17 اپریل 2021
تازہ ترین
لاہور ہائیکورٹ نے پنجاب یونیورسٹی کی درخواست پر 11 سال بعد فیصلہ سنا دیا

لاہور ہائیکورٹ نے پنجاب یونیورسٹی کی درخواست پر 11 سال بعد فیصلہ سنا دیا

 پنجاب یونیورسٹی کی سرکاری اراضی پر بھیکے وال کے رہائشیوں کے قبضے کا معاملہ،  لاہور ہائیکورٹ نے پنجاب یونیورسٹی کی درخواست پر گیارہ سال بعد فیصلہ سنا دیا،  عدالت نے پنجاب یونیورسٹی کی قبضہ واگزار نہ کرانے پر ڈی سی کے خلاف دی گئی درخواست خارج کر دی۔ لاہور ہائیکورٹ کی جج جسٹس عائشہ ملک نے پنجاب یونیورسٹی کی گیارہ سال پرانی درخواست پر فیصلہ سنادیا، جسٹس عائشہ ملک نے قرار دیا کہ پنجاب یونیورسٹی کی اراضی کی درخواست سول نوعیت کا ہے، پنجاب یونیورسٹی کی جانب سے دی گئی درخواست آئینی نہیں، متعلقہ فورم سے رجوع کیا جائے، پنجاب یونیورسٹی نے بھیکے وال کے رہائشیوں کے قبضے واگزار کرانے کے لیے 2009 میں ہائیکورٹ سے رجوع کیا تھا، پنجاب یونیورسٹی نے اپنی درخواست میں استدعا کی تھی کہ قبضہ واگزار کرانے کیلئے ڈی سی کو حکم دیا جائے، 2012 میں ڈی سی کے خلاف توہین عدالت کی درخواست دائر کی گئی، جس میں استدعا کی گئی تھی کہ قبضہ واگزار نہ کرانے پر ڈی سی کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی کی جائے۔


مزید خبریں

عوامی سروے

سوال: کیا آپ کووڈ 19 کے حوالے سے حکومتی اقدامات سے مطمئن ہیں؟