21 اگست 2019
تازہ ترین
نیب کا ایمان کرپشن فری پاکستان ہے،چیئرمین نیب

نیب کا ایمان کرپشن فری پاکستان ہے،چیئرمین نیب

 قومی احتساب بیورو کے چیئرمین جاوید اقبال نے کہا ہے کہ نیب قوم کے اربوں روپے لوٹ کر بیرون ملک جانے والے بدعنوان عناصر کو تمام وسائل استعمال کرتے ہوئے وطن واپس لا کر ان سے قوم کی لوٹی ہوئی رقم برآمد کرنے اور ان کو انصاف کے کٹہرے میں کھڑا کرنے کے لئے انتہائی سنجیدہ کاوشیں کر رہا ہے نیب ہیڈ کوارٹرز میں ایک اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے چیئرمین نیب جاوید اقبال نے کہا کہ نیب نے ملک سے بد عنوانی کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے اور اس سے آہنی ہاتھوں سے نمٹنے کیلئے انسداد بد عنوانی کی موثر حکمت عملی وضع کی ہے۔ نیب کا ایمان کرپشن فری پاکستان ہے اور ہم ملک سے بد عنوانی کے خاتمہ کو اپنی قومی ذمہ داری سمجھتے ہیں انہوں نے نیب کے تمام افسران کو ہدایت کی کہ وہ دیانتداری، ایمانداری، محنت، لگن، شفافیت، میرٹ، ٹھوس شواہد اور قانون کے مطابق اپنی قومی ذمہ داریاں سرانجام دیں جسٹس ریٹائرڈ جاوید اقبال کا کہنا تھا کہ نیب پر اعتماد کی وجہ سے ہی نیب کو گزشتہ 13 ماہ کے دوران 54344 شکایات موصول ہوئیں، جن کا قانون کے مطابق مکمل جائزہ لیا گیا اور مکمل سکروٹنی کے بعد 2125 شکایات کی جانچ پڑتال، 1059 انکوائریاں اور 302 انوسٹی گیشنز کی منظوری دی گئی جبکہ 590 بد عنوانی کے ریفرنس مختلف معزز احتساب عدالتوں میں دائر کئے گئے جو کہ اس وقت زیر سماعت ہیں انہوں نے کہا کہ نیب نے 561 افراد کو گرفتار کر کے گزشتہ 13 ماہ میں ان سے قوم کے لوٹے گئے تقریباً 3919.011 ملین روپے برآمد کر کے قومی خزانے میں جمع کروائے۔ چیئرمین نے بتایا کہ نیب کی 2018 میں سزا دلوانے کی شرح 70.8 فیصد رہی جو کہ پاکستان میں انسداد بد عنوانی کے ادارے سے بہتر اور مثالی ہے۔ مزید برآں نیب کے اس وقت معزز احتسا ب عدالتوں میں 1219 بد عنوانی کے ریفرنس زیر سماعت ہیں جن کی تقریباً مالیت 900 ارب روپے ہے۔  


مزید خبریں

عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟