18 اکتوبر 2019
تازہ ترین
پی ٹی آئی سندھ امیر بخش بھٹو کی صدارت پر اختلافات کا شکار

پی ٹی آئی سندھ امیر بخش بھٹو کی صدارت پر اختلافات کا شکار

 تحریک انصاف سندھ شدید اختلافات کا شکار ہوگئی ۔ 3 ماہ کا عرصہ گزرنے کے باوجود نئے عہدیداروں کا تقرر نہیں ہوسکا۔ پی ٹی آئی کے ایم پی ایز سمیت متعدد رہنمائوں نے امیر بخش بھٹو کی بطور صدر سندھ میں دوبارہ تقرری کی مخالفت کردی، کراچی کے اہم رہنما بھی مخالف بن گئے جبکہ صدر مملکت عارف علوی نے امیر بخش بھٹو کی حمایت کردی ہے ، اس تمام تر صورتحال میں مرکزی رہنما بھی شش و پنج میں مبتلا ہوگئے ہیں اور حتمی فیصلہ عمران خان پر چھوڑ دیا ہے۔ بتایا جارہا ہے کہ امیر بخش بھٹو کو جہانگیر ترین کی حمایت بھی حاصل ہے، امیر بخش بھٹو نے بھی تنظیم سازی کے معاملات میں سخت رویہ اپنانے کی شرط پر سندھ کی صدارت قبول کرنے کی حامی بھری ہے اور یقین دلایا ہے کہ ان کے اقدامات سے پی ٹی آئی سندھ میں مقبول جماعت بن کر ابھرے گی، بتایا جاتا ہے کہ سابق وفاقی وزیر سندھ لیاقت علی جتوئی نے نظر انداز کرنے کی وجہ سے پی ٹی آئی سے کنارہ کشی اختیار کرلی ہے اندرون سندھ کارکن بھی مایوسی کا شکار ہیں۔ پی ٹی آئی یکجہتی فورم سندھ کے صدرمیر مظہر حسین مگسی نے جہان پاکستان کو بتایا کہ مختلف سیاسی جماعتیں ہم سے رابطے میں ہیں اور پی ٹی آئی ابھرتی ہوئی سیاسی قوت کے طور پرسامنے آئی ہے، کڑوے فیصلے کرنا وقت کی ضرورت ہے ، پارٹی میں کوئی اختلافات نہیںتاہم اختلاف رائے جمہوریت کا حصہ ہے۔


مزید خبریں

عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟