26 اکتوبر 2020
تازہ ترین
حکومت نے 94 ادویات کی قیمتوں میں اضافے کی منظوری دیدی

حکومت نے 94 ادویات کی قیمتوں میں اضافے کی منظوری دیدی

وفاقی حکومت کی جانب سے ادویات کی قیمتوں میں 9 تا 262 فیصد تک اضافہ کی منظوری دی گئی ہے۔ ان ادویات میں بخار، سر درد، امراض قلب، ملیریا، شوگر، گلے کی خراش اور فلو کی ادویات شامل ہیں۔ اس کے علاوہ اینٹی بائیوٹکس، پیٹ درد، آنکھوں، کان، دانت، منہ اور بلڈ انفیکشن کی ادویات مہنگی کر دی گئی ہیں۔ جن ادویات کی قیمتیں بڑھائی گئی ہیں ان میں جلد کے امراض، زچگی کے بعد استعمال ہونیوالی ادویات سمیت مختلف امراض کی ادویات بھی شامل ہیں۔ ان میں سے 68 ادویات مقامی جبکہ 26 امپورٹد ہیں۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ مارکیٹ میں ادویات کی دستیابی کم ہونے کے باعث وفاقی حکومت کو مجبوراً اضافہ کرنا پڑا۔ اس کے علاوہ ڈالر کی قدر میں اضافہ اور خام مال مہنگا ہونا بھی وجہ بنی۔ فارماسوٹیکل کمپیناں جون 2021ء تک قیمتوں میں مزید اضافہ کرنے کی مجاز نہیں ہونگی۔  دوسری جانب وفاقی حکومت کی ادویات میں قیمتوں میں اضافے کی منظوری پر قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر شہبازشریف نے حکومت پر کڑی تنقید کی۔ ‏شہباز شریف کا کہنا تھا کہ ”ادویات کی قیمتوں میں مزید262 فیصد تک اضافہ“کر دیا گیا۔ ‏یقیناً یہ نالائقی، بد نیتی اور بد عنوانی کی ایک بڑی بھاری قیمت ہے۔ بد قسمتی سے عوام یہ قیمت روزانہ کی بنیاد پر چکا رہے ہیں۔


مزید خبریں

عوامی سروے

سوال: کیا آپ کووڈ 19 کے حوالے سے حکومتی اقدامات سے مطمئن ہیں؟