26 ستمبر 2018
تازہ ترین
نواز کیخلاف نیب ریفرنس دوسری عدالت منتقلی کا فیصلہ چیلنج

چیئرمین نیب جسٹس ریٹائرڈ جاوید اقبال نے نواز شریف کے خلاف زیر سماعت ریفرنسز کی دوسری عدالت منتقلی سے متعلق فیصلہ سپریم کورٹ میں چیلنج کر دیا۔ چیئرمین نیب جسٹس ریٹائرڈ جاوید اقبال نے اپنی درخواست میں نوازشریف اور احتساب عدالت کے جج کو فریق بنایا ، درخواست میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ سپریم کورٹ کے حکم پر نواز شریف کے خلاف تینوں ریفرنسز اسلام آباد کی احتساب عدالت نمبر ایک میں دائر کئے گئے تھے، ریفرنسز کی منتقلی سے متعلق ہائی کورٹ کا حکم سپریم کورٹ کی ہدایات کی واضح خلاف ورزی ہے۔ درخواست میں کہا گیا ہے کہ ہائی کورٹ کیس منتقلی کی درخواست میں میرٹ کا جائزہ نہیں لے سکتی تھی، کیس منتقلی کے لئے اٹھائے گئے نکات قانون اور انصاف کے مطابق نہیں تھے، نوازشریف کے وکیل اپنے دلائل میں جج محمد بشیر کی جانب داری یا تعصب ثابت نہیں کر سکے، فریقین نے کبھی بھی ٹرائل میں جج کی غیر جانبداری کا اعتراض نہیں کیا، اعلیٰ عدالتوں نے کبھی بھی مشترکہ حقائق کی بنیاد پر مقدمات منتقلی کا فیصلہ نہیں کیا ، کیونکہ مقدمات میں شہادت ریکارڈ کرنے وال اجج شہادتوں کو بہتر سمجھ سکتا ہے۔ واضح رہے کہ ایون فیلڈ ریفرنس پر فیصلے کے بعد نواز شریف نے اپنے خلاف دیگر دو ریفرنسز کی سماعت دوسری عدالت منتقلی کے لئے اسلام آباد ہائی کورٹ سے رجوع کیا تھا۔ فریقین کے دلائل سننے کے بعد 7 اگست کو اسلام آباد ہائی کورٹ نے ریفرنسز دوسری عدالت میں بھیجنے کا حکم دیا تھا۔


عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟