20 اگست 2019
تازہ ترین
ارمیلا کی اسلام قبول کرنے سے متعلق وضاحت

ارمیلا کی اسلام قبول کرنے سے متعلق وضاحت

 حال ہی میں سیاست میں قدم رکھنے والی بالی وڈ اداکارہ ارمیلا ماٹونڈکر نے اسلام قبول کرنے سے متعلق خبروں پر وضاحتی بیان دیتے ہوئے کہا ہے کہ اگر اسلام قبول کرتی تو فخر سے سب کو بتاتی۔ حال ہی میں بھارتی سیاسی جماعت کانگریس میں شمولیت اختیار کرنے والی اداکارہ ارمیلا ماٹونڈکر نے بھارتی ویب سائٹ کو انٹرویو دیتے ہوئے اپنے سیاسی و بالی وڈ کیریئر، اسلام قبول کرنے اور اپنے شوہر کے حوالے سے لوگوں کے ذہنوں میں گردش کرنے والے سوالوں کے کھل کر جواب دیئے۔ ارمیلا ماٹونڈکر کی سیاست میں انٹری کے حوالے سے خبریں گردش کررہی ہیں کہ بالی وڈ کیریئر ختم ہونے کی وجہ سے انہوں نے سیاست میں شمولیت اختیار کی، اس حوالے سے ارمیلا نے کہا یہ بات بالکل غلط ہے، سیاست نے مجھے ایسا کچھ نہیں دیا جو پہلے میرے پاس نہیں تھا۔ یہ ٹھیک ہے کہ سیاست ہرکسی کے بس کی بات نہیں ہوتی، لیکن بالی وڈ میں بہت سے فنکار ہیں جنہوں نے سیاست میں بھی اچھا کام کیا ، جس کی مثال اداکار سنیل دت ہیں، لیکن میں اپنی بات کروں گی میرا سیاست میں آنے کا مقصد اپنی بالی وڈ کی امیج کو کیش کرانا نہیں تھا،  میں جیتوں یا ہاروں لوگوں کی اسی طرح خدمت کروں گی جس کا میں نے وعدہ کیا ہے۔ سیاست میں شمولیت اختیار کرنے کے بعد ہی ارمیلا ماٹونڈکر کے خلاف ہندوانتہا پسند جماعتوں اور بھارتیہ جنتا پارٹی کی جانب سے پروپیگنڈہ کیا گیا کہ ارمیلا اسلام قبول کرچکی ہیں۔ ارمیلا اپنی مذہب تبدیلی کے حوالے سے کئی بار وضاحت بھی دے چکی ہیں اور اس بار بھی انہوں نے اس حوالے سے واضح الفاظ میں کہا جس طرح کی سیاست کی جارہی ہے میں اس کے خلاف ہوں، میں جو ہوں جیسی ہوں مجھے خود پر فخر ہے، میں نے کبھی کوئی ایسا کام نہیں کیا جس پر مجھے شرمندگی ہو۔ انہوں  نے کہا میں جس انڈسٹری کا حصہ تھی وہاں دوسروں کے پیٹ پیچھے باتیں کرنا، منفی باتیں پھیلانا عام ہے لیکن میں کبھی اس چیز کا حصہ نہیں بنی، لہٰذا میرے متعلق مذہب کے حوالے سے گردش کرنے والی خبروں نے مجھے بہت زیادہ متاثر کیا۔ میں ہندو ہوں اور اس ہندوازم پر یقین کرتی ہوں جو وسیع ہے، اس ہندوازم پر نہیں جو آج کل بیچاجارہا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اگر میں اسلام قبول کرتی تو فخر کے ساتھ بتاتی، تاہم یہ میرا ذاتی معاملہ ہے اور کسی کو بھی اس چیز سے کوئی مسئلہ نہیں ہونا چاہئے کہ میرا مذہب کیا ہے۔


مزید خبریں

عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟