فوج کی پیش قدمی کی وضاحت ، نقشوں کی مدد سے جانیئے

سیٹلائٹ کی نئی تصاویر سے پتہ چلتا ہے کہ اسرائیلی افواج 27 اکتوبر کی رات غزہ کی پٹی میں داخل ہونے کے بعد سے کئی کلومیٹر آگے بڑھ گئی ہیں۔ ایسا لگتا ہے کہ غزہ شہر کو جنوب سے مؤثر طریقے سے الگ کر دیا گیا ہے۔

اس حوالے سے ایک ویڈیو کے مطابق اسرائیلی فورسز غزہ کی بندرگاہ کے علاقے تک پہنچنے کی کوشش کرنے کے لیے زمینی افواج کے داخلے کی تیاری میں ہے۔ بیچ کیمپ پر حملہ کرنے، عمارتوں پر بمباری کرنے اور سیکیورٹی بیلٹ قائم کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔

عسکری امور اور اسلحہ سازی کے مشیر ریاض قھوجی کے مطابق اس علاقے کا کنٹرول الشفاء ہسپتال سے منسلک ہے۔ خیال یہ کیا جاتا ہے کہ اس میں حماس کی قیادت کی سرنگیں، میزائل بنانے کے مراکز اور لانچنگ ایریاز شامل ہیں

الشاطی کیمپ اور الزیتون کالونی پر کنٹرول کی کوشش
قھوجی کے مطابق ساحلی کیمپ پر توجہ مرکوز کی گئی ہے۔ یہ بھی وضاحت کی گئی ہے کہ غزہ کی پٹی کے شمال مشرق کی سمت میں الزیتون کالونی کو کنٹرول کرنے کی کوششیں کی جا رہی ہیں تاکہ ان اسرائیلی افواج سے ملاقات کی جا سکے جو بیت حانون میں "ایرز” کراسنگ سے داخل ہوئیں۔

متوازی طور پر 3 نومبر کو کمپنی پلینیٹ لیبز کے ذریعے گزشتہ ہفتے کے دوران پکڑے گئے گاڑیوں کے ٹریکس نے شمال مغرب، شمال مشرق اور جنوب سے تین اہم راستوں پر اسرائیلی پیش قدمی ظاہر کی۔

اگرچہ جنوبی راستے کے ساتھ اسرائیلی افواج نے بحیرہ روم تک تمام راستے پیش قدمی کی ہے لیکن ایسا لگتا ہے کہ حالیہ دنوں میں انہوں نے دیگر راستوں میں کوئی خاص پیش رفت نہیں کی ۔ ویڈیوز میں ان میں سے کچھ مقامات پر شدید لڑائی کو دکھایا گیا ہے۔

شمال مغربی سڑک کے ساتھ ساتھ اسرائیلی افواج شہر کے مرکز سے تقریباً تین میل دور بیچ پناہ گزین کیمپ کے مضافات میں رکی ہوئی ہیں۔ صہیونی افواج عمارتوں کو مسمار کر رہی ہیں اور اسمبلی کے علاقوں کو متعین کرنے کے لیے ریت کے کناروں پر ہل چلا رہی ہیں۔

واشنگٹن پوسٹ کے مطابق حماس کی طرف سے ہفتے کے روز پوسٹ کی گئی ایک ویڈیو میں بھی اس کے جنگجوؤں کو اس علاقے میں اسرائیلی ٹینکوں اور بکتر بند جہازوں پر حملہ کرتے ہوئے دکھایا گیا ہے۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ اس علاقے میں اسرائیلی پیش قدمی رک گئی ہے۔

ایسا لگتا ہے شمال مشرق سے آنے والی اسرائیلی افواج نے سب سے کم پیش رفت کی ہے کیونکہ وہ بیت حانون گاؤں کے مضافات میں رک گئی ہیں۔

الرشید روڈ تک رسائی
اسرائیلی فوج نے 31 اکتوبر کو فوجیوں کی ویران گلیوں میں چہل قدمی کی ویڈیو جاری کی تھی۔ یکم نومبر کو حماس نے ایک ویڈیو جاری کی جس میں دکھایا گیا ہے کہ ایک ڈرون اسرائیلی فوجیوں کے ایک گروپ پر دھماکہ خیز مواد گرا رہا ہے۔

علاوہ ازیں تصاویر میں غزہ شہر کے جنوب کی پٹی میں گاڑیوں کے قافلے کو آگے بڑھتے ہوئے دکھایا گیا ہے۔ ایسا لگتا ہے کہ اس پیش قدمی میں کئی دن لگے ہیں۔ پچھلی سیٹلائٹ تصاویر نے سڑک کے ساتھ دھوئیں کی بڑی مقدار دکھائی تھی۔ یہ چیز شدید لڑائی کی نشاندہی کر رہی ہے۔

اس محور پر پیش قدمی کرنے والی اسرائیلی افواج نے صلاح الدین روڈ کو کاٹ دیا جو غزہ کی پٹی سے گزرنے والی ایک مرکزی شریان ہے۔ 30 اکتوبر کو ایک ویڈیو کلپ میں دکھایا گیا تھا کہ ایک اسرائیلی ٹینک سڑک پر ایک سویلین کار پر فائرنگ کر رہا ہے۔

تین نومبر تک اس سڑک پر موجود فورسز الرشید روڈ تک پہنچ چکی تھیں۔ یہ روڈ بحیرہ روم کے ساحل کے ساتھ گزرتا ہے۔ تین نومبر کو لی گئی اور سیٹلائٹ لیبز کی طرف سے واشنگٹن پوسٹ کو فراہم کی گئی ایک ہائی ریزولوشن تصویر سے بھی جنوبی اسرائیل میں ہونے والی پیشرفت ظاہر ہوتی ہے۔

تصویر میں ایک درجن سے زیادہ بکتر بند گاڑیاں نظر آرہی ہیں۔ یہ الرشید اور الساحل روڈ سے تقریباً 900 فٹ کے فاصلے پر ہیں۔ فورسز نے نقشوں پر فرینڈز کلب کے نام سے شناخت شدہ مقامات کے اندر کھدائی کی ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button