22 جولائی 2019
تازہ ترین
ایران کی  برطانوی ٹینکر کو روکنے کی دھمکی

ایران کی برطانوی ٹینکر کو روکنے کی دھمکی

ایران نے برطانیہ کی جانب سے ایرانی آئل ٹینکر کو تحویل میں لینے پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے اسے عالمی قوانین کے منافی عمل اور بحری قزاقی قرار دے دیا اور ساتھ ہی برطانوی آئل ٹینکر روکنے کی دھمکی دے دی۔بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق گزشتہ روز برطانیہ کے رائل میرینز نے ایرانی سپر ٹینکر گریس 1 کو جبرالٹر کی بحری سرحد پر تحویل میں لے لیا تھا، برطانیہ نے موقف اختیار کیا تھا کہ ایرانی ٹینکر کو خام تیل شام کو سپلائی کرنے کے خدشے کے پیش نظر تحویل میں لیا گیا ہے کیوںکہ شام کو تیل کی سپلائی بشار الاسد حکومت پر یورپی یونین کی جانب سے عائد پابندیوں کی خلاف ورزی ہے۔ برطانیہ کے اس اقدام پر ایران کی شوریٰ کونسل کے سیکریٹری محسن رضائی نے دھمکی دی کہ اگر برطانیہ ایران کے سپر ٹینکر کو نہیں چھوڑتا تو ہمیں بھی برطانوی آئل ٹینکر کو پکڑنے کا پورا حق حاصل ہوگا اور ایران اپنے اس حق کے استعمال میں ذرا بھی نہیں ہچکچائے گا۔ دریں اثنا محسن رضائی نے ایک ٹویٹ میں لکھا کہ کسی بھی تنازع کی ابتدا ایران نے نہیں کی لیکن ذہن نشین رہے کہ ایران کو دھونس جمانے والوں کو بغیر کسی جھجھک کے جواب دینا آتا ہے۔ اس سے قبل ایران نے آئل ٹینکر کو تحویل میں لیے جانے پر تہران میں تعینات برطانوی سفیر کو طلب کر کے شدید احتجاج کیا تھا جب کہ ایرانی وزارت خارجہ کے ترجمان نے برطانوی اقدام کو بحری قزاقی کی ایک قسم قرار دیتے ہوئے آئل ٹینکر کو رہا کرنے کا مطالبہ کیا تھا۔ دوسری جانب اسپین کے قائم مقام وزیر خارجہ کے مطابق ’گریس ون‘ جہاز کو امریکا کی درخواست پر تحویل میں لیا گیا تھا اور ایرانی حکام کا بھی یہی خیال ہے تاہم  برطانوی رائل میرینز کا کہنا ہے کہ جبرالٹر میں ایرانی جہاز کی ضبطی شام کو تیل سپلائی کرنے کے شواہد پر کی گئی۔


مزید خبریں

عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟