آصف زرداری کی گرفتاری ، قومی اسمبلی میں پیپلزپارٹی کا شدید احتجاج

آصف زرداری کی گرفتاری ، قومی اسمبلی میں پیپلزپارٹی کا شدید احتجاج

قومی اسمبلی میں سابق صدر اور شریک چیئرمین پی پی آصف زرداری کی گرفتاری کے خلاف پاکستان پیپلزپارٹی کی جانب سے شدید احتجاج کیا گیا۔ قومی اسمبلی کا اجلاس سپیکر اسد قیصر کی زیر صدارت جاری ہے جس میں پاکستان پیپلزپارٹی کی جانب سے سابق صدر اور شریک چیئرمین آصف زرداری کی گرفتاری کے خلاف شدید احتجاج کیا گیا۔ اس موقع پر رہنما پی پی شازیہ مری نے کہا کہ ہمارے ساتھ امتیازی سلوک ہو رہا ہے اور پیپلزپارٹی کو توڑا جا رہا ہے، سپیکر کسٹوڈین کی حیثیت سے کام کریں اور آصف زرداری کے پروڈکشن آرڈر جاری کریں۔ رہنما پی پی شازیہ مری نے کہا کہ بطور اسپیکر ارکان کا تحفظ آپ کا فرض ہے، حکومت کے خلاف بات کرنے والے پر کارروائی کی جاتی ہے، کہیں بات نہیں کرنے دی جا رہی، یہ کیسی جمہوریت ہے۔ اسی دوران اسپیکر قومی اسمبلی نے شازیہ مری کا مائیک بند کروا دیا، شازیہ مری کو بات کرنے کی اجازت نہ دینے پر اپوزیشن ارکان نشستوں پر کھڑے ہوگئےاور احتجاج کیا۔ قومی اسمبلی اجلاس میں اظہار خیال کے دوران قائد حزب اختلاف شہباز شریف کا کہنا تھا کہ آصف زرداری کو گرفتار کرنے کے آرڈر دیے گئے ہیں تاہم وہ ہر موقع پر نیب میں پیش ہوتے رہے، کاش نیب ان کی حوصلہ افزائی کرتا، نیب کے اقدام کا کوئی جواز نہیں بنتا لہذا آصف زرداری کے پروڈکشن آرڈر جاری کیے جائیں، ماضی میں بھی پارلیمنٹیرینز کے پروڈکشن آرڈر جاری ہوتے رہے ہیں۔ دوسری جانب قومی اسمبلی اجلاس میں وزیر داخلہ اعجاز شاہ نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ آصف زرداری کے بارے میں فیصلہ عدالت نے دیا، آصف زرداری کی گرفتاری میں حکومت کا کوئی کردار نہیں، اپوزیشن احتجاج کررہی ہے، حکومت کا اس سے کوئی لینا دینا نہیں جب کہ نیب ہم نے نہیں بنائی۔


مزید خبریں

عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟