25 ستمبر 2018
تازہ ترین
مچھلی کے تیل سے بنے کیپسول کولیسٹرول میں کمی کا باعث

برطانیہ میں ہونے والی ایک طبی تحقیق میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ اگر آپ مچھلی کے تیل کے کیپسول اس ارادے سے کھاتے ہیں کہ اس سے دل کی صحت بہتر ہوگی تو آپ غلط ہیں۔ اس سے بہتر ہے کہ یہ پیسے سبزیوں پر خرچ کریں۔ برطانیہ سے تعلق رکھنے والی ایسٹ اینگلیا یونیورسٹی کی تحقیق میں بتایا گیا کہ مچھلی میں موجود دل کیلئے فائدہ مند فیٹی ایسڈز مچھلی کے تیل کے کیپسول کے سپلیمنٹ کی صورت میں کوئی فائدہ نہیں پہنچاتے۔ دنیا بھر میں لاکھوں بلکہ کروڑوں افراد مچھلی کے تیل کے کیپسول اس توقع کے ساتھ کھاتے ہیں کہ اس سے امراض قلب کو تحفظ مل سکے گا۔ محققین نے اس حوالے سے شواہد کا جائزہ لیا تاکہ مولوم کیا جاسکے کہ یہ امراض قلب، ہارٹ اٹیک یا فالج سے بچائو میں کس حد تک مددگار ہے۔ نتائج سے معلوم ہوا کہ مچھلی کے تیل کے کیپسول ہارٹ اٹیک، فالج یا دیگر امراض قلب کے خطرے میں کوئی خاص کمی نہیں لاتے۔ درحقیقت انہوں نے دریافت کیا کہ اس سپلیمنٹ کا استعمال صحت کے لئے فائدہ مند کولیسٹرول کی سطح میں کمی لانے کا باعث بن سکتا ہے۔ جس سے شریانوں کو نقصان پہنچنے کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔ محققین نے کہا ہے کہ اومیگا تھری فیٹی ایسڈ کے سپلیمنٹ دل کی صحت کے لئے فائدہ مند نہیں ہیں، ان کے استعمال سے فالج کا خطرہ کم نہیں ہوتا۔ اس سے قبل گزشتہ سال نیویارک یونیورسٹی کی ایک تحقیق میں بتایا گیا تھا، کہ اومیگا تھری فیٹی ایسڈز کے فوائد کا حصول تیل کے کیپسول سے نہیں بلکہ مچھلی کھانے سے حاصل ہوتے ہیں۔ اسی طرح امریکن میڈیکل ایسوسی ایشن کی ایک اور تحقیق میں یہ بات سامنے آئی تھی کہ مچھلی کے تیل کے کیپسول کا استعمال کسی قسم کے طبی فوائد کا حامل نہیں۔


عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟