22 ستمبر 2018
تازہ ترین
پاک افغان تجارتی حجم بڑھانے کی تجویز

افغان ٹرانزٹ ٹریڈسے منسلک بیوپاریوں نے نامزد وزیراعظم عمران خان سے پاک افغان تعلقات اورتجارتی حجم بڑھانے کے لیے تجویز دی ہے کہ وہ ٹرانزٹ ٹریڈ معاہدے میں مطلوبہ ترامیم کریں جس میں لوزکنٹینر کارگوکی بھی اجازت دی جائے۔ ٹرانزٹ ٹریڈ سے منسلک پاکستانی تاجروں کا کہنا ہے کہ امریکا کی جانب سے ایران پر یک طرفہ اقتصادی پابندیوں کے نتیجے میں وہ ٹرانزٹ کارگو جو گزشتہ 5 سال میں کراچی بن قاسم اور گوادر بندرگاہوں سے بندرعباس اور چابہار منتقل ہوچکا تھا وہ اب دوبارہ پاکستانی بندرگاہوں کا رخ کررہے ہیں لہزا تحریک انصاف کی نئی آنے والی حکومت کو چاہیے کہ وہ بدلتے ہوئے خارجی ماحول کے تناظر میں فوری اور انقلابی نوعیت کے فیصلے کرے۔ فرنٹیئر کسٹمز ایجنٹس گروپ خیبر پختونخوا کے صدر ضیا الحق سرحدی نے نامزد وزیراعظم عمران خان کی جانب سے پاکستان اور افغانستان کے درمیان تعلقات میں بہتری، باہمی تجارت کے فروغ کے لیے عملی اقدامات کرنے کے اعلان کاخیر مقدم کرتے ہوئے کہا ہے کہ پاک افغان ٹرانزٹ ٹریڈ معاہدے میں مشکلات اور دونوں جانب کی حکومتوں کی بعض غلط پالیسیوں کی وجہ سے تجارتی حجم جوکہ 2.5 ارب ڈالرتھاگھٹ کر 1ارب ڈالرپر آ گیا ہے۔


عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟