23 اکتوبر 2020
تازہ ترین
بھارت میں اجتماعی زیادتی کا شکار لڑکی دم توڑ گئی

بھارت میں اجتماعی زیادتی کا شکار لڑکی دم توڑ گئی

 بھارت کی ریاست اتر پرادیش میں اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنانے والی لڑکی کئی دنوں تک زیر علاج رہنے کے بعد نئی دہلی کے اسپتال میں دم توڑ گئی ہے۔تفصیلات کے مطابق بھارت میں 14 ستمبر کی رات شرمناک واقعہ پیش آیا تھا جب اونچی ذات کے ہندوؤں کے ہاتھوں اجتماعی زیادتی کا شکار لڑکی کو زیادتی کا نشانہ بنایا گیا۔   خاتون کو مردوں کے ایک گروپ نے ریپ کا نشانہ بنایا تھا جس کے بعد انہیں اسپتال منتقل کیا گیا تھا. بھارت کے دارالحکومت نئی دہلی میں اسپتال کے باہر سینکڑوں شہری جمع ہوئے اور واقعے کی مذمت کی اور احتجاج کیا تھا۔شہریوں بڑی تعداد نے اسپتال کے باہر احتجاج کیا۔حکام کا کہنا تھا کہ 19 سالہ متاثرہ دلیت خاتون کا دہلی سے 62 میل دور ضلع ہتھراس میں 14 ستمبر کو ریپ کیا گیا۔       پولیس نے واقعے کے شبے میں 4 افراد کو گرفتار کیا تھا۔ متاثرہ خاتون کو اترپرادیش سے نئی دہلی کے صفدر یار جنگ اسپتال منتقل کیا گیا تھا جہاں علاج کے دوران وہ چل بسی۔   اسپتال کے باہر شہریوں کی بڑی تعداد جمع ہوئی اور احتجاج شروع کیا، اس دوران پولیس کے ساتھ جھڑپیں بھی ہوئیں اور روڑ بلاک کردیا گیا۔سوشل میڈیا پر لڑکی کے مجرموں کو سخت سزا دینے کا مطالبہ کیا جا رہا ہے   خواتین کے لیے دنیا بھر میں سب سے زیادہ خطرناک قرار دیے جانے والے ملک بھارت میں ریپ کا یہ نیا کیس ہے.اس واقعے میں لڑکی پر ظلم کے پہاڑ توڑے گئے تھے۔   لڑکی کو اجتماعی زیادتی نشانہ بنانے کے بعد شدید تشدد کا نشانہ بنایا گیا تھا۔لڑکی کی زبان کاٹی ڈالی تھی، جب کہ اس کی ریڑھ کی ہڈی بھی توڑ دی تھی،لڑکی کے جسم پر تشدد کے کئی نشانات تھے۔اس واقعے پر بھارت سمیت دنیا بھر میں شدید غم و غصہ پایا جا رہا ہے ،اس واقے کے بعد ایک بار پھر بھارت کا مکروع چہرہ دنیا کے سامنے بے نقاب ہو گیا۔اس واقعے سے پتہ چلتا ہے کہ بھارت میں نچلی ذات کے لوگوں کے ساتھ کیا سلوک کیا جاتا ہے۔دلیت شہریوں کو شکایت ہے کہ انہیں برابر کا شہری تصور نہیں کیا جاتا اور قانونی تحفظ حاصل نہیں ہے۔


مزید خبریں

عوامی سروے

سوال: کیا آپ کووڈ 19 کے حوالے سے حکومتی اقدامات سے مطمئن ہیں؟