کمپیوٹر اور انسان کے درمیان  دلچسپ مباحثہ

انسانی تاریخ میں پہلی بار سان فرانسسکو میں سیکڑوں حاضرین کی موجودگی میں مصنوعی ذہانت کے حامل کمپیوٹر اور انسان کے درمیان دلچسپ مباحثہ ہوا ہے جس میں کمپیوٹر نے باقاعدہ دلائل سے بحث کی۔ بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق سان فرانسسکو میں معروف کمپیوٹر ٹیکنالوجی فرم آئی بی ایم نے انسان اور مصنوعی ذہانت والی مشین کے درمیان مباحثہ کرایا۔ انسان اور کمپیوٹر (جسے پروجیکٹ ڈبیٹر) کا نام دیا گیا ان کے درمیان دلائل کا تبادلہ ہوا ،جس میں کمپیوٹر نے بغیر انٹرنیٹ سے منسلک ہوئے حیران کن طور پر اخبارات اور تحقیقی مقالوں پر مشتمل دستاویزات کی مدد سےاپنا موقف شرکا تک پہنچایا اور دیئے گئے موضوع پر اپنے دلائل پیش کئے۔ مباحثے کا پہلا موضوع تھا کہ کیا خلائی تحقیقات کے لئے مزید سرکاری رقم درکار ہونی چاہئے؟ اور دوسرا موضوع تھا کہ کیا ٹیلی میڈیسن ٹیکنالوجی کے فروغ کے لئے مزید سرمایہ کاری ہونی چاہئے؟ دلائل کا آغاز کرنے کے لئے انسان اور کمپیوٹر کو چار چار منٹ دیئے گئے تھے آخر میں دو دو منٹ اپنے اپنے دلائل کو سمیٹنے کے لئے فراہم کئے گئے۔ مکالمے کے دوران انسان اپنی چرب زبانی کے باعث قدرے بہتر انداز میں گفتگو کر رہے تھے لیکن لہجے کے اتار چڑھائو سے ناواقف ہونے کے باوجود کمپیوٹر نے دلائل اور صاف گوئی کی وجہ سے حاضرین کو قائل کر ہی لیا۔ سائنس دانوں نے اس پروجیکٹ کو نہایت اہمیت کا حامل بتایا ہے جس سے سوچ، فکر اور تحقیق کے نئے دروازے کھلیں گے۔


عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟