16 نومبر 2018
تازہ ترین
80سال قبل دریافت ہونیوالا تاریخی قبرستان

تقریباً80سال قبل  جنوبی مصر کے سقارہ علاقے میں جس قبرستان کا سراغ لگایا گیا تھا اسے اب لوگوں کیلئے کھول دیا گیا ۔  مورخوں نے کہا ہے کہ اس قبرستان میں  مصری حکمراں خاندان کی چھٹی پشت کے لوگ دفن ہیں اور قبروں میں سب سے نمایاں قبر اس وقت کے وزیر میہو کی ہے،  جو حکمراں خاندان کی چھٹی پشت میں وزارتی فرائض انجام دے رہا تھا۔ ماہرین آثار قدیمہ کے مطابق یہ قبرستان میہو کے نام سے منسوب ہے اور یہاں کی قبریں علاقے کی سب سے خوبصورت قبروں میں شمار ہوتی ہیں۔ اس کے اندر سے کچھ دیواری تصاویر بھی ملی ہیں، جن میں سے بعض تصاویر میں صاحب قبر کو جنگل میں شکار کرتے ہوئے دکھایا گیا ۔ اک تصویر میں وہ مچھلیاں پکڑتے ہوئے بھی نظر آرہے ہیں۔ اس تاریخی قبرستان کا سراغ مصر کے غزہ علاقے میں 1940 میں لگایا گیا تھا۔  اسکے بعد مصری وزارت نوادرات اور آثار قدیمہ نے  میہو کی قبر  کی مرمت کرائی اور پھر  دیواروں پر بنی ہوئی تصاویر کو نیا رنگ روپ دیا۔ بعض دیواری تصاویر میں مقامی لوگوں کو  ناچتے گاتے اور کھانا پکاتے ہوئے بھی دیکھا جاسکتا ہے۔ میہو کا شمار بھی ان اعلیٰ مرتبت وزیروں میں ہوتا تھا جو عہد فرائن میں خدمات انجام دیتے رہے تھے اور شاہی دربار کی سب سے اہم شخصیت میں شمار ہوتے تھے۔ تاریخی حوالے سے یہ کہا جاسکتا ہے کہ اہرام  کے قریب  آباد لوگوں میں  میہو کا خاندان بھی تھا۔ جہاں تک میہو کا ا پنا تعلق ہے، وہ 2300ق م میں  علاقے میں رہتا تھا۔ جہاں تک علم  مصریات کا تعلق ہے، اب تک یہ ساری تفصیلات حتمی طور پر قبول نہیں کی گئیں۔ کچھ لوگوں نے  اس بنا پر تمام شواہد کو رد کر دیا ہے کہ میہو کی اپنی خاندانی تاریخ واضح نہیں۔ اس نے 2شادیاں کی تھیں۔ ایک بیوی کا نام  نبط اور دوسرا کا نبرکوس تھا جس سے میہو کی متعدد اولادیں ہوئیں۔


عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟