23 ستمبر 2018
تازہ ترین
 لائبریری میں موجود  زہر آلود کتابیں

ڈنمارک کی ایک یونیورسٹی کی لائبریری میں ایسی کتاب پائی گئی جو زہر آلودہ ہے۔ ماہرین نے دنیا بھر میں عجائب گھروں کو خبردار کیا ہے کہ بعض پینٹنگز بھی اسی طرح زہر آلود ہوسکتی ہیں۔ یونیورسٹی لائبریری میں 3نادر کتابوں پر زہر چھڑکا ہوا تھا۔ واضح رہے کہ 19ویں صدی میں آئل پینٹنگز کےلئے یہ زہر خاص طور پر استعمال ہوتا تھا۔ جس کا نتیجہ یہ ہوا کہ دنیا کے بے شمار عجائب گھروں میں پرانی پیٹنگز اسی قسم کے زہر سے آلودہ ہیں۔ یونیورسٹی لائبریری میں جو کتاب پائی گئی وہ ایک بدھسٹ نے لکھی تھی۔ جس میں اس نے 14ویں صد ی میں اٹلی کی شہنشاہیت کے بارے میں تحریر کیا ۔ ظاہر ہے کہ اس وقت یہ کتاب پڑھنے والے تمام قارئین اب مر چکے ہیں اور وہ ورق الٹنے کیلئے اپنی انگلیاں پہلے زبان سے لگاتے ہونگے اور اسے تر کرنے کے بعد صفحہ الٹتے ہیں اور شاید انہیں زہر نے متاثر کیا ہوگا۔ دیگر دو کتابیں 16ویں اور 17ویں صدی کی ہیں۔ کتابوں پر اس طرح کے زہر کا سراغ اس وقت لگا جب انکا ایکسرے لیا گیا۔ یہ مائیکروایکس آر ایف ٹیکنالوجی سے لیا جاتا ہے۔


عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟