21 ستمبر 2018
تازہ ترین
فضل الرحمان کا توہین رسالت قانون میں ترمیم کی بھرپور مخالفت کا اعلان

انہوں نے سعودی عرب سے امت مسلمہ کے اتحاد کے لئے کام کرنے کا مطالبہ کیا۔ گزشتہ روز میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مولانا فضل الرحمان نے توہین رسالت قانون میں کسی بھی ترمیم کی بھرپور مخالفت کرنے کا اعلان کر دیا۔ انہوں نے فوجی عدالتوں کی مدت میں توسیع پر اے پی سی بلانے کا مطالبہ بھی کیا۔ انہوں نے کہا کہ آئین میں ایسی ترمیم نہیں ہونی چاہئے جس سے اس کی متفقہ حیثیت متاثر ہو۔ جے یو آئی ف کے سربراہ نے امریکہ کو کڑی تنقید کا نشانہ بنایا اور سعودی عرب کے مسلم امہ کی وحدت کیلئے قیادت کرنے پر زور دیا۔ مولانا فضل الرحمان کا مقبوضہ کشمیر کی صورت حال پر کہنا تھا کہ پوری قوم 5فروری کو یوم یکجہتی کشمیر منائے اور دنیا کو واضح پیغام دیا جائے کہ پاکستانی عوام کشمیریوں کے ساتھ ہیں۔ صباح نیوز کے مطابق فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ فوجی عدالتوں میں توسیع سول عدالتوں پر عدم اعتماد ہو گا اور ہم اس کے حق میں نہیں۔ آئین میں ترمیم کر کے دو سال کے لیے فوجی عدالتوں کے قیام عمل میں آیا تھا لیکن اب توسیع کی مخالفت کریں گے، فاٹا کے لیے  فیصلے میں فاٹاکے عوام کی رائے شامل ہونی چاہئے وگرنہ عوام کی رضامندی کے بغیر فیصلہ جمہوری اصولوں کے خلاف ہوگا جو کسی کے لیے قابل قبول نہیں ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ پاک چین اقتصادی راہداری منصوبہ پاکستان اور چین کے درمیان قائم دوستی کے رشتے کا عملی مظہر ہے جس کی حوصلہ افزائی کرتے رہیں گے دوست ممالک کے ساتھ اچھے تعلقات خطے میں مثبت اثرات چھوڑتے ہیں۔ مغربی ممالک کے چنگل چھڑانے والے مالیاتی نظام کی حمایت کرتے ہیں اور ایسے ہر پروجیکٹ کی حمایت کریں گے جس سے پاکستان اپنے پائوں پر کھڑا ہو سکے اور خوشحال پاکستان کا خواب شرمندہ تعبیر ہو۔  


عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟