تازہ ترینخبریںپاکستان سے

نصابی کتب میں غلطیوں کے خلاف درخواست: سیکرٹری تعلیم اور چیئرمین فیڈرل بورڈ ذاتی حثیت میں طلب

اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس عامر فاروق کی عدالت نے نصابی کتب میں غلطیوں کے خلاف درخواست میں سیکرٹری تعلیم اور چیئرمین فیڈرل بورڈ کو ذاتی حثیت میں طلب کر لیا ہے۔

اسلام آباد ہائی کورٹ خاتون وکیل کی نصاب کی عدم نگرانی اور سٹینڈرڈ آف ایجوکیشن ایکٹ پر عملدرآمد کے لیے دائر درخواست پر سماعت کے دوران درخواست گزار نے موقف اختیار کیا کہ نصاب میں غلطیاں بھی موجود ہیں جو انھیں ’بچوں کو پڑھاتے ہوئے نظر آیا۔‘

دوران سماعت فریقین کے وکلا کی جانب سے عدالتی سوالات کا جواب دینے میں ناکامی پر چیف جسٹس نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے استفسار کیا کہ ’نصاب ڈیزائن کون کرتا ہے، اس پر فیڈرل بورڈ کے وکلا سمیت لا افسران کوئی جواب نہ دے سکا۔‘

چیف جسٹس نے کہا کہ ’آپ لوگوں کو اپنے کیس کا ہی پتہ نہیں؟ سادہ سا سوال پوچھا ہے بتا دیں کون نصاب تیار کرتا ہے؟‘

’آپ لوگوں کو کچھ پتہ نہیں کہ کون نصاب بنا رہا ہے تو سیکرٹری کو بلاتے ہیں‘

عدالت نے سماعت دو ہفتوں کے لیے ملتوی کی ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button