25 مئی 2019
تازہ ترین
سیشن کورٹ سے 22 اے اوربی کا اختیار واپس لینے پر وکلا کا احتجاج

سیشن کورٹ سے 22 اے اوربی کا اختیار واپس لینے پر وکلا کا احتجاج

پنجاب بارکونسل کے بعد اسلام بارکونسل اور ڈسٹرکٹ بار بھی سیشن کورٹ سے 22 اے اور 22 بی کا اختیار واپس لینے کیخلاف سراپا احتجاج ہیں۔نجی ٹی وی کے مطابق بارایسوسی ایشن اور بارکونسل نے نئی جوڈیشل پالیسی پرتحفظات کا اظہار کرتے ہوئے سیشن کورٹ سے 22 اے اور 22 بی کا اختیار واپس لینے پر احتجاج کررہے ہیں اور اس حوالے سے پنجاب بار کونسل آج صوبے بھر میں ہڑتال کا اعلان کررکھا ہے اور وکلاء عدالتوں میں پیش نہیں ہوں گے۔ وائس چیئرمین پنجاب بار کونسل کا کہنا تھا کہ جوڈیشل پالیسی 2019 پر نظر ثانی کی جائے، سینئر وکلاء کے ساتھ مشاورت کے بعد جوڈیشل پالیسی تشکیل دی جائے، جوڈیشل پالیسی کمیٹی نے اندراج مقدمہ درخواستوں کی براہ راست عدالتوں میں دائرگی پر پابندی کی سفارش کی تھی۔ دوسری جانب سیکرٹری اسلام آباد بار کا کہنا تھا کہ اسلام آباد بار نئی جوڈیشل پالیسی کی فوری واپسی کا مطالبہ کرتی ہے، فیصلے سے پولیس کو اجارہ داری حاصل ہو گی، 22 اے اور بی کا اختیار سیشن کورٹ سے لینے سے کرپشن کا راستہ کھلے گا، 22 اے اور 22 بی کی واپسی تک وکلاء احتجاج جاری رکھیں گے کیوں کہ نئی جوڈیشل پالیسی میں بائیس اے اور بی کا اختیارواپس لینا آئین وقانون سے متصادم ہے۔ ادھر پاکستان بار کونسل نے ایف آئی آر اندراج کے حوالے سے عدلیہ کا اختیار بحال کرنے کے لئے 3 دن کی مہلت دے دی، 3 دن میں اختیار بحال نہ ہوا تو مستقبل کے لائحہ عمل کا فیصلہ کریں گے، مستقبل کے لائحہ عمل میں وکلاء کی ہڑتال اور دیگراقدامات شامل ہوسکتے ہیں، قومی عدالتی پالیسی کمیٹی کے فیصلے سے پولیس کے اختیارات میں اضافہ ہوگا، کمیٹی کے فیصلے سے متاثرین کو پولیس کے رحم و کرم پرچھوڑ دیا گیا۔ علاوہ ازیں اسلام آباد میں سیکرٹری لاء اینڈ جسٹس کمیشن عبد الرحیم اعوان نے ہنگامی پریس کانفرنس کرتے ہوئے عدلیہ کے ایف آئی آر کے اندراج کے اختیار پر پابندی نہیں لگائی، عدلیہ کاجسٹس فارپیس کے لئے 22 اے اور بی کا اختیاراپنی جگہ موجود ہے، متاثرہ شخص ایس پی شکایات داد رسی فورم سے فیصلہ لینے کے بعد عدلیہ سے رجوع کر سکتا ہے، ایس پی شکایات داد رسی فورم پرچہ درج نہ کرنے پر متعلقہ ایس ا یچ او سے باز پرس کرے گا۔ عبد الرحیم اعوان نے کہا کہ پولیس کے اندر احتساب کا نظام بنا دیا گیا ہے، ایس پی شکایات داد رسی فورم کو متاثرہ شخص کی درخواست پرہفتہ میں فیصلہ کرنا ہو گا، اگر ایس پی پرچہ درج کرنے کا حکم نہیں دیتا تو 22 اے اوربی کے لئے عدلیہ سے رجوع کیا جا سکے گا، اس طرح عدلیہ کے لیے بھی 22 اے اور بی کا فیصلہ کرنا آسان ہو جائے گا۔


مزید خبریں

عوامی سروے

سوال: کیا پی ٹی آئی انتخابات سے قبل کیے گئے وعدے پورے کر پائے گی؟