18 اگست 2019
تازہ ترین
 11ویں اور12ویں صدی عیسوی کے تانبے کے سکے برآمد

 11ویں اور12ویں صدی عیسوی کے تانبے کے سکے برآمد

مقبوضہ کشمیر کے ضلع بڈگام میں 11ویں اور12ویں صدی عیسوی کے تانبے کے سکے بڑی تعداد میں دریافت ہوئے ہیں۔کٹھ پتلی انتظامیہ کے محکمہ آرکائیوز ، آرکیالوجی اینڈ میوزیم کے ڈائریکٹر کی سربراہی میںماہرین کی ایک ٹیم نے ضلع بڈگام کے علاقے خانصاحب میں واقع گائوںنونر میںکھدائی کے دوران تانبے کے آٹھ سوسکے ملے ہیں۔ماہرین آثار قدیمہ ان سکوں کی تحقیقات کررہے ہیں۔ انہوںنے اپنی ابتدائی رپور ٹ میں کہا ہے کہ یہ سکے 11ویں اور 12ویں صدی عیسوی کے ہےں جب کشمیر پر یساکارہ اور لوہارو خاندان حکمران تھے۔ محکمہ کے ترجمان کے مطابق مذکور ہ سکے گرد اور زنگ آلود ہیں اور ان کے کیمیکل ٹریٹمنٹ کےلئے ایس پی ایس میوزیم لال منڈی کی کنزرویشن لیبارٹری بھیجا گیا ہے۔سکوں کی صفائی کے بعد تحقیق کے کام کو آثار قدیمہ کے شائقین اور ماہرین کے ساتھ تبادلہ کیاجائیگا۔یہ بات قابل ذکر ہے کہ اس سے قبل ضلع بڈگام کے علاقے چرار شریف سے سلطانی دور کے سکے برآمد ہوئے گئے تھے جبکہ ضلع اسلام آباد کے گائوںوتنار دسے 2000 سال قدیم سکے برآمد ہوئے تھے۔دریافت ہونےوالے تمام سکوں کو ایس پی ایس میوزیم لال منڈی میں محفوظ کیاگیا ہے۔ میوزیم میں زمانہ قدیم کے 70,000سے زائد تانبے ، چاندی اور سونے کے سکے موجود ہیں۔


مزید خبریں

عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟