25 اگست 2019
تازہ ترین
سیب کا جوس ڈی ہائیڈریشن کیلئے مفید

سیب کا جوس ڈی ہائیڈریشن کیلئے مفید

ایک تحقیق کے مطابق ڈی ہائیڈریشن کا شکار بچوں کو مہنگے مشروبات کے بجائے سیب کا جوس پلانے سے زیادہ طبی فوائد حاصل کئے جاسکتے ہیں۔ ٹورنٹو میں کی جانے والی ایک تحقیق میں 6ماہ سے5سال تک کے650ایسے بچوں کو شامل کیا گیا، جنہیں ہیضہ اور قے کی شکایت پر ایمرجنسی روم میں لایا گیا۔ ہائیڈریشن کے لئے ان بچوں کو دو گروپوں میں تقسیم کرکے ایک کو سیب کا جوس جبکہ دوسرے گروپ کو مہنگے مشروبات یا ادویات پلائی گئیں۔ ہسپتال سے فارغ ہونے کے ایک ہفتہ بعد ادویاتی مشروبات استعمال کرنے والے 9فیصد جبکہ سیب کا جوس پینے والے صرف ڈھائی فیصد بچوں کو دوبارہ ڈاکٹرز سے رجوع کرنے کی ضرورت محسوس ہوئی۔ اس کے علاوہ ہیضہ اور قے کی مقدار بھی دونوں طرح کے مشروبات استعمال کرنے والے بچوں میں برابر رہی۔ محققین کا کہنا ہے کہ ڈی ہائیڈریشن میں دو سال یا اس سے زیادہ عمر کے بچوں کے لئے سیب کا جوس بہت زیادہ مفید ہے۔  ہڈیاں انسانی جسم کا سب سے ضروری حصہ ہیں۔ عموماًبڑھتی عمر کے ساتھ ساتھ ہڈیاں کمزور ہونا شروع ہو جاتی ہیں۔اس کے علاوہ کم عمر بچوں یا نوجوانوں کو بھی ہڈیاں کمزور ہونے کی شکایت ہوتی ہے ۔ لیکن اب ہڈیوں کی کمزوری کا شکار لوگ پریشان ہونا چھوڑ دیں۔ ہر روز ایک سیب کھانے سے آپ ہڈیوں کی کمزوری سے بچ سکتے ہیں۔سیب دانتوں کو مضبوط کرتا ہے اس کے اجزا دانتوں اور مسوڑھوں میں جذب ہو کر انہیں خاصا مضبوط کرتے ہیں۔ الزائمر جو کہ ایک دماغی بیماری ہے، روازنہ کی خوراک میں سیب کا استعمال اس کی روک تھام میں بھی مدد دیتا ہے۔ سیب دل کو شگفتہ اور دماغ کو تروتازہ کرتا ہے، اس وجہ سے یہ پریشانی وغیرہ کی صورت میں انسانی جسم میں قوت مدافعت بڑھاتا ہے۔ دمہ کے مریضوں کو چاہئے کہ وہ پھلوں میں زیادہ سے زیادہ سیب کو ترجیح دیں۔ سیب دمہ کے مریضوں کے لئے کافی مفید ثابت ہوسکتا ہے۔ سیب میں موجود متعدد خصوصیات جگر کے کینسر کی روک تھام میں حیرت انگیز طور پر مدد گار ثابت ہوسکتے ہیں۔ جسم میں کولیسٹرول کی زیادتی کے شکار افراد سیب کا استعمال شروع کرکے اس آفت سے بآسانی نجات حاصل کرسکتے ہیں۔ آج کل ہر انسان اپنے بڑھتے وزن کو دیکھ کرپریشان رہتا ہے۔ ایسے افراد یہ جان کر حیران ہوں گے کہ روزانہ ایک سیب کھا نے یا سیب کا جوس پینے سے وزن میں حیرت انگیز طور پر کمی آسکتی ہے۔


مزید خبریں

عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟