23 اکتوبر 2020
تازہ ترین
سیکرٹری انفارمیشن کی اے پی این ایس کو پریس اینڈ پبلی کیشن ایکٹ پر بریفنگ

سیکرٹری انفارمیشن کی اے پی این ایس کو پریس اینڈ پبلی کیشن ایکٹ پر بریفنگ

سیکرٹری انفارمیشن پنجاب راجہ جہانگیر انور نے اے پی این ایس کے وفد سے ملاقات میں مجوزہ پنجاب پریس اینڈ پبلی کیشن ایکٹ 2020 پر بریفنگ دی۔ ڈائریکٹر جنرل تعلقات عامہ پنجاب ڈاکٹر محمد اسلم ڈوگر، سیکرٹری جنرل اے پی این ایس سرمد علی، کنوینر/ صدر پنجاب خوشنود علی خان، جمیل اطہر قاضی، سعدیہ شریف، سید عمران رضا، عثمان شامی، عمران اطہر، طاہر مرزا، ممتاز علی، ہمایوں گلزار، سید محمد منیر اور میاں اکبر نے بھی اجلاس میں شرکت کی۔ سیکرٹری اطلاعات نے اے پی این ایس کے سنیئر عہدیداروں سے خطاب میں کہا کہ وزیراعلیٰ سردار عثمان بزدار نے نئے ایکٹ پر پرنٹ میڈیا کو اعتماد میں لینے کی ہدایت کی ہے۔ اسی ضمن میں اے پی این ایس کے عہدیداروں کا اجلاس بلایا گیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ اٹھارویں آئینی ترمیم کے بعد پنجاب میں پرنٹ میڈیا اور پرنٹنگ پریس کو ریگولیٹ کرنے کا کوئی قانون موجود نہیں تھا۔ محکمہ اطلاعات نے سٹیک ہولڈرز سے مشاورت اور تمام جزئیات کا جائزہ لینے کے بعد پنجاب پریس اینڈ پبلی کیشن ایکٹ تیار کیا جو منظوری کے لئے جلد قانون ساز اسمبلی میں پیش کیا جائے گا۔ راجہ جہانگیر انور نے کہا کہ ایکٹ میں پرنٹنگ پریسوں، اخبارات اور ایڈورٹائزمنٹ کے امور کا احاطہ کیا گیا ہے۔ پنجاب حکومت اس قانون کے نفاذ سے اخبار یا پریس کے ڈیکلریشن و دیگر معاملات کیلئے زیادہ محکموں کی مداخلت ختم کر کے رجسٹرار آفس کے ذریعے پرنٹ میڈیا کو ون ونڈو آپریشن کی سہولت مہیا کر رہی ہے۔ نئے قانون کے تحت رجسٹرار یا محکمہ اطلاعات کے فیصلوں کیخلاف پنجاب پریس ٹربیونل سے رجوع کیا جاسکے گا۔ انہوں نے وفد کی طرف سے تجاویز کا خیرمقدم کرتے ہوئے کہا کہ پرنٹ میڈیا کی اہمیت آج بھی مسلمہ ہے اور خود وزیراعلیٰ عثمان بزدار بھی پرنٹ میڈیا کی باوقار صحافت کے معترف ہیں۔ سیکرٹری اطلاعات نے اخبارات کی ریڈرشپ بڑھانے کی اے پی این ایس کی مہم کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ اخبارات نوجوانوں بالخصوص طالبعلموں کو متوجہ کرنے کے لئے اقدامات کریں۔ انہوں نے تجویز دی کہ صوبہ بھر کے کالجوں اور یونیورسٹیوں کے طلبا اور طالبات کے لئے خصوصی ایڈیشن شائع ہونے چاہئیں۔ اخبارات ماس کمیونیکیشن کے طلبا کی انٹرن شپ کا موثر نظام وضح کریں۔ تین ماہ کے تربیتی عمل کے دوران انہیں اعزازیہ بھی دیا جانا چاہیئے۔ ایک سوال پر سیکرٹری انفارمیشن نے کہا کہ اخبارات کے واجبات کی جلد ادائیگی پر تیزی سے کام جاری ہے۔ خود وزیراعلیٰ کو اس معاملے پر اپ ڈیٹ رکھا جا رہا ہے۔ اے پی این ایس کے سیکرٹری جنرل سرمد علی، صدر پنجاب خوشنود علی خان اور دیگر عہدیداروں نے ڈمی اخبارات کو اشتہارات کا اجرا روکنے کے اقدامات کو لائق تحسین قرار دیتے ہوئے اس امید کا اظہار کیا کہ پنجاب پریس اینڈ پبلی کیشن ایکٹ 2020 کی منظوری پرنٹ میڈیا کی تقویت کا باعث بنے گی۔ نئے ایکٹ کے اجرا سے اخباری اور پرنٹنگ پریس کے مسائل کا بھی ازالہ ہوگا


مزید خبریں

عوامی سروے

سوال: کیا آپ کووڈ 19 کے حوالے سے حکومتی اقدامات سے مطمئن ہیں؟