17 نومبر 2018
تازہ ترین
فلپائن کا امریکا سے تعلقات ختم کرکے چین سے استوار کرنے کا اعلان

غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق فلپائن کے صدر روڈریگو ڈیوٹرٹی 4 روزہ دورہ پر چین میں موجود ہیں جہاں انہوں نے چینی حکام سے ملاقات میں اعلان کیا کہ آئندہ فلپائن کا امریکا سے کوئی تعلق نہیں اور اب بہت ہوگیا امریکا کو ہماری زندگی کو کنٹرول کرنے کا کوئی اختیار حاصل نہیں۔ انہوں نے امریکا کو شدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ امریکا کس طرح اپنے آپ کو دنیا کا طاقتور ترین صنعتی ملک قرار دے سکتا ہے کیوں کہ وہ خود چین کا مقروض ہے اور اب تک اس نے واجب الادا رقم ادائیگی بھی نہیں کی۔

 

فلپائنی صدر کا اعلان ایسے وقت میں کیا گیا کہ جب انہوں نے چین کے دورے کے موقع پر چینی صدر ژی جن پنگ سے ملاقات کی اور دونوں ممالک نے اعتماد اور دوستی کے رشتے کو مزید مضبوط بنانے کے عزم کا اعادہ کیا جب کہ فلپائنی صدر نے اپنے چینی ہم منصب سے ملاقات کو تاریخی قرار دیا۔ فلپائنی صدر نے جنوبی  چین کے سمندر میں امریکا کے ساتھ ہونے والی مشترکہ گشت بھی معطل کردی اور انہوں نے فلپائن اور امریکا کی فوجی مشقوں کو بھی ختم کرنے کی دھمکی دی ہے۔

چین نے 2012 میں فلپائن کے صنعتی زون اسکاربروٹ شول کا محاصرہ کرلیا تھا جب کہ اس معاملے کو عالمی ٹریبونل میں لے جایا گیا اور اس کا فیصلہ چین کے حق میں آیا۔ چینی وزارت خارجہ کے ترجمان کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ دونوں رہنماؤں کے درمیان تمام متنازع مسائل حل کرنے کے لئے دوستانہ ماحول میں تبادلہ خیال کیا گیا۔ وزارت خارجہ نے چینی صدر کے بیان کے حوالے سے کہا کہ صدر ژی جن پنگ نے کہا کہ دونوں ممالک پڑوسی ہیں اس لئے دونوں ملکوں کے درمیان دشمنی یا محاذ آرائی نہیں ہونا چاہیئے تاہم مشکل معاملات پر بات چیت کو کچھ عرصے کے لئے التوا میں ڈال دینا چاہیئے۔


عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟