29 ستمبر 2020
تازہ ترین
 بھارت اور چین کے درمیان لداخ میں ایک بار پھرکشیدگی بڑھ گئی

 بھارت اور چین کے درمیان لداخ میں ایک بار پھرکشیدگی بڑھ گئی

 بھارت اور چین کے درمیان لداخ میں ایک بار پھرکشیدگی بڑھ گئی، بھارت نے چین پر لداخ میں واقع پانگونگ تسوجھیل کے علاقے کی موجودہ صورتحال میں تبدیلی کیلئے فوجی جارحیت کرنے کا الزام عائد کردیا۔ انڈین میڈیا نے بھارتی وزارت دفاع کے حوالے سے بتایا ہے کہ 29 اور30 اگست کی درمیانی رات چینی سپاہیوں کی طرف سے جارحیت دکھاتے ہوئے مشرقی لداخ کے حوالے سے حال ہی میں ڈپلومیٹک رابطوں کے نیتجے میں ہونے والے اتفاق کی خلاف ورزی کی گئی ہے جس میں علاقے کی موجودہ صورتحال میں تبدیلی کی کوشش کی گئی جس پر بھارتی فوجیوں نے فوری طور پر حکمت عملی ترتیب دی اور اپنپوزیشن کو مضبوط بناتے ہوئے چینی عزائم کو ناکام بنادیا۔بھارتی میڈیا کے مطابق چین کے فوجیوں کی کثیر تعداد کی طرف سے کیے گئے اقدام کو بھارتی فوجیوں نے ناصرف فوری طور پر ناکام کیا بلکہ ان کی پیش قدمی کو بھی محدود کردیا۔ بھارت کی وزارت خارجہ کے ترجمان انوراگ شری واستوا نے کہا ہے کہ علاقے میں حالات کو معمول پر لانے کیلئے ضروری ہے کہ دونوں اطراف سے کی گئی فوجی پیش قدمی کو ختم کرتے ہوئے اہلکاروں کو فوری طور پر لائن آف ایکچوئل کنٹرول ( ایل اے سی) پر واقع معمول کی پوسٹوں میں واپس بھیجا جائے جس کا دونوں ممالک کی طرف سے متفقہ طور پر حال ہی میں اتفاق کیا گیا تھا ۔   دوسری طرف چین کا موقف ہے کہ بھارت کو بڑی تصویر دیکھنی چاہیئے اور دوطرفہ تعلقات کے فروغ کیلئے جامع اقدامات اٹھانے ہوں گے تاکہ دونوں ممالک کے تعلقات ایک بار پھر معمول کی سطح پر واپس آسکیں جس کیلئے بھارت کو دوطرفہ بارڈرکو مناسب حالت میں واپس لاتے ہوئے اس میں کی جانے والی غیرضروری تبدیلیوں کو ترک کرنا ہوگا۔


مزید خبریں

عوامی سروے

سوال: کیا آپ کووڈ 19 کے حوالے سے حکومتی اقدامات سے مطمئن ہیں؟