29 ستمبر 2020
تازہ ترین
 کراچی پورٹ ٹرسٹ میں بڑے پیمانے پر جعلی بھرتیوں کا انکشاف

 کراچی پورٹ ٹرسٹ میں بڑے پیمانے پر جعلی بھرتیوں کا انکشاف

 قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے پورٹ اینڈ شپنگ کی ذیلی کمیٹی کے اجلاس میں پیپلز پارٹی کے دور حکومت کے بعد ٟ نٞ لیگ کے موجودہ دور میں بھی کراچی پورٹ ٹرسٹ میں بڑے پیمانے پر جعلی بھرتیوں کا انکشاف، 2014اور2015میں ہونے والی جعلی بھرتیوں کے حوالے سے ذیلی کمیٹی نے کے پی ٹی کے چیئر مین سے کمیٹی کے اگلے اجلاس میں رپورٹ طلب کرلی، پیپلز پارٹی کے دور حکومت 2012میں کے پی ٹی میں ایک ہزار سے زائد غیر قانونی بھرتیاں ہوئیں جن میں 57افسران اور 950نچلے گریڈ کے ملازمین شامل ہیں ، کے پی ٹی کی زمین پر 9کچی آبا د یاں قائم، غیرقانونی قابضین نے سندھ حکومت کے محکمہ ریونیو کی دستاویزات حاصل کر رکھی ہیں، کے پی ٹی کی زمین پر قبضہ کیخلاف عدالتوں میں دائر مقدمات میں قابضین اورسندھ حکومت کو فریق بنایا گیا ہے، چیئرمین کے پی ٹی وائس ایڈ مرلٟرٞ شفقت جاوید کی ذیلی کمیٹی کو بریفنگ، پیر کو پی آئی پی ایس کے کمیٹی روم میں قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے پورٹ اینڈ شپنگ کی ذیلی کمیٹی کا اجلاس کمیٹی کے کنو نیئر اعجاز جا کھر انی کی صدارت میں ہوا۔ اجلاس میں کراچی پورٹ ٹرسٹ کی اراضی پر غیر قانونی قبضے اور تجاوز ات کے ساتھ ساتھ کے پی ٹی میں ہونے والی غیر قانونی بھرتیوں کے حوالے سے کے پی ٹی حکام نے کمیٹی کو بریفنگ دی ۔ اجلاس میں چیئر مین کے پی ٹی وائس ایڈ مر ل ٟ رٞ شفقت جاوید کی طرف سے 2012میں ہونے والی غیر قانونی بھرتیوں کے حوالے سے بتایا گیا کہ بظاہر یہ سابق وزیر اعظم راجہ پرویز اشرف کی طرف سے جاری کی گئی ہدایات کے تناظر میں کی گئیں ۔ اجلاس میں ذیلی کمیٹی کے رکن محمد سلمان بلوچ نے بعض دستاویزات کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ جعلی بھرتیاں اس دور حکومت میں بھی ہوئی ہیں کیا چیئر مین بتائینگے کہ 2014اور2015میں کتنی غیر قانونی بھرتیاں ہوئی ہیں جس پر کمیٹی کے کنونیئر اعجاز جا کھر انی نے چیئر مین کے پی ٹی کو کمیٹی کے اگلے اجلاس میں مبینہ غیر قانونی بھرتیوں کے حوالے سے رپورٹ پیش کرنے کی ہدایت کی، کمیٹی کو بتایا گیا کہ کے پی ٹی کی کلفٹن بیچ پر 350ایکڑ اراضی پر سندھ حکومت نے الاٹمنٹ کردی تھی جس کے خلاف عدالت میں کیس چل رہا ہے۔ اجلاس میں کمیٹی کے کنو نیئر اعجاز جا کھر انی نے کہا کہ 30جنوری کو ذیلی کمیٹی کراچی پورٹ ٹرسٹ کا دورہ کرے گی اور ذیلی کمیٹی کا اگلا اجلاس بھی کراچی میں ہی ہوگا ۔  


مزید خبریں

عوامی سروے

سوال: کیا آپ کووڈ 19 کے حوالے سے حکومتی اقدامات سے مطمئن ہیں؟