20 اکتوبر 2019
تازہ ترین
ورلڈ کپ میں صورتحال دیکھ کر 92 یاد آرہا ہے، وسیم اکرم

ورلڈ کپ میں صورتحال دیکھ کر 92 یاد آرہا ہے، وسیم اکرم

سوئنگ کے سلطان و سابق کپتان وسیم اکرم نے امید کا اظہار کیا ہے کہ فاسٹ بائولر محمد عامر وہی کردار ادا کرے گا جو 92 ورلڈکپ میں ان کا تھا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کرکٹ ٹیم کی ورلڈ کپ میں صورتحال دیکھ کر 92 یاد آرہا ہے، 27 سال پہلے بھی ایسی ہی صورتحال تھی کہ آسٹریلیا میچ جیتے اور ہم نیوزی لینڈ کو ہرائیں۔ انہوں نے کہا کہ 92 کے ورلڈکپ میں بھی نیوزی لینڈ کی ٹیم کوئی میچ نہیں ہاری تھی، پھر ہم سے ہاری تھی، امید ہے کہ اس بار بھی ایسا ہو، پاکستان کے لئے ضروری ہے کہ تینوں میچز جیتے، ٹیم اپنے میچز پر  توجہ دے پھر جو ہوگا دیکھیں گے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کو نیوزی لینڈ پر ہمیشہ نفسیاتی برتری حاصل رہتی ہے، کھلاڑیوں کو 92 ورلڈ کپ کی داستان سے حوصلے مل سکتے ہیں۔ انہوں نے قومی ٹیم کو مشورہ دیتے ہوئے کہا کہ نیوزی لینڈ کی ٹیم ورلڈ کپ کی بہترین ٹیم ہے، کیوی بائولر ٹرینٹ بولٹ کو شروع میں وکٹیں نہ دیں، چاہے 5 اوورز میں 12 رنز ہی کیوں نہ ہوں کیوں کہ بولٹ دو یا تین سلپ لے کر نئے گیند سے بائولنگ کرائے گا لہٰذا باہر جاتی گیند کو جانے دیں۔ انہوں نے کہا کہ جب اہم بائولر کو وکٹ نہیں ملے گی تو باقی بائولرز پر بھی دبائو آئے گا، بائولر کو مجبور کریں کہ وہ آپ کے پلان کے مطابق بائولنگ کرے۔ انہوں نے کہا کہ نیوزی لینڈ کے ایک دو کھلاڑی سپن پر بہت اچھے ہیں لہٰذا گپٹل کو پیچھے گیند نہ کرائیں۔ محمد عامر کے حوالے سے  انہوں نے کہا کہ عامر کی لائن لینتھ کافی بہترین جارہی ہے، امید ہے محمد عامر وہی کردار ادا کرے گا جو 92 میں میرا تھا، عامر کو ہمیشہ سپورٹ کیا کیونکہ معلوم تھا کہ اسکو وکٹ مل گئی تو ردھم واپس آجائے گا۔ انہوں نے کاہ  کہ وہاب ریاض بھی اچھا پرفارم کررہا ہے اور پاکستان ٹیم کو پرفارم کرتا دیکھ کر خوشی ہورہی ہے۔


مزید خبریں

عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟