16 نومبر 2018
مکڑیاں ہوا میں کیسے اڑتی ہیں؟

 برسٹل یونیورسٹی کے ماہرین حیاتیات یا بائیو لوجسٹس نے برسوں کی تحقیق اور تجربات کے بعد یہ نتیجہ اخذ کیا ہے کہ مکڑیاں ہوائوں میں موجود برقیاتی لہروں کے طفیل نہ صرف باآسانی اڑان بھر سکتی ہیں بلکہ وہ عالمی برقیاتی سرکٹ اے پی جی کی مدد سے ہزارو ں میل تک اڑان بھر سکتی ہیں۔ واضح ہو کہ اے پی جیز کا دائرہ اثر تمام اشیا پر محیط ہوتا ہے حد یہ کہ اسکی مدد سے مکڑیاں اپنے اور پھولوں کے درمیان حائل لیکن نظر نہ آنے والی جگہوں کا بھی پتہ لگا لیتی ہیں ۔ سائنسدانوں نے کہا کہ تحقیق کے دوران انہوں نے یہ بھی دیکھا کہ مکڑیاں برقیاتی منطقوں میں با آسانی اوپر سے نیچے اور نیچے سے اوپر تک آتی جاتی ہیں یعنی اگر ہوا نہ بھی ہو تو یہ مکڑیاں اپنے لئے ضروری اور مطلوبہ ہوا خود پیدا کرکے اس سے اپنے مطلب کا کام لے سکتی ہیں ، جبکہ اس تحقیق کے دوران یہ بھی معلوم ہوا کہ مکڑیوں کے جسم پر جو روئیں جیسی چیزیں موجود ہوتی ہیں۔ برقیاتی منطقوں میں فعال اور کارگر بن جاتی ہیں۔ یہ تحقیقی رپورٹ ڈاکٹر ایریکا مورلے کی نگرانی میں کام کرنے والے سائنسدانوں نے مرتب کی ہے۔


عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟