25 جون 2019
اوگرا کی گیس کی قیمت میں 45 فیصد اضافے کی سفارش

اوگرا کی گیس کی قیمت میں 45 فیصد اضافے کی سفارش

اوگرا نے آئندہ مالی سال کے لیے گیس کی قیمت میں 45 فیصد اضافے کی سفارش کردی ہے۔ترجمان اوگرا کے مطابق آئندہ مالی سال کے لیے گیس کی قیمتوں میں اضافے کا تعین کر لیا گیا ہے،  سوئی سدرن کمپنی اور سوئی ناردرن کمپنی کی درخواستوں پر پشاور، لاہور، کوئٹہ  اور کراچی میں عوامی سماعت ہوئی، جس میں سوئی سدرن کمپنی نےگیس کی قیمت میں 30 فیصداضافے کی درخواست کی تھی، اور سوئی ناردرن کمپنی کی طرف سے گیس کی قیمت میں 144 فیصد اضافہ مانگا گیا تھا۔ ترجمان کے مطابق سوئی ناردرن اور سوئی سدرن کی درخواستوں پر سماعت مکمل کر لی گئی ہے اور گیس کی قیمتوں میں45 فیصد تک اضافے کی منظوری دی گئی ہے، سوئی ناردرن سسٹم پرگیس کی اوسط قیمت میں 47 فیصد اضافے اور سوئی سدرن سسٹم پرگیس کی اوسط قیمت میں 28 فیصداضافے کی سفارش کی گئی ہے۔ پنجاب اور کے پی کے صارفین کے لیے گیس کی قیمتوں میں 236 روپے فی ایم ایم بی ٹی یو اضافہ تجویز کیا گیا ہے جب کہ بلوچستان اور سندھ کے سٖٓرین کے 159 روپے فی ایم ایام بی ٹی یو اضافے کی منظوری دی گئی ہے۔ ترجمان کا کہنا ہے کہ گیس کی قیمتوں میں اضافہ مالی سال 20-2019  کے لیے کیا گیا ہے اور یکم جولائی سے گیس کی قیمتوں میں اضافے کی سفارش کر دی گئی ہے تاہم گیس کی قیمتوں میں اضافے کا اطلاق حکومت کی جانب سے نوٹی فکیشن کے بعد ہو گا۔


مزید خبریں

عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟