16 نومبر 2018
نیا آئی فون اینڈرائیڈ ڈیوائسز سے سست

اگر آپ اس سال نیا آئی فون خریدنے کا ارادہ رکھتے ہیں تو جان لیں کہ ایپل کی یہ مشہور زمانہ ڈیوائس اس برس ممکنہ طور پر اینڈرائیڈ ڈیوائسز کے مقابلے میں سست ہوسکتی ہے۔ سمارٹ فونز کے لئے 4 جی چپس فراہم کرنے والی بڑی کمپنی کوالکوم نے کہا ہے کہ وہ آنے والے کسی بھی آئی فونز کو جدید موڈیم نہیں کر رہی۔ کمپنی نے کہا کہ ہمارا ماننا ہے ایپل کا مکمل طور پر ہماری مخالف کمپنیوں کے موڈیمز نئے آئی فونز میں استعمال کرنے کا ارادہ ہے۔ ایپل اور کوالکوم کے درمیان 2017 کے آغاز میں پیٹنٹس پر قانونی لڑائی کا آغاز ہوا تھا، اس سے قبل آئی فونز میں صرف کوالکوم چپس استعمال ہوتی تھیں مگر اب 50 فیصد ڈیوائسز انٹیل کے موڈیمز پر کام کر رہی ہیں۔ کوالکوم کی جانب سے یہ تو نہیں بتایا گیا کہ کونسی کمپنی اگلے آئی فون کے لئے موڈیم فراہم کرے گی مگر ممکنہ طور پر انٹیل ہی ہوگی۔ مختلف سپیڈ ٹیسٹس میں یہ ثابت ہوچکا ہے کہ کوالکوم چپس پر کام کرنے والے سمارٹ فونز کی نیٹ ورک سپیڈ انٹیل پراسیسر کے مقابلے میں کافی زیادہ ہوتی ہے۔ یعنی ڈائون لوڈنگ کے حوالے سے ایپل کے صارفین کو مسائل کا سامنا ہوسکتا ہے۔ کوالکوم کی جانب سے رواں سال پہلا فائیو جی سمارٹ فون موڈیم بھی متعارف کرایا جارہا ہے، جبکہ انٹیل کی جانب سے ایسا اگلے سال کسی وقت متوقع ہے۔ اس کا مطلب ہے کہ ایپل کو فائیو جی کی دوڑ میں بھی پیچھے رہنے کے خطرے کا سامنا ہوسکتا ہے۔


عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟